• صفحہ اول
  • /
  • گوشہ ہند
  • /
  • بینکروں پر بینکاری کے علاوہ باقی بوجھ کیوں؟ ۔۔رویش کمار/ترجمہ محمد اسعد فلاحی

بینکروں پر بینکاری کے علاوہ باقی بوجھ کیوں؟ ۔۔رویش کمار/ترجمہ محمد اسعد فلاحی

جنوبی کوریا کی پارلیمنٹ نے ایک قانون بنایا ہے جس کے بعد اب وہاں کے لوگ ایک ہفتے میں 68 گھنٹے کی جگہ 52 گھنٹے ہی کام کریں گے. آپ سوچ رہے ہوں گے کہ میں جنوبی کوریا کی بات کیوں بتا رہا ہوں. وہ اس لئے بتا رہا ہوں کہ بھارت کے سرکاری بینکوں میں کام کرنے والے 90 فیصد لوگ صبح 10 بجے سے لے کر رات کے 9 بجے تک کام کرتے ہیں. ٹارگیٹ اور ٹرانسفر کی تلوار سے ان سے اتنا کام کرایا جاتا ہے. اس میں آپ کو ہفتہ اور اتوار کو بھی 20 گھنٹے شامل کرلیں گے تو یہ جنوبی کوریا کے پہلے والے 68 گھنٹے سے بھی 2 گھنٹے زیادہ ہے، یعنی 70 گھنٹے کام کرتے ہیں آپ کے سرکاری بینکر.

انشورنس پالیسی، میچول فنڈز بیچنے کے علاوہ بینکروں سے اب آدھار نمبر بھی جوڑنے کو کہا جا رہا ہے. ایک بینکر نے آدھا کو لے کر جو حال لکھ بھیجا ہے، وہ حقیقت کی سطح پر کتنا درست ہے میں تو نہیں جان سکتا لیکن اس نے جو اپنے کام کا حساب بھیجا ہے وہ بھیانک ہے. میں اسے پڑھنا چاہتا ہوں. جس بینکر نے لکھا ہے وہ آپ کے اکاؤنٹس کو آدھار سے لنک کرنے کے کام سے جڑا ہے. گاؤں دیہات میں اس کام میں کیا دقت آرہی ہے آپ اگر اس خط کو ہمارے ساتھی کی آواز میں سنیں گے تو ہندوستانی ریاست نظام کے كرتبوں پر ہنسی آئے گی اور پھر اس کے بعد رونا آئے گا.

کئی بینکروں نے کہا ہے کہ آدھار لنک کام جب سے آیا ہے جینا اور مشکل ہو گیا ہے. بینکوں میں ملازمین کی تعداد نہیں بڑھ رہی ہے. کئی برانچ دو یا تین لوگوں کے بھروسے چل رہے ہیں. ان سب ٹارگیٹ کو پورا کرنے کے لئے ہم بغیر چھٹی دن رات کام کر رہے ہیں. مہاراشٹر سے ایک خاتون بینکر نے لکھا کہ اس کے حاملہ ہونے کے 9 ویں مہینے میں بھی فیلڈ سروے کے لئے بھیجا گیا. جب اس نے چھٹی کی بات کی تو کہا گیا کہ مارچ کے حساب سے فیملی پلاننگ کرنی چاہئے تھی. چھٹی دینے میں آنا کانی ہوئی.

پرائم ٹائم کے بینک سیریز 6 میں ہم نے کہا تھا کہ مرکزی حکومت کی خواتین ملازمین کو 180 دن کا زچگی کی چھٹی حاصل ہے اور وہ چاہیں تو دو سال کے بچہ کی دیکھ بھال کی رخصت بھی لے سکتی ہیں. ایک ساتھ یا یا الگ الگ۔ مگر سرکاری بینکوں میں خواتین کو یہ خصوصیت نہیں ہے. اب آپ ہی بتائیے کہ یہ فرق کیوں ہے. خواتین بینکروں کو یہ سہولت دینے کا فیصلہ کرنے میں کتنے سال لگنے چاہئے. کیا آپ کے ساتھ بھی ہوا ہے کہ آپ اکاؤنٹ کھولنے گئے اور ساتھ میں بغیر معلومات کے انشورنس ہو گیا. ہم نے فیس بک پر ایک پوسٹ ڈال کر لوگوں سے ان کے اس تجربے کے بارے میں پوچھا تو جواب آیا کہ جون 2015 میں پہلی بار ایک موبائل میسیج آیا، جس کے ذریعے پتہ چلا کہ وزیر اعظم سیکورٹی انشورنس کی منصوبہ بندی کے نام پر میرے آندھرا بینک اکاؤنٹ سے 12 روپے کٹنے لگے ہیں. میںنیجر نے بتایا کہ مرکزی یونٹ سے بہت پریشان کیا جا رہا ہے کہ چاہے کوئی قبول کرے یا نہ کرے، سب کے اکاؤنٹ سے 12 روپے کاٹنے کا بندوبست ہو.مینیجر میری مدد نہیں کر سکتا ہے، کیونکہ اسے اپنی ملازمت بچانا ہے.

بہت سے بینکوں کے بینکروں نے کہا کہ ان پر انشورنس بیچنے کا بہت دباؤ ہے. ہر ہفتے ایک لاگ ان ڈی ہوتا ہے، جس میں آج انشورنس کی کتنی پالیسی بیچنی ہے، اس کا ہدف ملتا ہے. اٹل پنشن یوجنا کتنی بیچنی ہے، وزیر اعظم سیکورٹی انشورنس یوجنا کتنی بیچنی ہے. بینکروں نے کہا کہ شروع میں تو گاہکوں نے ہمارے کہنے پر لے لیا مگر روز روز کے ٹارگیٹ کی وجہ سے اب اچھا کسٹمر بھی بھاگنے لگتا ہے. بہت سے بینکروں نے یہ بھی کہا کہ کوئی اکاؤنٹ کھولنے آتا ہے تو بہت فارم کے ساتھ انشورنس اور پنشن کی منصوبہ بندی کا فارم دے دیتے ہیں. وہ سائن کر دیتا ہے اور پالیسی بک جاتی ہے. جب اس سے بھی ٹارگیٹ پورا نہیں ہوتا تو اپنی جیب سے اپنے رشتہ داروں کے نام پر اٹل انشورنس یوجنا خرید لیتے ہیں. کچھ ذی ہوش گاہکوں کو پتہ چلتا ہے تو وہ شکایت کرتے ہیں، مینیجر سے جھگڑا کرتے ہیں مگر ہم ہاتھ جوڑ کر کسی طرح سمجھا لیتے ہیں. دہلی کے باشندے یوگیش آنند اپنے بیٹے کا اکاؤنٹ کھلوانے بینک آف انڈیا گئے. اکاؤنٹ تو کھلا مگر بغیر معلومات اور رضامندی کے اٹل پنشن یوجنا چسپاں کر دی گئی. یوگیش جی نے ہمارے دفتر آکر اپنا حال بتایا اب وہ اس پالیسی سے پیچھا چھڑانا چاہتے ہیں مگر مینیجر ہاتھ باندھ کر کھڑے ہو جاتے ہیں.

آپ خریدنا چاہیں تو کوئی بھی انشورنس خرید سکتے ہیں، لیکن بغیر معلومات اور رضامندی کے کوئی آپ کے نام پر انشورنس بیچ دے یہ اخلاقی طور پر غلط ہے. معاملہ چونکہ 12 روپے کا ہوتا ہے 300 روپے کا ہوتا ہے کئی بار کسٹمر خاموش ہو جاتا ہے، لیکن دس دس روپے کرکے عوام کا کروڑوں لٹ جاتا ہے. بینک کے سینئر افسر مینیجر اور کلرک کو دھمکاتے ہیں کہ اگر اتنا انشورنس نہیں بکا تو سخت کارروائی کی جائے گی. بینکروں کا کہنا ہے کہ غریب لوگ یا عام کسٹمر ہمارے دباؤ میں یا ہاتھ پاؤں جوڑنے پر خریداری تو لیتا ہے، نہیں خریدتا ہے تو بغیر اس کی معلومات کے ہم فروخت کرتے ہیں. لیکن اگلے سال انشورنس نہیں دے پاتا ہے. اس کے اعداد و شمار تو بن گیا کہ کتنے کروڑ لوگوں نے اٹل پنشن کی منصوبہ بندی کی پالیسی لی مگر یہ کبھی سامنے نہیں آ پاتا کہ کتنے لوگو نے اس پالیسی کو دوسرے یا تیسرے سال میں بند کر دی. اس سے انشورنس کمپنیوں کو ہی فائدہ ہوتا ہے. بغیر انشورنس دیے مفت میں 300 سے 600 روپے آ جاتے ہیں.

میں نے ایسے سینکڑوں میسیج دیکھے ہیں جن میں ریجنل ہیڈ برانچ منیجر کو دھمکا رہے ہیں یا ٹارگیٹ دے رہے ہیں کہ اٹل پنشن کی منصوبہ بندی کی آج 100 پالیسی بیچنی ہی ہے. یہی کشیدگی کا سبب بن رہا ہے منیجروں کو. اسی کے لئے مینیجر برانچ میں دیر رات تک بیٹھے رہتے ہیں. بغیر بتائے دھوکے سے انشورنس فروخت کا یہ طریقہ بینکوں کی انشورنس یونٹ منافع تو دے رہا ہے مگر صارفین کے بھروسے کے ساتھ دھوکا کر رہا ہے. بھارتیہ کسان یونین بھانو گٹ کے نیتا رامپال سنگھ نے اسٹیٹ بینک آف انڈیا کے ممبئی واقع ہیڈکوارٹر کو خط لکھا ہے. انہوں نے بینک سے جانچ کی مانگ کی ہے کہ کسانوں کو کسان کریڈٹ کارڈ سے جو لون ملتا ہے اس میں سے بغیر ان کی معلومات کے انشورنس کا پریمیم کاٹ لیا جا رہا ہے. کئی بار یہ رقم 5000 روپے تک کی ہوتی ہے. بینک نے آگرہ کے انتظامی دفتر کو لکھا ہے کہ معاملے کی جانچ کریں. مگر اس کے ہی اہلکار تو ٹارگیٹ طے کرتے ہیں کہ اتنی انشورنس پالیسی بیچنی ہے.

بینک کی دنیا میں اس کے لئے دو الفاظ استعمال ہوتے ہیں. کراس سیلنگ اور مس-سیلنگ. کراس سیلنگ یہ ہوا کے پیسے کے لین دین کے علاوہ بینک کچھ اور پالیسی بیچ دے. مس-سیلنگ یہ ہوا کہ آپ کو دھوکے سے بیچ دے. آپ کو مجبور کیا جائے. اگر آپ کو کسی بینک کی پالیسی لینی ہے تو بہتر پوزیشن ہے کہ آپ مختلف پالیسی کا مطالعہ کرنے کے بعد اٹھائیں. لیکن بینک آپ کے بھروسے کا فائدہ اٹھا کر مجبور کرتے ہیں یا دھوکے سے انشورنس فروخت کرتے ہیں. آپ کو کسی بھی بینکر سے بات کیجیے، پوچھئے کہ کیا یہ درست ہے، وہ کہے گا ہاں یہ صحیح ہے. ہم نے اس بارے میں آل انڈیا بینک افسران كنفڈریشن کے سیکرٹری جنرل فرانکو تھامس سے بات کی.

ہمیں کئی بینکروں سے بھی خط ملے ہیں. ہم شناخت تو نہیں بتا سکتے مگر بھاو آپ سمجھ سکتے ہیں. انشورنس پالیسی فروخت کے نام پر بینکروں کو جو حال ہوا ہے اس نے ان کا سارا تجربہ تبدیل کر دیا ہے. انہیں شاید کام کرنے سے پریشانی نہیں ہے، وہ دس گھنٹے بھی کام کر سکتے ہیں بلکہ کر ہی رہے ہیں. ان کا کہنا ہے کہ کسی گاہک کا اعتماد توڑ جھوٹ بول کر جھانسہ دے کر اٹل پنشن کی منصوبہ بندی فروخت کرنا یا کوئی انشورنس پالیسی فروخت کرنا ایمان پر بوجھ بن جاتا ہے. جب کوئی گاہک پوچھنے آتا ہے تو نظر نہیں ملا پاتے ہیں مگر ایسا کرتے ہوئے ہدف پورا نہیں کریں گے تو نوکری نہیں بچا پاتے ہیں. ٹارگیٹ نہ ہونے پر ٹرانسفر کی تلوار چلا دی جاتی ہے. کچھ بینکروں کا تجربہ ہمارے پارٹنرز کی آواز میں سنیے.

حکومت کی jansurakshagovernment.in کی ویب سائٹ سے پتہ چلتا ہے کہ اگر آپ کسی بھی سوشل سیکورٹی اسکیم لے رہے ہیں، جس میں حکومت کی حصہ داری ہے اٹل پنشن کی منصوبہ بندی کے لئے اپلاي نہیں کر سکتے ہیں. جیسے امپلائی پرووڈینٹ فنڈ، کول مائنس پرووڈینٹ فنڈ، آسام ٹی پلاٹیشن پرووڈینٹ فنڈ سے منسلک ہیں جو اٹل پینشن کی منصوبہ بندی کے لئے اہل نہیں ہے. سرکاری ملازم لے سکتے ہیں مگر انہیں حکومت کا حصہ نہیں ملے گا.

اگر بینک چاہے تو ایمانداری سے بتا سکتے ہیں کہ اٹل پنشن کی منصوبہ بندی لینے کے بعد کتنے فیصد لوگوں نے اسے بند کر دیا. آندھ بینک کے ایک بینکر نے بتایا کہ ہدف پورا کرنے کے لئے آپ کے نام سے، اپنی بیوی، بیوی کی بہن، ان کے شوہر کے نام سے اٹل پنشن کی منصوبہ بندی کرلی ہے. اورينٹل بینک آف کامرس کی ایک ای میل دیکھا جس ملازمین کو کہا گیا ہے جو کہ ہر دن دو اٹل پنشن کی منصوبہ بندی بیچنی ہی ہے. بینک کے چیئرمین کبھی اسے قبول نہیں کریں گے کیونکہ پھر حکومت سے کس طرح نظر ملائیں گے کہ غلط معلومات دی، لیکن سینکڑوں ایسے وهاٹس اپ میسیج اور ای میل کی تصاویر دیکھنے کے بعد کہہ رہا ہوں کہ اٹل پنشن کی منصوبہ بندی فروخت کے لئے دباؤ بنایا جا رہا ہے. بغیر معلومات اور رضامندی کے بیچا جا رہا ہے. بینک اور گاہک کے درمیان بھروسے کے علاوہ کچھ اور نہیں ہوتا. اس کا فائدہ اٹھا کر بغیر بتائے پالیسی فروخت کرنا غلط ہے. امریکہ میں اس جرم کے لئے ویلز فارگو بینک کے سی ای او کو استعفی دینا پڑا تھا. بھارت میں لوگ لیپا پوتی والا بیان دے کر غائب ہو جاتے ہیں. یہ سوال تو ہے کہ اٹل پنشن کی منصوبہ بندی کا اکاؤنٹ کھل تو جاتا ہے اس میں سے بند کتنا ہوتا ہے.

بینک کے نوٹس بورڈ پر حفظان صحت کا بینر لگا ہے، ویسے ہر بینک کے باہر لگا دیکھا ہوگا آپ نے مگر یہ بینر جہاں لگا ہے وہ مدھیہ پردیش کے گنا ضلع کی تحصیل سٹی کے مدھياچل دیہی بینک کا برانچ ہے. اس برانچ کے ٹوئیلیٹ کی تصاویر دیکھئے. کموڈ تک نہیں ہے. بیٹھنے کا کوئی انتظام نہیں. ٹوئیلیٹ میں دروازہ تک نہیں ہے. عورت مرد سب کے لئے یہی ہے. پیٹ خراب ہونے کی صورت میں یہاں کام کرنے والوں پر کیا گزرتی ہو گی آپ کو آپ کے تجربے سے بھی اندازہ لگا سکتے ہیں. یہ ویڈیو بھی ایک بینک کے ٹوئیلیٹ کا ہے. اچھا ہے ہماری سیریز کے بعد بینکوں نے ٹوائلٹ کی حالت کی رپورٹ منگائی ہے مگر یہ حالت ابھی تک نظر کیوں نہیں آ رہی ہے. کیا چیئرمین لوگ ہماری سیریز دیکھ رہے ہیں، گڈ. انہیں پردھان منتری یوجنا سوچھ بھارت ابھیان کو لے کر اب بہانا بنانے کا کوئی موقع نہیں ملنے والا ہے.

انبالہ میں الہ آباد بینک کی ایک شاخ ہے. ماچھوندا شاخ. یہاں تین خواتین ملازم کام کرتی ہیں مگر ایک بھی ٹوائلیٹ نہیں ہے. خواتین کو بینک سے دور نصف کلومیٹر دور جانا پڑتا ہے. ایک گاہک کی اطلاع ہے. ہم نے اپنی طرف سے ویریفائی نہیں کیا ہے. ویسے بھی ہماری یہ سیریز ایک قسم کا فیڈ بیک ہے. بینکر ہمیں خفیہ طور پر بتاتے ہیں اور ہم بینک کے چیئرمینوں حکومت اور لوگوں کو مفت میں بتا دیتے ہیں. کس طرح چیئرمین ہیں یہ وزیر اعظم کی حفظان صحت کی منصوبہ بندی کو بھی سنجیدگی سے نہیں لیتے ہیں. خواتین کو چائلڈ کیئر رخصت دینے میں اتنی تاخیر کیوں ہو رہی ہے. ہماری سیریز کے بعد سٹیٹ بینک آف انڈیا کے جے پور سرکل نے ایک پورٹل بنا دیا ہے جس میں بینک خواتین کے بیت الخلا کا حال لوڈ کریں گے. بینک اس حساب سے کارروائی کرے گا.

بشکریہ مضامین!

گوشہ ہند
گوشہ ہند
ہند کے اردو دان دوست آپ کیلیے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *