• صفحہ اول
  • /
  • خبریں
  • /
  • سوشل میڈیا سے متنازع مواد ہٹانے کیلئے ایک ماہ کی مہلت

سوشل میڈیا سے متنازع مواد ہٹانے کیلئے ایک ماہ کی مہلت

عمران احمد شاہ کی زیرِ صدارت قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے مذہبی امور کا اجلاس منعقد ہوا۔ارکان نے سوال کیا کہ نکاح نامے میں ختمِ نبوت کا حلف شامل کرنے کی تجویز پر کیا پیش رفت ہوئی؟

سیکریٹری مذہبی امور نے جواب دیا کہ معاملہ اسلامی نظریاتی کونسل کو بھیجا ہے، جن کی جانب سے تاحال جواب نہیں ملا۔چیئرمین کمیٹی نے استفسار کیا کہ متنازع مذہبی مواد ویب سے ہٹانے پر کیا پیش رفت ہوئی ہے؟

مذہبی امور کے حکام نے جواب دیا کہ اس معاملے پر ہائی کورٹ کا حکم آ چکا ہے، پی ٹی اے نے عمل درآمد نہیں کیا۔کمیٹی نے ویب سے مواد ہٹانے کے لیے وزارتِ مذہبی امور کو 30 دن کا وقت دے دیا۔

چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ سابق دورِ حکومت میں سائنسی بنیاد پر رویت کی بات کی گئی تھی۔وزارتِ مذہبی امور کے حکام نے جواب دیا کہ رویتِ ہلال مرکزی کمیٹی محرم، رمضان، شوال اور ذوالحج کے چاند دیکھتی ہے، شریعت کے مطابق چاند کی رویت ضروری ہے، دوربین کی مدد سے بھی چاند دیکھ کر رویت نہیں کی جا سکتی۔

وزیرِ مذہبی امور مفتی عبدالشکور نے کہا کہ شریعت میں آنکھ سے چاند دیکھنے کا حکم ہے، پوری دنیا میں ایک ہی وقت میں عید منانا ممکن نہیں، دنیا کے مختلف ممالک میں مطلع مختلف ہوتا ہے، چاند کی رویت پر اتفاقِ رائے کے لیے تمام مسالک کے جید علماء کا اکٹھا ہونا ضروری ہے۔

Advertisements
julia rana solicitors

مسلم لیگ ن کے اقلیتی رکن کھئیل داس کوہستانی نے سوال کیا کہ اسلامی نظریاتی کونسل اس میں کردار کیوں ادا نہیں کرتی؟وزیرِ مذہبی امور مفتی عبدالشکور نے جواب دیا کہ اسلامی نظریاتی کونسل میں سرکاری اور سفارشی علماء ہوتے ہیں، مختلف سیاسی جماعتوں کی سفارش پر علماء کونسل میں آتے ہیں۔

  • merkit.pk
  • julia rana solicitors
  • julia rana solicitors london

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply