• صفحہ اول
  • /
  • خبریں
  • /
  • عدالت نے مریم نواز کی پاسپورٹ واپسی کی درخواست منظور کرلی

عدالت نے مریم نواز کی پاسپورٹ واپسی کی درخواست منظور کرلی

لاہور ہائی کورٹ نے مسلم لیگ ن کی رہنما، سابق وزیرِ اعظم نواز شریف کی صاحبزادی مریم نواز کی پاسپورٹ واپسی کی درخواست منظور کر لی۔

لاہور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس محمد امیر بھٹی کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے مریم نواز کی پاسپورٹ کے حصول کے لیے دائر متفرق درخواست کی سماعت کی۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

مریم نواز کی پاسپورٹ واپسی کے لیے درخواست پر سماعت کے دوران لاہورہائی کورٹ کے 3 رکنی فل بینچ کے روبرو مریم نواز کے وکیل امجد پرویز اور نیب پراسیکیوٹر پیش ہوئے۔

مریم نواز کے وکیل امجد پرویز نے کہا کہ پچھلی تاریخ پر وقت پر پیش نہ ہونے پر معذرت چاہتا ہوں۔

چیف جسٹس امیر بھٹی نے کہا کہ کوئی بات نہیں، عدالت کو اس بات سے غرض نہیں، مریم نواز نے پہلے بھی پاسپورٹ کی واپسی کے لیے درخواستیں دائر کی تھیں۔

مریم نواز کے وکیل امجد پرویز نے کہا کہ موجودہ درخواست کی روشنی میں پرانی درخواستیں غیر مؤثر ہو چکیں، مجھے پہلی درخواست واپس لینے کی اجازت دے دیں۔

عدالت نے امجد پرویز کو مریم نواز کی پاسپورٹ واپسی کے لیے نئی درخواست پر دلائل دینے کی ہدایت کی۔

مریم نواز کے وکیل امجد پرویز نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ مریم نواز کو پاسپورٹ جمع کرانے پر ضمانت ملی، 4 سال ہو گئے لیکن ابھی تک چوہدری شوگر ملز کا کوئی ریفرنس نہیں آیا، اگر یہ کیس فائل کرتے اور مریم اس کا دفاع کرتیں تو صورتِ حال مختلف ہوتی، کسی کی نقل و حرکت کو روکنا بنیادی حقوق کا معاملہ بھی ہے، مریم چاہتی تھیں کہ یہ کیس فائل ہو تاکہ وہ اس کے دفاع میں آتیں، لمبی تاخیر کرنا قانون کے غلط استعمال کے مترادف ہے، لمبی تاخیر پر عدالتیں بغیر میرٹ دیکھے کیس ختم کرا دیتی ہیں۔

چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ کوئی حوالہ رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم کے دور کا بھی ہے جہاں سے سارے قوانین آتے ہیں؟

امجد پرویز نے کہا کہ میں یہ بھی کہتا ہوں کہ اللّٰہ تعالیٰ نے ابلیس کو بھی سزا سے پہلے اپنا مؤقف دینے کا موقع دیا تھا، صلح حدیبیہ بھی لوگوں کے حقوق سے متعلق تھی، ہم خوامخواہ دائیں بائیں جاتے ہیں، اللّٰہ تعالیٰ نے سیدھا سیدھا کہا ہے کہ سننے کا موقع فراہم کیے بغیر سزا نہیں دینی، جس کیس میں سزا تھی وہ پاسپورٹ واپسی میں رکاوٹ بن سکتا تھا لیکن وہ بھی اب نہیں رہا۔

چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ عدالت نے اپنی تسلی کے لیے پاسپورٹ رکھوایا تھا، کیا وہ تسلی ختم ہو گئی؟

مریم نواز کے وکیل امجد پرویز نے جواب دیا کہ مریم نواز نے 4 سال تک انتظار کیا ہے، کوئی ریفرنس دائر یا تفتیش نہیں کی گئی۔

چیف جسٹس نے سوال کیا کہ کیا ہم ضمانت کےفیصلے میں شرط والے حصے کی ترمیم کریں گے یا اس حصے کو واپس لیں گے؟

مریم نواز کے وکیل امجد پرویز نے کہا کہ عدالت مریم نواز کی ضمانت کے حکم میں ترمیم کر سکتی ہے۔

چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ وفاقی حکومت کا اس پر کیا جواب ہے؟

ڈپٹی اٹارنی جنرل نے کہا کہ ہمیں پاسپورٹ واپس دینے پر کوئی اعتراض نہیں۔

چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ مریم کی ضمانت کے خلاف اپیل دائر کی تھی؟

ڈپٹی اٹارنی جنرل نے جواب دیا کہ مجھے اس بارے میں معلوم نہیں۔

چیف جسٹس محمد امیر بھٹی نے کہا کہ تو وہ کون بتائے گا؟ یا آپ نے صرف 1 فقرہ سن لیا ہے کہ کچھ نہیں کرنا؟ مخالفین آ جائیں تو زمین آسمان ایک کر دیتے ہیں، اپنے ہوں تو زمین پر بچھ جاتے ہیں۔

نیب پراسیکیوٹر نے بتایا کہ نیب ترمیمی آرڈیننس کے تحت ہمیں علم نہیں کہ اب یہ کیس نیب کے دائرہ اختیار میں ہے یا نہیں، مریم نواز کے خلاف کوئی تفتیش زیرِ التواء نہیں، نہ مریم نواز کے پاسپورٹ کی ضرورت ہے، اس کیس کی تفتیش کی تھی، اب معلوم نہیں نئی ترمیم کے بعدیہ کیس رہتا بھی ہے یا نہیں، میں ابھی اس پر کوئی بیان دینے کی پوزیشن میں نہیں ہوں۔

چیف جسٹس نے ان سے استفسار کیا کہ آپ کو پاسپورٹ کی واپسی پر کیا ہدایت ملی ہیں، ہمیں پاسپورٹ واپسی پر کوئی اعتراض نہیں۔

عدالتِ عالیہ نے مریم نواز کی درخواست منظور کرتے ہوئے ان کا پاسپورٹ واپس کرنے کی ہدایت کر دی۔

Advertisements
julia rana solicitors london

دوسری جانب مریم نواز کی پاسپورٹ واپسی کا فیصلہ آنے پر لیگی کارکنوں نے جشن منایا اور مٹھائی تقسیم کی

  • merkit.pk
  • julia rana solicitors london
  • julia rana solicitors
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply