غزل پلس(12)۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

مجھ کو قلم، فرہاد کو تیشہ ، رانجھے کو کشکول دیا
عشق نے دل والوں کو جو بھی کام دیا انمول دیا

سیپ سیپ سے پوچھ پوچھ کر ، ہم نے آپ کو ڈھونڈا تھا
آپ نے تو ، اے موتیوں والے، ہم کو خاک میں رول دیا

tripako tours pakistan

سوچ کی میری شریانوں میں زہر بھر گیا اُس دن سے
جس دن میں نے سچ میں جھوٹ کاپہلا بتاشہ گھول دیا

حسن کے “کھُل سِم سِم ” کے عمل سے ہم کو توکچھ غرض نہ تھی
پھر بھی عشق کے جادو گر نے اس زنبیل کو کھول دیا

میرا میٹھا گیت سنو گے؟ ہم نے تو اتنا پوچھا تھا
اس کے جواب میں آپ نے، قبلہ، کیسا کڑوا بول دیا

ہم نے سوچا “تُلا دان” میں سونا دان کریں گے، پر
تول ترازو میں منشی نے جسم ہمارا تول دیا

Advertisements
merkit.pk

تاج، عصا، تسبیح، عمامہ پہنے ہوئےتھے آپ آنندؔ
کس نے سب کچھ آپ سے لے کر اک خستہ کشکول دیا

  • merkit.pk
  • merkit.pk

ستیہ پال آنند
شاعر، مصنف اور دھرتی کا سچا بیٹا

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply