کیا چین سے کشیدگی بڑھی ہے؟/رویش کمار

رويش کمار جب کہیں کچھ نہیں ہو رہا ہوتا ہے تو بھارت اور چین کی سرحد پر کہیں کچھ ہونے لگتا ہے. اگر اس کا تعلق نفسیاتی دباؤ بنانے سے ہے تو ایسے موضوعات سے دور رہنے کے بعد بھی مجھے لگتا ہے کہ اب چین اس طرح کا منووگیانک دباؤ نہیں بنا پائے. اگر بنا پاتا تو امرناتھ یاترا کی طرح کیلاش مان سروور سفر روک دینے پر ہنگامہ مچ گیا ہوتا. اس سے زیادہ ہنگامہ پاکستان کے ساتھ کچھ ہونے پر ہو جاتا ہے. کانگریس کے ترجمان ابھیشیک منو سنگھوی نے کہا ہے کہ گزشتہ 45 دنوں میں چین کی جانب سے 120 اكرذن ہوئے ہیں. اس سال ایسے 240 اكرذن ہو چکے ہیں. ایسا پہلے کبھی نہیں ہوا. اگر سنگھوی کی بات صحیح ہے تو کیا چین غیر معمولی طور پر اپنی جارحیت کو تیز کر رہا ہے. بھارت کے لئے سستے سامانوں کی برآمد والا ملک کہیں سرحد پر بھاری دام تو نہیں وصولنا چاہتا ہے.”ٹائمز آف انڈیا” کی خبر کے مطابق بھارت نے ڈوكلام میں 1962 کے بعد پہلی بار بھاری مقدار میں فوجیوں کی تعیناتی کی ہے. بھارت کوئی خطرہ نہیں لینا چاہتا لیکن بھارت سے 5 ارب ڈالر کا کاروبار کرنے والا چین اتنے بڑے بازار کو خطرے میں کیوں ڈالنا چاہتا؟

سکم، بھوٹان اور تبت کے مثلث پر ہے ڈوكلم، وہاں پر چین کی ٹکڑی سڑک بنانے کے لئے داخل ہوتی ہے. وہاں گشت کر رہی رائل بھوٹان آرمی روکتی ہے اور ہندوستان کی فوج بھی اس میں شامل ہو جاتی ہے. خبر آئی کہ چین نے بھارت کے عارضی بنکر منہدم کر دیے. میڈیا رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ چین اور بھارت کے فوجیوں کے درمیان گتھم گتھا ہو گئی. ہتھیاروں کا استعمال نہیں ہوا. بھارت نہیں چاہتا کہ چین وہاں سڑک مکمل کرے، اس سے وہ سلی گوڑی كوریڈور کے کافی قریب پہنچ جائے گا. ادھر چین کا دعویٰ ہے کہ وہ اپنی حد میں سڑک بنا رہا ہے. بھارت اس حد میں تجاوز کرنے کا الزام لگا رہا ہے. وہاں کی فوج پی ایل اے کے ترجمان نے بھارت کو 1962 جنگ کی شکست کی یاد دلاتے ہوئے کہا کہ بھارت کی فوج جنگ کے لئے زیادہ بے چین نہ ہو. اس حد تک بیان بازی کی ضرورت کیوں پڑی. بھارت کے آرمی چیف جنرل بپن راوت نے کہا تھا کہ بھارت اپنے اندرونی انتہا پسندی سے جوجتے ہوئے بھی دو رخی جنگ جھیل سکتی ہے.

بھارت کہیں سے بھی چین کے نفسیاتی دباؤ میں نہیں لگتا ہے. بلکہ جمعہ کو وزارت خارجہ نے ایک بیان دیا کہ بھارت چین کے تازہ اقدامات کو لے کر فکر مند ہے اور چین کی حکومت کو اپنی تشویش سے آگاہ کیا جاچکا ہے کہ اس طرح کی تعمیر سے جمود میں کافی تبدیلی آ جاتا ہے. جموں کشمیر سرحد پر بھارت اور چین لائن آف ایكچوئل کنٹرول کے پاس ٹکراتے رہے ہیں. 2013 اور 2014 میں چین نے ہندوستان کی سرحد میں دراندازی کی تھی. ڈوكلام کا تنازعہ پہلی بار اتنا ظاہر ہوا ہے. بھارت کے وزیر دفاع ارون جیٹلی نے انڈیا ٹوڈے چینل کے پروگرام میں بیان دے دیا کہ بھارت بھی 1962 والا بھارت نہیں ہے، 2017 کا ہندوستان ہے. چین کی وزارت خارجہ کے ترجمان نے بھی جواب ادھار نہیں رکھا. کہا کہ چین بھی 1962 والا چین نہیں ہے. وزیر دفاع جیٹلی کا کہنا ہے کہ علاقے میں تصادم کے آغاز بیجنگ نے سڑک کی تعمیر کی پہل سے کی تھی، جسے لے کر بھارت فکر مند ہے. ڈوكلم کا موجودہ متنازع علاقے صرف 90 مربع کلومیٹر کا پہاڑی علاقہ ہے. بھوٹان کی حد تک پہنچنے کے لئے چین ڈوكلم کے راستے سڑک بنا رہا ہے.

چین کا کہنا ہے کہ سکم پر 1890 کی چین اور برطانیہ کے معاہدے کا ہندوستان کے سابق وزیر اعظم جواہر لال نہرو نے بھی حمایت کی تھی. چین کے اس وقت کے وزیر اعظم چاو این لائی کو بھیجے خط میں انہوں نے یہ حمایت کی تھی. چین کا کہنا ہے کہ بھارت اس معاہدے کا احترام کرے اور ڈوكلام سے اپنی فوج کو واپس بلائے. بھوٹان نے چین سے کہا ہے کہ وہ اس کی حد سے تجاوز کر رہا ہے، اس پر چین کا کہنا ہے کہ بھارت، بھوٹان کو ڈھال کی طرح استعمال کر رہا ہے. بھارت اور بھوٹان کے درمیان معاہدہ ہے کہ بھارت بھوٹان کی سرحدوں کی حفاظت کرے گا. خط دکھا کر کسی جغرافیائی علاقے پر دعویداری بھی عجیب مضحکہ خیز ہے. بین الاقوامی سرحدوں پر خط اور بیانات سے دعوی کیا جانے لگے تو ہو چکا. ظاہر ہے جانکار سمجھنے کی کوشش کر رہے ہیں کہ چین اتنا جارحانہ کیوں ہیں. کیا ہندوستان کے ون بیلٹ ون سڑک پروجیکٹ میں شامل نہ ہونے سے ناراض ہے، کیا بھارت اور امریکہ کی نزدیکی سے ناراض ہے، کیا دلائی لامہ کے اروناچل پردیش جانے سے ناراض ہے، کوئی ایک واضح وجہ نظر نہیں آتی ہے.

2014 میں جب چین کے صدر ہندوستان آئے تھے تب ان کا شاندار استقبال کیا گیا. سابرمتی کے ساحل پر جھولا بھی جھلايا گیا تھا اس وقت بھی چین نے لداخ خطے میں دراندازی کر دی تھی. تب بھی کیا اس مداخلت کو ہم ان وجوہات کے تناظر میں دیکھ سکتے ہیں. تب تو بھارت نے ون بیلٹ ون سڑک کی مخالفت بھی نہیں کی تھی. آپ کو بتا دیں ون بیلٹ ، ون روڈ چین کا اب تک کا سب سے زیادہ مہتواکانکشی پروجیکٹ ہے، جس کا بجٹ ہے دس ٹریلین امریکی ڈالر یعنی سات سو کھرب روپے جو بھارت کی کل معیشت کا تقریباٍ ً ایک تہائی ہے. ون بیلٹ ون روڈ چین کے صدر شی چنگ فنگ کا خواب ہے. جس کا مقصد بتایا گیا ہے، ایشیائی ممالک کے ساتھ چین کا رابطہ اور تعاون بہتر کرنا اور افریقہ اور یورپ کو بھی ایشیائی ممالک کے ساتھ جوڑنا. بیجنگ میں اس کے افتتاح کے موقع پر چین سمیت 29 ممالک کے راشٹرپرمكھ اور 70 دیگر ممالک کے نمائندے موجود رہے.اس پروجیکٹ کے تحت زمین اور سمندری راستوں سے تجارتی راستوں کو بہتر بنایا جائے گا. بہت ہائی سپیڈ ریل نیٹ ورک ہوں گے جو یورپ تک جائیں گے. ایشیا اور افریقہ میں کئی بندرگاہوں سے یہ روٹ گزرے گا اور اس راستے میں بہت فری ٹریڈ زون آئیں گے.

چین دنیا کے پینسٹھ ممالک کو ایک دوسرے کے قریب لے آئے گا اور دنیا کی دو تہائی آبادی کو اس کی معیشت سے براہ راست شامل کیا جائے گا. بھارت نے تب بھی اپنی جغرافیائی خودمختاری کو ترجیح دی اور اسی طرح اہم پراجیکٹ سے خود کو الگ کر لیا. مئی میں چین کیوں پریشان ہوا تھا جب بھارت کے وزیر اعظم نریندر مودی آسام اور اروناچل پردیش کو جوڑنے والے پل کا افتتاح کرنے گئے. تب تو وہ ٹرمپ کے امریکہ نہیں گئے تھے. تب تو ٹرمپ نے چین کے صدر کی ہی جم کر تعریف کی تھی. برہمپتر دریا پر بنے اس پل کی وجہ سے آسام اور اروناچل پردیش کافی قریب آگئے. یہ پل بھارت چین سرحد کے بہت قریب ہے. تب چین نے بیان جاری کیا تھا کہ بھارت کے ساتھ اس کا تنازعہ چل رہا ہے اس لئے شمال مشرقی بھارت میں بنیادی ڈھانچے کی تعمیر کرنے کے تحمل برتے.

اروناچل پردیش میں دلائی لامہ کے سفر کے وقت چین نے ایسی رائے ظاہر کی تھی. مگر اس کی وجہ سے ہے تو یو پی اے کے دور میں بھی دلائی لامہ اروناچل پردیش گئے تھے اور پھر تبت کو لے کر بھارت نے اپنی پالیسی میں کوئی خاص تبدیلی کی ہے یا پرانی پالیسی میں رکاوٹ ڈال دی ہے، یہ بھی صاف نہیں ہے. ظاہر ہے چین ہمارے سامنے موجودہ وجوہات سے نہیں چڑھائی کر رہا ہے بلکہ، وجوہات کچھ اور ہوں گی . چین کو ہم فوری وجوہات کی نظر سے دیکھنے کے عادی ہیں، بہتر ہے فوری وجوہات کے ساتھ ساتھ اس کی دور رس پالیسیوں کا بھی جائزہ لینا چاہیے. ہو سکتا ہے دنیا کی سطح پر سٹریٹجک اتحاد تبدیل کر رہے ہوں. بھارت کے وزیر اعظم کھل کر ایشیا کی صدی کی بات کرتے ہیں، چین ایشیا کے قیادت کرنے کی دبی خواہش رکھتا ہے. وہ کبھی پاکستان کے ساتھ گوادر پروجیکٹ کے ذریعہ ہندوستان کو گھیرتا ہے تو بھارت وہاں سے 72 کلومیٹر دور ایران پر مشتمل چابهار پروجیکٹ کے ذریعہ چین کے داؤ سے نکل جاتا ہے. پر کیا چین بھارتی سرحد پر معمول سے زیادہ فعال ہو رہا ہے؟

گوشہ ہند
گوشہ ہند
ہند کے اردو دان دوست آپ کیلیے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *