پروین رحمان قتل کیس : پولیس نے روایتی غفلت برتی

اورنگی پائلٹ پراجیکٹ کی ڈائریکٹر پروین رحمٰن قتل کیس میں پولیس کی سنگین اور مجرمانہ غفلتیں سامنے آگئیں۔

پروین رحمٰن کے قتل کے 24 گھنٹوں کے اندر ایک ملزم کو ہلاک کرنے کا دعویٰ کیا گیا، اس وقت پولیس حکام کی جانب سے اس مقابلے کا کریڈٹ بھی لیا گیا۔

ہلاک ملزم کا تعلق مبینہ طور پر کالعدم تنظیم سے بتایا گیا، اس ملزم کو پروین رحمٰن کا قاتل ظاہر کیا گیا اور خول بھی میچ کروائے گئے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ملزم مبینہ طور پر نہ ہی ہلاک ہوا نہ اس کا تعلق کیس میں سامنے آیا۔

ذرائع نے کہا کہ جاوید اوڈھو اس وقت ڈی آئی جی ویسٹ اور آصف اعجاز شیخ ایس ایس پی ویسٹ تھے، دونوں افسران کو چند ایس ایچ اوز کی جانب سے یہ اطلاعات دی گئیں، چند سال بعد ویسٹ پولیس نے ہی رحیم سواتی سمیت دیگر ملزمان گرفتار کئے۔

پولیس ذرائع نے بتایا کہ ان گرفتار ملزمان کے خلاف شواہد بھی جمع کیے گئے تھے، براہ راست ان ملزمان کے کیس میں کوئی شواہد نہ مل سکے، پہلے ہلاک ملزم کا تعلق کالعدم تنظیم بعد میں سیاسی جماعت سے بتایا گیا، پروین رحمٰن قتل کیس تحقیقات کے لیے عدالتی حکم پر کئی جے آئی ٹیز بنیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ شواہد ضائع کیے جانے پر ٹھوس تحقیقات سامنے نہیں آسکیں، کیس خراب کرنے میں مبینہ طور پر پولیس کے چند افسران ہی ملوث تھے، پروین رحمٰن کے قتل کی ممکنہ وجوہات میں لینڈ گریبنگ کا ذکر جے آئی ٹی میں کیا گیا۔

واضح رہے کہ سندھ ہائی کورٹ نے پروین رحمٰن قتل کیس میں سنائی گئی سزاؤں کو کالعدم قرار دیتے ہوئے کیس میں ملزمان کی سزاؤں کے خلاف اپیلیں منظور کر لی ہیں۔

Advertisements
julia rana solicitors

سندھ ہائی کورٹ نے کہا کہ پروین رحمٰن قتل کیس کے ملزمان دوسرے کیسز میں مطلوب نہیں تو رہا کر دیا جائے۔

Facebook Comments

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply