پاگل۔۔۔مظفر عباس

میں آئینے میں ایک پاگل کو دیکھ کر مخاطب ہوا۔

سب لوگ کہتے ہیں میں پاگل ہوں۔

ہاں شاید میں پاگل ہی ہوں گا۔

کیونکہ اگرمیں اپنے آپ کو پاگل نہیں سمجھتا تو اس کا مطلب ہے کہ میں پاگل ہوں۔

کیونکہ ہرپاگل یہی کہتا ہے کہ میں پاگل نہیں ہوں۔

اگرمیں واقعی پاگل ہوں تو یہ فہم و فراست اور علم و عمل کا  منبع، معاشرہ ایک دوسرے کو کیوں پاگلوں کی طرح کاٹ رہا ہے۔

مظفر عباس
مظفر عباس
سیاست ادب مزاح آذادمنش زبان دراز

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *