غازی علم الدینؒ شہیدکا 89 واں یوم شہادت

کراچی: غازی علم دین شہیدؒ کا 89 واں یوم شہادت آج 31 اکتوبر کو عقیدت و احترام کے ساتھ منایا جائے گا۔ انہوں نے ایک گستاخ رسول راجپال کو جہنم رسید کیا تھا۔غازی علم دین 8 ذی القعدہ 1366ء بمطابق 4 دسمبر 1908ء کو کوچہ چابک سوارں لاہور میں متوسط طبقے کے ایک فرد طالع مند کے گھر میں پیدا ہوئے۔ جو بڑھئی (یعنی لکڑی) کا کام کرتے تھے۔ طالع مند اعلیٰ پائے کے ہنرمند تھے۔ جن کا اپنے علاقے کے جانے پہچانے کاریگروں میں شمار ہوتا تھا۔ وہ علم دین کوگاہے گاہے اپنے ساتھ کام پرلاہور سے باہر بھی لے جاتے۔ان کا ایک بیٹا پڑھ لکھ کر سرکاری نوکری کرنے لگا، اور دوسرا محمد امین والد کے ساتھ لکڑی کے کام پر ہی رہا، علم دین نے ابتدائی تعلیم اپنے محلے کے ایک مدرسے میں حاصل کی. تعلیم سے فراغت کے بعد آپ نے اپنے آبائی پیشہ کو ہی اختیار کیا اور اس فن میں ہی اپنے والد اور بڑے بھائی میاں محمد امین کی شاگردی اختیار کی.1928 میں آپ کوہاٹ منتفل ہو گئے اور بنوں بازار میں اپنا فرنیچر سازی کا کام شروع کیا.لاہور کے ایک ناشر شیطان صفت ‘راجپال’ نے نبی آخرالزماں حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم کی شان کے خلاف ایک دل آزارکتاب ‘رنگیلا رسول'(نعوذ باللہ) شائع کر کے کروڑوں مسلمانوں کے جذبات کو مجروح کیا۔ جس پر مسلمانوں میں سخت اضطراب پیدا ہوا.مسلمان رہنماؤں نے انگریز حکومت سے اس دل آزار کتاب کو ضبط کرانے اور ناشر کے خلاف کاروائی کا مطالبہ کیا. تو مجسٹریٹ نے ناشر راجپال کو صرف چھ ماہ قید کی سزا پر ہی اکتفا کیا۔ جس کے خلاف مجرم نے ہائی کورٹ میں مزيد اپیل کی جہاں جسٹس دلیپ سنگھ مسیح نے اس کو رہا کردیا.انگریز حکومت کی عدم توجہی سے مایوس ہو کر مسلمانوں نے متعدد جلسے جلوس منعقد کئے. مگر انگریز حکومت نے روایتی مسلم دشمنی کا مظاہرہ کرتے ہوئے دفعہ 144 نافذ کرکے الٹا مسلمان رہنماؤں کو ہی گرفتار کرنا شروع کردیا.مسلمانوں میں یہ احساس جاگزیں ہونے لگا کہ حکومت وقت ملعون ناشر کو بچانے کی پالیسی پر عمل پیرا ہے اور وہ جان گۓ کہ اس ملعون کو کیفرکردار تک پہنچانے کے لئے ان کو خود ہی کچھ کرنا ہوگا.
اسی دوران لاہور کے ایک غازی خدا بخش نے 24 ستمبر 1928 کو اس گستاخ کو اس کی دکان پر نشانہ بنایا، تاہم وہ خبیث بھاگ کر اپنی جان بچانے میں کامیاب ہوگيا. غازی خدابخش کو گرفتاری کے بعد 7 سال کی سزاسنائی گئی. اسی طرح ایک اور مرد مجاہد گھر سے کفن باندھ کر نکلا، جو افغانستان کا ایک غازی عبدالعزیز تھا، جس نے لاہور آکر اس شاتم رسول کی دکان کارخ کیا مگر یہ بدبخت دکان میں موجود نہیں تھا اس کی جگہ اس کا دوست سوامی ستیانند موجود تھا۔ غازی عبدالعزیز نے غلط فہمی میں اس کو ہی راجپال سمجھ کر ٹھکانے لگا دیا.غازی عبدالعزیزکو حکومت وقت نے چودہ سال کی سزا سنائی. راج پال ان دو حملوں کے بعد نہایت خوفزدہ رہنے لگا. حکومت نے اس کی پشت پناہی کرتے ہوئے دو ہندو سپاہیوں اور ایک سکھ حوالدار کو اس کی حفاظت پر متعین کردیا.اخبارات چیختے چلاّتے رہے، راجپال کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کرتے رہے۔ جلسے ہوتے جلوس نکلتے، لیکن حکومت اور عدل وانصاف کے کان پر جوں تک نہ رینگتی۔ مسلمان دلبرداشتہ تو ہوئے لیکن سرگرم عمل رہے۔ دلّی دروازہ سیاسی سرگرمیوں کا گڑھ تھا۔ یہاں سے جو آواز اٹھتی پورے ہندوستان میں گونج جاتی۔علم دین ایک روز حسب معمول کام پر سے واپس آتے ہوئے دلّی دروازے پر لوگوں کا ہجوم دیکھ کر رک گئے۔ انہوں نے لوگوں سے دریافت کیا تو پتا چلا کہ راجپال نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے خلاف کتاب چھاپی ہے اس کے خلاف تقریریں ہورہی ہیں۔ کچھ دیر میں ایک اور مقرر آئے جو پنجابی زبان میں تقریر کرنے لگے۔ یہ علم دین کی اپنی زبان تھی۔ تقریر کا ماحصل یہ تھا کہ راجپال نے ہمارے پیارے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی شان میں گستاخی کی ہے، اور وہ واجب القتل ہے، اسے اس شرانگیزی کی سزا ضرور ملنی چاہیے۔علم دین گھر پہنچے تو والد سے تقریرکا ذکر کیا۔ انہوں نے بھی تائید کی کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات پر حملہ کرنے والے کو واصلِ جہنم کرنا چاہیے۔وہ اپنے دوست شیدے سے ملے اور راجپال اور اس کی کتاب کا ذکر کرتے۔ لیکن پتہ نہیں چل رہا تھا کہ راجپال کون ہے؟ کہاں ہے اُس کی دکان؟ اورکیا ہے اس کا حلیہ؟ شیدے کے ایک دوست کے ذریعے معلوم ہوا کہ شاتمِ رسول ہسپتال روڈ پر کتابوں کی دکان کرتا ہے۔ علم دین اس کی تحقیق پر لگ گیا، جس کیلیۓ اس نے بہت سے لوگون سے پوچھا اور جلسے جلوسوں میں ہونی والی تقاریر سنی، بعد از یقین ایک رات اس کا دل بہت پسیجا، جہاں پھر ایک رات انہیں خواب میں ایک بزرگ ملے، انہوں نے کہا: تمہارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی شان میں گستاخی ہو رہی ہے اور تم ابھی تک سورہے ہو! اٹھو جلدی کرو۔علم دین ہڑبڑا کر اٹھے اور سیدھے شیدے کے گھر پہنچے۔ پتہ چلا کہ شیدے کو بھی ویسا ہی خواب نظرآیا تھا۔ دونوں ہی کو بزرگ نے راجپال کا صفایا کرنے کو کہا۔ دونوں میں یہ بحث چلتی رہی کہ کون یہ کام کرے، کیونکہ دونوں ہی یہ کام کرنا چاہتے تھے۔ پھر قرعہ اندازی کے ذریعے دونوں نے فیصلہ کیا۔ تین مرتبہ علم دین کے نام کی پرچی نکلی تو شیدے کو ہار ماننی پڑی۔ علم دین ہی شاتمِ رسول کا فیصلہ کرنے پر مامور ہوئے۔ چنانچہ غازی علم الدین 6 اپریل 1929ء کو لاہور آئے، معلوم ہوا کہ راج پال کی دوکان واقع ہسپتال روڈ انار کلی نزد مزار قطب الدین ایبک میں ہے، آپ وہاں گئے تو معلوم ہوا، راجپال ابھی نہیں آیا۔ آتا ہے تو پولیس اس کی حفاظت کے لیے آجاتی ہے۔ آپ نے انتظار کیا اور پھر اتنے میں وہ خبیث ایک بجے دوپہر پہنچ گیا، جسے کار سے نکلنے والے کے بارے میں کھوکھے والے نے بتایا کہ یہی راجپال ہے، اسی نے کتاب چھاپی ہے۔ وہ دفتر میں جا کر اپنی کرسی پر بیٹھا اور پولیس کو اپنی آمد کی خبر دینے کے لیے ٹیلی فون کرنے ہی والا تھا کہ علم دین دفترکے اندر داخل ہوئے۔راجپال نے درمیانے قد کے گندمی رنگ والے جوان کو اندر داخل ہوتے دیکھ لیا لیکن وہ سوچ بھی نہ سکا، کہ موت اس کے اتنے قریب آچکی ہے۔ آپ نے راج پال کو للکارا اور کہا اپنے جرم کی معافی مانگ لو اور دل آزار کتاب کو تلف کردو اور آئندہ اس قسم کی حرکتوں سے باز آ جاؤ۔ راج پال اس انتباہ کو گیڈر بھبکی سمجھ کر خاموش رہا ۔اس پر غازی علم الدین نے پلک جھپکتے میں ہی چھری نکالی، اور ہاتھ فضا میں بلند ہوا اور راجپال کے جگر پر جالگا۔ چھری کا پھل سینے میں اترچکا تھا۔ ایک ہی وار اتنا کارگر ثابت ہوا کہ راجپال کے منہ سے صرف ہائے ہاۓ کی آواز ہی نکلی اور وہ اوندھے منہ زمین پر جاپڑا۔ اس کی دکان کے ایک ملازم نے قریبی تھانے انارکلی کو خبر دی جس پر پولیس نے آپ کو گرفتار کرلیا. آپ اس واقعہ کے بعد ناصرف مکمل پرسکون رہے بلکہ آپ نے فرار ہونے کی بھی کوئی کوشش نہیں کی. آپ نے اس کاروائی کا اعتراف کیا اور گرفتاری پیش کردی. مقدمہ ایڈیشنل ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ لوئس کی عدالت میں پیش ہوا جس نے ملزم پر فرد جرم عائد کرکے صفائی کا موقع دیئے بغیر مقدمہ سیشن کورٹ میں منتقل کردیا.آپ کی جانب سے سلیم بارایٹ لا پیش ہوئے جنہوں نے آپ کے حق میں دلائل دیئے مگر نیپ نامی انگریز جج نے آپ کو مورخہ 22 مئی1929 کو سزائے موت کا حکم سنایا. مسلمانان لاہور نے فیصلہ کیا کہ کہ سیشن کورٹ کے اس فیصلے کے خلاف ہائی کورٹ میں اپیل کی جائے اور اس مقدمے میں غازی کی وکالت کے لئے شہرہ آفاق وکیل جناب قائد اعظم محمد علی جناح رحمۃ اللہ تعالی علیہ کو نامزد کیا گیا.چنانچہ محمد علی جناح رحمۃ اللہ تعالی علیہ بمبئی سے لاہور تشریف لائے جن کی معاونت جناب فرخ حسین بیرسٹر نے کی.7 جولائی 1929ءکو غازی علم دین کو سزائے موت کا حکم سنایا گیا، جسے اپیل کے بعد 15 جولائی 1929 کو ہائی کورٹ کے دو ججوں نے بھی سیشن کورٹ کی سزا کو بحال رکھا اور غازی کی اپیل خارج کردی. اپیل خارج ہونے کی اطلاع جب جیل میں غازی علم دین کو ملی تو آپ نے مسکرا کر فرمایا شکر الحمداللہ ! میں یہی چاہتا تھا. بزدلوں کی طرح قیدی بن کر جیل میں سڑنے کے بجائے تختہ دار پر چڑھ کر ناموس رسالت پر اپنی جان فدا کرنا میرے لیۓ ہزار ابدی سکون وراحت ہے۔ مسلمانوں عمائدین نے ہائی کورٹ کے اس فیصلے کے خلاف لندن کی پریوی کونسل میں اپیل دائر کی .اس اپیل کا مسودہ قائد اعظم رحمۃ اللہ تعالی علیہ کی زیر نگرانی ہی تیار کیا گیا. مگر انگریز حکومت جو ایڈیشنل سیشن کورٹ سے ہائی کورٹ تک مسلم دشمنی کا مسلسل مظاہرہ کرتی آئی تھی اس نے بھی اپیل کو رد کردیا.علم دین کے گھر والوں کو خبر ہوئی تو وہ حیران ضرور ہوئے لیکن انہیں پتہ چل گیا کہ ان کے نورِچشم نے کیا زبردست کارنامہ سرانجام دیتے ہوۓ ان کا سر فخرسے بلند کردیا ہے۔اس قتل کی جزا کے طور پر 31 اکتوبر 1929 بروز جمعرات کو میانوالی جیل میں عمل درآمد کیا گیا۔ آپ کی شہادت کے بعد انگریز حکومت نے آپ کے جسد خاکی کو قبضے میں ہی رکھا، اور کسی نامعلوم مقام پر سپرد خاک کردیا جس پر شدید احتجاجی لہر اٹھی اور 4 نومبر 1929 کو مسلمان رہنماؤں کے ایک وفد( جن میں سر فہرست شاعر مشرق علامہ اقبال رحمۃ اللہ تعالی علیہ ، سر محمد شفیع، مولانا عبدالعزیز، مولانا ظفر علی خان، سر فضل حسین، خلیفہ شجاع،میاں امیر الدین،مولانا غلام محی الدین قصوری صاحبان شامل تھے) نے گورنر پنجاب سے ملاقات کی اور جسد خاکی کی حوالگی کا مطالبہ کیا. گورنر نے شرط عائد کی کہ اگر مذکورہ رہنما پرامن تدفین کی ذمہ داری اور کسی گڑبڑ کے نہ ہونے کی یقین دہانی کرائیں تو جسد خاکی مسلمانوں کے حوالے کیا جاسکتا ہے . مذکورہ وفد نے یہ شرط منظور کرلی۔13 نومبر 1929 کومسلمانوں کا ایک وفد سید مراتب علی شاہ اور مجسٹریٹ مرزا مہدی حسن کی قیادت میں میانوالی روانہ ہوا اور دوسرے روز جسد خاکی وصول کر لیا گیا. موقع پر موجود لوگوں کا بیان ہے کہ دو ہفتے گزر جانے کے باوجود جسد خاکی میں ذرا بھی تعفن نہیں تھا، اور لاش بالکل صحیح وسالم تھی. چہرے پر جلال و جمال کا حسین امتزاج تھا، اور ہونٹوں پر مسکراہٹ تھی. محکمہ ریلوے نے یہ جسد خاکی 15 نومبر 1929 کو لاہور چھاؤنی میں دو مسلم رہنماؤں جناب محمد علامہ اقبال رحمۃ اللہ تعالی علیہ اور سر محمد شفیع صاحبان کے حوالے کیا.غازی علم دین شہید رحمۃ اللہ تعالی علیہ شہید کا جنازہ لاہو ر کی تاریخ کا سب سے بڑا جنازہ کہلاتا ہے، جس میں تقریبا اس وقت چھ لاکھ مسلمانوں نے شرکت کی. جنازہ کا جلوس تقریبا ساڑھے پانچ میل لمبا تھا. جناب محترم غازی علم دین شہید صاحب کی نماز جنازہ قاری شمس الدین خطیب مسجد وزیر خان نے پڑھائی اور مولانا دیدار شاہ اور علامہ اقبال رحمۃ اللہ تعالی علیہ نے غازی علم دین شہید رحمۃ اللہ تعالی علیہ کو اپنے ہاتھوں سے قبر میں اتارا. اس موقع پر علامہ اقبال رحمۃ اللہ تعالی علیہ نے وہ مشہور قول فرمایا کہ یہ لوہاروں کا لڑکا ہم سب پڑھے لکھوں سے بازی لے گیا. لوگوں نے عقیدت میں اتنے پھول نچھاور کئے کہ میت ان میں چھپ گئی. بہاولپور روڈ کے کنارے میانی صاحب قبرستان میں ایک نمایاں مقام پر آپ کی آخری آرام گاہ موجود ہے. مزار کے چہار اطراف برآمدہ ہے مزار بغیر چھت کے ہے. مزار کے مشرق میں غازی کے والد محترم اور والدہ محترمہ کی بھی آخری آرامگاہیں موجود ہیں. لوح مزار پر پنجابی اور اردو کے کئي اشعار کندہ ہیں۔علامہ اقبال رحمۃ اللہ تعالی علیہ کو جب پیر جماعت علی شاہ رحمۃ اللہ تعالی علیہ نے موقعہ کی مناسبت سے کلام کا حکم دیا، تو آپ نے یہ تاریخی اشعار پیش کیۓ جو آپ کی خدمت میں بھی حاظر ہے۔‘نظر اللہ پہ رکھتا مسلمان غیور،موت کیا شہ ہے؟ فقط عالم معنی کا سفران شہیدوں کی دیت اہل کلیسا سے نہ مانگقدر و قیمت میں ہے جن کا خون حرم سے بڑھ کر،آہ! اے مرد مسلماں تجھے کیا یاد نہیں؟حرف لا تدعو مع اللہ الہ آخر، اقبال رحمۃ اللہ علیہ۔’
یہاں آپ کو یہ بتاتے چلیں کہ آج پھر 31 اکتوبر ہے اور ایک اور گستاخی رسول ﷺ کے مقدمے کا فیصلہ سنایا جائے گا جو ‘آسیہ بی بی کیس’ کے نام سے مشہور ہے۔ اس موقع پر ملک بھر میں ہائی الرٹ جاری کیا گیا ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *