نواز کا بیان غلط رپورٹ کیا گیا،وزیراعظم

وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ غلط رپورٹنگ سے شروع ہونے والا نواز شریف کے بیان کا معاملہ اب ختم ہونا چاہیے۔ قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ نواز شریف کے انٹرویو میں جو کہا گیا اور جس طرح لکھا گیا وہاں سے سارا معاملہ شروع ہوا، ان باتوں کو غلط رپورٹ کیا گیا اور بھارتی میڈیا نے اپنے مقاصد کے لیے اس معاملے کو اٹھایا اور ہماری بدقسمی ہے کہ ہم اسے لے کر چل رہے ہیں۔  12 مئی کو خبر شائع ہوئی اور ہفتے کو مقامی کسی اخبار میں یہ معاملہ نہیں تھا، وثوق سے کہہ سکتا ہوں کہ کسی ایک فرد نے بھی خبر نہیں پڑھی ہوگی، اگر پڑھی ہوتی تو کبھی غداری اور اس قسم کی باتیں نہ کرتے۔ اخبار منگوالیں جو باتیں اپوزیشن ارکان کر رہے ہیں ایسی کوئی بات نہیں ہے، نان سٹیٹ ایکٹرز کے حوالے سے جو ایک جملہ ہے وہ غلط رپورٹ ہوا، نواز شریف نے  یہ کہا اور نہ یہ کہ وہ لوگ جنہوں نے ممبئی میں حملہ کیا انہیں پاکستان سے جان بوجھ کر بھیجا گیا، اگر یہ تاثر قائم ہوا تو بھارتی میڈیا نے کیا، اس کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ پاکستان کی پالیسی ہے کہ ہم اپنی سرزمین کسی دوسرے ملک پر حملے کے لیے استعمال ہونے نہیں دیں گے، یہ پالیسی جب نواز شریف وزیراعظم تھے، اس وقت بھی تھی اور آج بھی اس پر قائم ہیں۔ جو ایشو تھا وہ ایسا نہیں کہ اس پر صرف نواز شریف نے بات کی ہو، اس سے قبل ممبئی حملوں سے متعلق پرویز مشرف، سابق ڈی جی آئی ایس آئی جنرل ریٹائرڈ پاشا، عمران خان اور رحمان ملک نے بھی باتیں کیں۔ وزیراعظم نے ایوان میں موجود اپوزیشن رہنمائوں کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ اگر یہ اسے سیاسی مقاصد کے لیے استعمال کرنا چاہتے ہیں تو کریں، اس سے ملک کے مفاد کو نقصان ہی پہنچے گا فائدہ نہیں ہوگا

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *