ادب نامہ    ( صفحہ نمبر 95 )

ہماری بہشت ہمارا خد اہے

کیا بد بخت انسان ہے جس کو اب تک یہ پتا نہیں کہ اس کا ایک خدا ہے۔۔۔ ہماری بہشت ہمارا خدا ہے۔وہ لذتیں جن میں تم خوشی محسوس کرتے ہو ، ان کے ذریعے ہم خدا کو محسوس کرتے←  مزید پڑھیے

رمضان کی تیاری

خواب میں پچھلی صدی کے ایک آدمی سے ملاقات ہوئی۔ گفتگو کا سلسلہ جس طرح آگے بڑھ رہا تھا اس کے زمانے کے بارے میں جاننے کا تجس بامِ عروج کو چھو رہا تھا۔ میں نے پوچھا رمضان آنے والا←  مزید پڑھیے

تتھاگت نظم (20)…..سلسلہ سوالوں کا

پیش لفظ کہا بدھ نے خود سے : مجھ کو۔ دن رہتے، شام پڑتے، سورج چھپتے، گاؤں گاؤں یاترا، ویاکھیان، اور آگے ، اور آگے۔ بھارت دیش بہت بڑا ہے، جیون بہت چھوٹا ہے، لیکن اگر ایک ہزار گاؤں میں←  مزید پڑھیے

گگن کنارے اُجڑی شام

آپ کے ہاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نرس نے فقرہ ادھورا چھوڑا،اور چہر ے پر عجیب و غریب سے تاثرات لیے زچہ بچہ سنٹر کے چھوٹے سے گھٹن زدہ کمرے سے باہر چلی گئی۔۔۔۔۔ رفعت کی آنکھوں سے بہتا سیال مزید گاڑھا ہو گیا۔۔۔۔۔باہر←  مزید پڑھیے

ذرا نم ہو تو۔۔۔۔۔۔

(ایک سچا واقعہ ہونے کے باعث کرداروں اور علاقوں کے نام فرضی ہیں ) پختونخوا کے ایک گاؤں میں اپریل کی اک چمکدار صبح وہ جلدی اٹھا ناشتہ کے بعد تیار ہوا اور سائیکل اٹھا کر باہر کی جانب لپکا،←  مزید پڑھیے

باچا خان کی سرزمین کا نوحہ

مجھے تو اپنوں نے لوٹا غیروں میں کہاں دم تھا میری کشتی وہاں ڈوبی جہاں پانی بہت کم تھا باچا خان کی عدم تشدد کی فکر کا آسرا تھا اور اُسی مرد بے ریا کی سرزمین کے باسیوں نے ہمارا←  مزید پڑھیے

چاچا منصب

درجہ چہارم کے طالب علم تھے ہم ان دنوں، جب ہمارے ساتھ ایک حضرت امیر داد صاحب پڑھتے تھے- قضائے الہٰی سے ان کا گھرسکول کی دیواروں سے جڑا ہوا تھا -اکثر و بیشتر ہماری تشریفیں اساتذہ کی مار سے←  مزید پڑھیے

کون پارسا کون فاحشہ؟

اس نے دعوت دی، میں نے قبول کی ، وہ داعی ہو کے پارسا۔۔ میں مدعو ۔۔پھر بھی فاحشہ، جسم میرا ہی تھا، آنکھ تیری تھی ظالم، تو ناظر رہا اور پارسا، میں حاضر ہوئی ۔۔۔سو فاحشہ! محفل سجائی تو←  مزید پڑھیے

گمشدہ کتاب

نوٹ! مورخہ گیارہ مئی وزیرستان کے گمنام ترقی پسند شاعر، ادیب اور سیاست دان عارف محسود صاحب کی برسی تھی۔ میں موصوف کے ساتھ دورانِ زندگی اور بعد ازمرگ بے وفائیوں کا تذکرہ کرونگا۔ کروں نہ یاد، مگر کس طرح←  مزید پڑھیے

سابر متی کے دیس میں ،ایک دن

(عمران عاکف خان) ابتدا۔۔۔ “لوک سیواسنگھ”،احمد آباد ۔ہندوستان میں پائی جانے والی این جی اوز کی طرح ایک این جی او ہی ہے مگر اس کی خصوصیت اور امتیاز یہ ہے کہ اس کے اہداف میں اردو زبان وادب،اسلوب وبیان،فکرو←  مزید پڑھیے

قصہ حسرت

(حسن درانی) میں نے چالیس سال پہلے فتح گنج چھوڑا تو گمان میں بھی نہ تھا کہ واپس نہ آ سکوں گا۔فتح گنج لکھنو سے20 پتھر باہر ایک دیہی قصبہ ہے اوریہی وہ جگہ تھی جہاںمیں پیداہوا ۔ میرا آبائی←  مزید پڑھیے

انسانیت

۔۔۔۔۔۔۔ “انسانیت” ۔۔۔۔۔۔۔ ایک بہت خوبصورت موضوع پر چند الفاظ میں اظہار خیال حاضر خدمت ہیں۔ امید ہے کہ احباب پسند فرمائیں گے ۔ خیر اندیش: ایم اکرام الحق انسانیت کا سب سے بڑا اعزاز یہ ہے کہ اللہ کریم←  مزید پڑھیے

بے مہارے

ہم لوگ کتنے سادہ ہیں، ڈر اور خوف کی فاضل حد کے اندر بنی ہوئی پگڈنڈی پر ہی قدم اٹھاتے ہیں۔ کم از کم میرے نزدیک تو عام آدمی کی سمت حیات حلوے کی تھالی میں انگلی سے کھینچی ہوئی←  مزید پڑھیے

ادبی بیٹھک اور لاہوری ناشتہ

اتوار کے روز UMT یونیورسٹی لاہور میں ادبی بیٹھک کا انعقاد ہوا، جس میں پاکستان کے جانے پہچانے صحافی وسعت اللہ خان اور سندھ اکادمی بورڈ کے سابق ڈائریکٹر آغا نور محمد پٹھان دونوں نے بطور مہمان خصوصی شرکت کی۔←  مزید پڑھیے

تتھاگت نظم 19۔۔۔انگلی مالا (2)

انگلی مالا(ا )میں اس ڈاکو کو کہانی بیان کی جا چکی ہے، جو جنگل میں لوگوں کو لوٹ کر ان کی انگلیاں کاٹ لیتا تھا اور پھر انہیں ایک ہار میں پرو کر اپنے گلے میں پہن لیتا تھا۔ تتھا←  مزید پڑھیے

بچپن کے پنگے اور نوجوانی کے دنگے ـ (قسط 3)

ایک دن چھٹی کے بعد ہم سکول سے گھر آ رہے تھے کیا دیکھتے ہیں کہ آسمان سے کاغذ کے چکور ٹکڑے برس رہے ہیں۔ اوپر دیکھا تو ایک فوکر نما طیارہ یوں کاغذ برسا رہا تھا جیسے شادی کے←  مزید پڑھیے

دو نسلوں کا اختلاف

میرے ایک دوست نے مجھے ایک کہانی سنائی کہ ایک لڑکی ہوتی ہے ناول نگاراور ڈرامہ نگار ، جو نئی نسل سے تعلق رکھتی ہے اور اس کے ابو جان ڈاکٹر ہوتے ہیں جو پرانی نسل یا اولڈ جنریشن سے←  مزید پڑھیے

امی جان کے نام ایک خط ( ہپی مدڑز ڈے)

پیاری امی جان مجھے یاد ہے آپ بتاتی تھیں کہ جب آپ کراچی سے لاہور بیاہ کر آئیں تو آپ نانی اماں کو کتنے خط لکھا کرتی تھیں ۔ اور فون پر بات کرنے کے لئے جو اس زمانے میں←  مزید پڑھیے

دم توڑتی علمی روایات

اب تو خیر زمانہ ہی بدل گیا ہے، گھر کے سودے میں سے پیسے بچا کر نیٹ پیکیج کرانے والے بچے فیس بک پر دانشور لگے ہوئے ہیں ۔ البتہ دو تین دہائیاں پہلے ایسا قحط الرجال نہیں تھا۔ پاک←  مزید پڑھیے

وحدت الوجود(اناالحق کی توجیہ)

بحیثیت مسلمان ہم سب کا خدا کی ذات پر کامل یقین ہے.توحید کا جوکامل تصور اسلام میں ہے شاید ہی دنیا کے کسی اور مذہب میں ہو.اسلام کی بنیاد توحید پر قائم ہے.توحید کے راستے سے ہٹنا صریحاًگمراہی اور ضلالت←  مزید پڑھیے