ادب نامہ    ( صفحہ نمبر 3 )

میر واہ کی راتیں (قسط2)۔۔۔ رفاقت حیات

یعقوب اس کے گھٹنے پر ہاتھ مار کر قہقہے میں لوٹنے لگا۔ ’’تم اب بچّے نہیں رہے۔ ماشا اللہ سمجھ دار ہو۔‘‘ باتوں کے دوران چائے والا آ گیا۔ نذیر نے پیالیوں میں چائے ڈالی۔ کاریگرچائے پی کر اُٹھا اور←  مزید پڑھیے

اپنی جلا وطنی کی موضوع پر ایک نظم۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

تاریخ کا اک باب ہوں، غرقاب ہوں پنجاب کے  پانچ دریاؤں کے نام اس جگہ ڈوبا تھا میں۔۔۔ ہاں، تین چوتھائی صدی پہلے یہیں ڈوبا تھا میں لہروں کے نیچے آنکھیں کھولے ایک ٹک تکتا ہوا میں آج بھی اس←  مزید پڑھیے

صحراؤں کو باغ بنایا جاسکتا ہے۔۔سلمیٰ سیّد

‏صحراؤں کو باغ بنایا جاسکتا ہے ان باغوں میں خواب اگایا جاسکتا ہے گلی میں چوڑی والے کی آواز لگا کر اُس کھڑکی پہ چاند بلایا جاسکتا ہے دل کی آگ سے آگ لگائی جاسکتی ہے اور پانی میں اشک←  مزید پڑھیے

ظاہری سکوٹر۔۔سلیم مرزا

بچوں کے شوق بھی عجیب ہیں۔ظاہر محمود نے فیس بک پہ اشتہار دیا کہ اسے ایک  سکوٹر کی ضرورت ہے ۔قیمت دس ہزار سے زیادہ نہ ہو،بزرگوں کے پاس سے عموماً کوئی نہ کوئی قدیم نسخہ ہوتا ہی ہے۔ ۔میرے←  مزید پڑھیے

ہجر کی شاخیں۔۔۔رمشا تبسم

ہجر کی شاخیں سسکیوں کے موسم میں اذیت کے پھول گرا رہی ہیں ذرد پڑتی وحشت اب ٹہنیوں سے جدا ہو رہی ہے رفتہ رفتہ سرد ہوائیں یادوں کو منجمند کر رہی ہیں شاخوں پر بیٹھے پنچھی خوفزدہ ہو کر←  مزید پڑھیے

گھٹن۔۔(قسط1)طہماس سعید

پس منظر! جنوبی ایشیائی ملک کے شمال میں واقع ایک شہر جو کہ انگریز دور کے کمشنر کے نام سے منسوب تھا میں مسلسل عجیب وغریب واقعات ہو رہے تھے ۔ شہر کے عین وسط میں واقع سو سال پرانی←  مزید پڑھیے

میر واہ کی راتیں (قسط1)۔۔۔ رفاقت حیات

آج کی رات اس کی بےکار زندگی کی گزشتہ تمام راتوں سے بےحد مختلف تھی، شاید اسی لیے نیند اس کی آنکھوں سے پھسل کر رات کے گھپ اندھیرے میں کہیں گم ہو گئی تھی، مگر وہ اسے تلاش کرنے←  مزید پڑھیے

استنبول!تجھے بُھلا نہ سکوں گا(سفرنامہ)۔۔۔قسط9/پروفیسر حکیم سید صابر علی

فیری کو چلے پندرہ منٹ گزرے ہوں گے،جب ایک صاحب گرم جیکٹ فروخت کرنے کے لیے لائے،اس کی ساری جیکٹیں پندرہ بیس منٹ میں فروخت ہوگئیں،جو چند بچ گئیں،وہ خاموشی سے آدھی قیمت پر فروخت کرکے فارغ ہوگئے۔ ایک صاحب←  مزید پڑھیے

استنبول!تجھے بُھلا نہ سکوں گا(سفرنامہ)۔۔۔قسط8/پروفیسر حکیم سید صابر علی

پرنس آئی لینڈ کی سیاحت ہوٹل میں قیام کے تیسرے روز پورا گروپ گائیڈ enderکی قیادت میں پرنس آئی لینڈ کے لیے روانہ ہوا،ایک گھنٹہ ڈرائیو کے بعد ہم لانچ تک پہنچے،موسم ابرآلود ہونے کی وجہ سے قدرے سرد تھا،راستے←  مزید پڑھیے

خواہش۔۔سلمیٰ سیّد

سب کے اندر ننھا بچہ ہوتا ہے اس کو زندہ رکھنا، سچا ہوتا ہے تنہائی جب آنکھ بھگونے لگتی ہے دل میں تیری یاد کا چرچہ ہوتا ہے اک دوجے پہ جان لٹانا لازم ہے ؟ کاروباری دل کا رشتہ←  مزید پڑھیے

حاشیوں کے سرخ ہونے کاقصہ۔۔اسرار احمد شاکر

کسی بھی نثر پارے کا درست ادراک، تخلیق کار کی شخصیت، اس کے نظریہ فن، اس کی سوچ اور فکر کو جانے بغیر اگر ناممکن نہیں تو مشکل ضرور ہے، کہ ہر تخلیق اپنے فن کار کی شخصیت کا پرتو←  مزید پڑھیے

ہم غزل گو ۔۔ واقعی زندہ ہیں کیا؟۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

روح تھی شاعر کی مجھ میں اور میں سُکڑا ہوا، سِمٹا ہوا، اک جسم میں محبوس تھا، جو اغلباً اک مے گسار و شکوہ سنج و نالہ کش کے واسطے پیدا ہوا تھا شعر کہنے کی صلاحیت تو مالک سے←  مزید پڑھیے

عشق منجدھار:انیلا رزاق/تبصرہ محسن علی

انیلا رزاق بنیادی طور پر ایک شاعرہ ہیں،لیکن اُن کی پہلی کتاب یہی ناول ہے،جو اُردو ادب میں ایک اچھا اضافہ ثابت ہوگا ۔۔ اس ناول کے نام سے ظاہر ہے یہ ایک عشق کی کہانی ہے ۔مصنفہ  نے اس←  مزید پڑھیے

احساس۔۔سلمیٰ سیّد

فضاء میں تیرتی ٹھنڈک ہوا میں ناچتی بارش نے میری نیند توڑی تھی گئے برسوں کی چاہت روح کے اطراف بکھری تھی کسی کے لمس کی خواہش بدن میں جاگ اٹھی تھی محبت ہی محبت بس رگوں میں رقص کرتی←  مزید پڑھیے

سفر نامہ: شام امن سے جنگ تک/سلمیٰ اعوان۔قسط37

غریب کے خوابوں نے بُنیں کہانیاں اپنی ہی خاک و خون میں لُتھڑی کہانیاں شعلوں میں جلیں راکھ ہوئیں کہانیاں ظالم ہوائیں اڑاتی پھریں کہانیاں کہاں غلطی ہوئی۔کِس گناہ کی سزا ملی۔ہمارے اہداف میں تو کہیں کھوٹ نہ تھا۔مخلص تھے←  مزید پڑھیے

ڈاکٹرخالدسہیل کی کتاب انسانی شعورکا ارتقاء (تعارف اور تاثرات/دوسری،آخری قسط)۔۔۔۔عبدالستار

آٹھواں باب بعنوان ”روحانی تجربات۔۔۔سائنس اور نفسیات کے آئینوں میں“اس باب میں ڈاکٹر سہیل روحانی تجربات کے حوالوں سے بطور ماہر نفسیات اور سائنس کا طالب علم ہونے کے ناطے سے اپنے موقف کا اظہار کرتے ہیں۔پہلے وقتوں میں یہ←  مزید پڑھیے

دوصد صفحا ت پر مشتمل انٹرویو سے ایک اقتباس(حصہ اوّل)۔۔۔۔شرکا۔ ضیاء مرحوم اور ستیہ پال آنند

ضیاء :غزل رسم تو نہیں کہ مٹائی جا سکے ، اگر یہ’’ تخلیقی تاریخ‘‘ کا درجہ حاصل کر چکی ہے تو اس کی مادر زاد ’’عصمت ‘‘ کو برقرار رہنا چایئے ۔ آنند: کون کمبخت کہتا ہے کہ غزل کو←  مزید پڑھیے

استنبول!تجھے بُھلا نہ سکوں گا(سفرنامہ)۔۔۔قسط7/پروفیسر حکیم سید صابر علی

ایا صوفیہ میوزیم نماز، ظہر کے بعد ایک ریسٹورنٹ میں دوپہر کا کھانا کھایا،تین بجے ایا صوفیہ عجائب گھر کے ٹکٹ گائیڈ نے خریدے،ٹکٹ گھر میں بہت زیادہ رش تھا،غیر ملکی سیاح جن میں زیادہ تر جاپانی،چینی اور دریائی علاقے←  مزید پڑھیے

خورشید بہ روزنے در افتاد و برفت۔۔۔عاطف ملک

بوڑھے کوہستانی نے دور سامنے نظر آتے پہاڑوں پر نظر ڈالی۔ اس کے ہونٹوں پر مسکراہٹ تھی۔ دور پہاڑ جن کی چوٹیاں گرمیوں میں لکیر دار ہوجاتی ہیں، دھوپ جہاں جیت جائے وہاں برف پگھل جاتی ہے، پانی کی لکیر←  مزید پڑھیے

برج نرائن چکبست کے مشہورشعر کا تجزیہ سائنس کی رو شنی میں۔۔۔محمد عادل

زندگی کیا ہے عناصر میں ظہورِ ترتیب موت کیا ہے انہی  اجزاءکا پریشاں ہونا برج نرائن چکبست کا شمار اردو کے بڑے شعراءمیں کیا جاتا ہے۔چکبست جس دور میں شاعری کر رہے تھے وہ شاعری کے عروج کا دور تھا←  مزید پڑھیے