ادب نامہ    ( صفحہ نمبر 2 )

حسن اور فن (فلم اداکارہ محترمہ ریما خان کی نذر )۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

کردار ایک : حسن تابندہ ہےروشن ہے ، ستارہ ہے کہ جو خود بھی روشن ہے ، جہاں کو بھی خیرہ کرتا ہے حسن سادہ ہو کہ ہو وضع میں تزئین آرا حسن تو حسن ہے، اس کا کوئی ثانی←  مزید پڑھیے

قربِ عید اور موت (اک خواب، اک فسانہ)۔۔ شاہد محمود

وادئِ نگر کا رحیم بخش پچاسی برس کی عمر میں اپنے خوبانی کے باغ میں اپنے سب سے چھوٹے بیٹے رحمت اور وادی کے چند لوگوں کے ساتھ بیٹھا گفتگو میں مصروف تھا۔ رحیم بخش عمر میں بوڑھا لیکن ہمت←  مزید پڑھیے

کرچی کرچی وجود(مائکرو فکشن)۔۔احمد نعیم

صدیوں سے بل کھاتی، سر پٹکتی شور برپا کرتی، موجوں نے بے شمار سر اٹھاے ٹیلوں کو مسمار کرتے اپنی آوارہ دھن میں بہتے ہوئے نامعلوم کی طرف سفر جاری رکھا، موجوں کے اس ہجوم سے اک قطرے اپنی الگ←  مزید پڑھیے

مرزا غالب کے ایک شعرکی منظوم عقدہ کشائی اور کچھ اعتراضات۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

اسدؔ کو بت پرستی سے غرض درد آشنائی ہے نہاں ہیں نالۂ ناقوس میں، در پردہ ’یا رب‘ ہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ “قوافی ’رّب‘ و ’تب‘، ’مطلب‘، ردیف اک صوت، یعنی “ہا‘ ؑعجب حلیہ ہے اس حلقوم مقطع کا کہ ’یا رب‘←  مزید پڑھیے

ننھے فرشتے۔۔بنت الہدی

تم نے خدائے لم یزل کی نافرمانی کی ہے۔ جاؤ  اپنی زمین پر پلٹ جاؤ۔۔ اے ننھے فرشتوں خدا نے تمہیں سیارہ زمین کی جانب بھیجا تھا۔۔۔ اور تم چند ساعت میں ہی وہاں سے فرار ہو کر  اس نئی←  مزید پڑھیے

لاک ڈاؤن کے دنوں کی محبت ۔۔ڈاکٹر حبیب الرحمن

کہنے لگی کورونا سے پہلے بھی میری محبت ہجر کے رنگوں سے رنگی ہوئی تھی۔۔۔ ہجر کے بھی رنگ ہوتے ہیں بھلا۔۔۔۔میں اس کے ماتھے کو چومتی ہوئی لٹ کو دیکھتے ہوئے بولا ہوتے ہیں۔وہ اپنا ہاتھ ٹھوڑی کے نیچے←  مزید پڑھیے

کسے خبر پس دیوار کیا گزرتی ہے(وصی بختیاری کے نام مکتوب)۔۔علامہ اعجاز فرخ

نورِ چشم وصی بختیاری سلمہ! خدا سلامت رکھے، بلاؤں سے محفوظ رکھے۔ جونوشتہ جاں تم نے نوشتہ دیوار کر دیے، ان پر احباب کے تبصرے پڑھ کر آنکھ بھر آئی۔ کچھ یوں کہ اس دہرِ ناسپاس اور کوچہ کم نگراں←  مزید پڑھیے

بیمہ زندگی کا۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

A ROGUE POEM گذشتہ صدی کے سن ستّر کی دہائی میں دو برسوں کے لیے میں برطانیہ میں مقیم تھا، اس وقت لنڈن کی گلی کوچوں میں بولی جانے والی زبانCockney Rogue Poemکا دور دورہ تھا. اس دوران میں کے←  مزید پڑھیے

ابلیس کی مجلسِ شوریٰ(دوسری ،آخری قسط) ۔۔۔تشریح: محمد عماد عاشق

پانچواں مشیر (ابلیس کو مخاطب کرکے) اے ترے سوزِ نفس سے کارِ عالم استوار تو نے جب چاہا کیا ہر پردگی کو آشکار آب و گل تیری حرارت سے جہانِ سوز و ساز ابلہِ جنت تری تعلیم سے دانائے کار←  مزید پڑھیے

الناس علیٰ دین ملوکبم۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

الناس علیٰ دین ملوکبم (رعایا بادشاہوں کے دکھائے ہوئے راستے پر چلتی ہے ) (ایک فینٹسی) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ موسلا دھار ہے برفاب کی بوچھاڑ، مگر گرتے پڑتے ہوئے سب لوگ کہا ں جاتے ہیں؟ گرتے ہیں، اٹھتے ہیں، پھر گرتے ہیں←  مزید پڑھیے

آخری ملاقات۔۔مزمل مختار

آخری ملاقات آخری ملاقات کے بعد میں نے سماج سے کشید کردہ خواہشات کی الکوحل کے دور کا آخری جام پیا ‘ اور محبت کے تاکستانوں سے زندگی کی منڈی میں منتقل ہوگیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آخری ملاقات پر میں نے آخری←  مزید پڑھیے

ابلیس کی مجلسِ شوریٰ(حصہ اوّل) ۔۔۔تشریح: محمد عماد عاشق

نظم کا تعارف: یہ شہرہ آفاق نظم اقبال کی آخری کتاب ”ارمغان حجاز ” کے حصہ اردو کی پہلی نظم ہے۔ بقول پروفیسر یوسف سلیم چشتی صاحب، یہ نظم علامہ مرحوم کے تیس سالہ پیغام کا لبِ لباب ہے، کہ←  مزید پڑھیے

کون و فساد و بودنی نابودنی۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

مبر گمان تو ا ورد یقیں شناس کہ دزد متاع من ز نہاں خانہٗ ازل بر دست (غالبؔ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کون و فساد و بودنی نابودنی ہے تو وہ شاعر یقیناً ساری اصناف ِ سخن املاک میں شامل ہیں اس کی←  مزید پڑھیے

گھروندا ریت کا(قسط9)۔۔۔سلمیٰ اعوان

یہ پابندیوں اور روک ٹوک سے آزاد ایک خودمختار سی زندگی تھی جو ماضی میں بہرحال اُسے حاصل نہ تھی۔ وہ خواہشیں اور آرزوئیں جو ہمیشہ سینے میں مچلتی رہتی تھیں۔ اُنہیں وہ اِس اجنبی سرزمین پر بُہت شان سے←  مزید پڑھیے

کیڑا۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

(خواب میں خلق ہوئی ایک نظم) اپنے اندر اس طرح داخل ہوا وہ جیسے رستہ جانتا ہو جیسے اس بھورے خلا کی ساری پرتوں کو کئی صدیوں سے وہ پہچانتا ہو اپنے اندر دور تک جانے کی کیا جلدی ہے←  مزید پڑھیے

بھولی بھالی نظمیں۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

فون پر ڈاکٹر وزیر آغا (مرحوم) سے لگ بھگ روزانہ ہی بات ہوا کرتی تھی گزشتہ صدی کے آخری برسوں میں کوئی نہ کوئی مسئلہ زیر بحث آ جاتا جس کا نپٹارا کئی دنوں کی بات چیت کے بعد ممکن←  مزید پڑھیے

قومی اثاثہ ۔۔مصنف (عربی): اسامہ العمر /مترجم : جنید جاذب

چھت کی الماری سے میں نے بڑا سا وہ بیگ نیچے اتارا جو دادا سے مجھے ورثے میں ملا تھا۔یہ اتنا روشن اور رنگیں تھا گویا دھنک  کا کوئی دریا اس سےپھوٹ رہا ہو۔میں نے اسے کاندھے پر اٹھایا اور←  مزید پڑھیے

مرد۔۔گُل رحمٰن

مرد تو کون ہے ؟ اے مرد آخر تو کون ہے ؟ ابن صفی مرد مومن بندہ پرور نور خدا پیغمبر و انبیا یا پھر وہ جو دکھتا ہے۔۔ کرّہ عرض پہ چھایا زمیں پہ چلتا پھرتا انسان یا پھر←  مزید پڑھیے

ـستیہ پال ٓآنند کی ساٹھ نظمیں۔۔۔ڈاکٹر فاطمہ حسن

“ستیہ پال کی ساٹھ نظمیں “کچھ برس پہلے ڈاکٹر آصف فرخی کے ادارے ( کراچی) سے سے شائع ہوئی تھی۔ یہ نظمیں ڈاکٹر فاطمہ حسن نے منتخب کی تھیں۔اُن کا تحریر کردہ دیباچہ واقعی ایک ایسی اہم تحریر ہے، جسے←  مزید پڑھیے

گھروندا ریت کا(قسط8)۔۔۔سلمیٰ اعوان

موسم تو ستم ڈھانے پر اُترا ہوا تھا۔ اِس شاندار کالج کے لمبے چوڑ ے سرسبزوشاداب ہرسُو طراوت اور تازگی کافرحت آگیں احساس بخشتے لان و موسم کے حُسن اور رعنائی کو اور قاتل بنارہے تھے۔ پچھمی ہوائیں سرو کے←  مزید پڑھیے