صائمہ نسیم بانو کی تحاریر
صائمہ نسیم بانو
صائمہ نسیم بانو
صائمہ بانو انسان دوستی پہ یقین رکھتی ہیں اور ادب کو انسان دوستی کے پرچار کا ذریعہ مان کر قلم چلاتی ہیں

اونر کلنگ یا کلنگ اونر؟۔۔۔۔۔صائمہ نسیم بانو

یہ تحریر میں نے تین برس پہلے لکھی تھی اسے لکھنے کا مقصد یہ نہیں تھا کہ قندیل کے کسی فعل کو جسٹیفائی کیا جائے بلکہ نیت یہ تھی کہ یہ جانا جائے کہ قندیل جیسی ونریبل اور اوور ایمبشئیس←  مزید پڑھیے

بینا گوئندی جی ،جنم دن کی ڈھیروں مبارکباد۔۔۔۔۔صائمہ نسیم بانو

3 جولائی 1967 کو پنجاب کے ایک شہر سرگودھا کے ایک تعلیم یافتہ گھرانے میں ایک بچی نے جنم لیا۔ والدین نے ان کا نام روبینہ نازلی گوئندی رکھا لیکن برِ صغیر کے مشہور افسانہ نگار اور ادیب اشفاق احمد←  مزید پڑھیے

اے غریب الدیار، ابن سبیل کون ہے تو؟(مکالماتی تمثیلچہ)۔۔۔۔صائمہ نسیم بانو

اے غریب الدیار، ابن سبیل کون ہے تو؟ اے میرے ہم جلیس، رفیقِ کنج تنہائی! میں ایک راہرو ہوں، حالتِ مسافرت میں ہوں اور راہ بھول بیٹھا ہوں. تیری پوشاک پر یہ دھبے کیسے ہیں؟ راہ بھول بیٹھا تھا، راستی←  مزید پڑھیے

تھپڑ سے نہیں ڈرتی صاحب! آئرن ڈیفیشنسی سے ڈر لگتا ہے۔۔۔صائمہ نسیم با نو

انعام رانا بھائی کی ایک پوسٹ میں سوال لکھا دیکھا کہ “تھپڑ کی سائنس کیا ہے؟” تھپڑ کی سائنس جاننے کے لئے ہم نے اپنے غیر سائنسی دماغ سے کچھ ریزننگ کی تو مندرجہ ذیل نتائج موصول ہوئے. تھپڑ ایک←  مزید پڑھیے

مریم کی سوچ زار۔۔۔۔صائمہ نسیم بانو

سوچ زار, ستائیس مختصر افسانوں میں سانس لیتی ایک ایسی کتاب ہے جو سجاد حیدر یلدرم کی رومانیت اور پریم چند جیسے ترقی پسند افسانہ نگار کی مقصدیت کے بین بین اپنی شناخت بناتی ہے. اس کتاب کی مصنفہ مریم←  مزید پڑھیے

بانو کا تیسرا ادب نامہ۔۔طبیبِ مہرباں،دانائے راز۔۔۔

۲۴ مئی ۲۰۱۹ طبیبِ مہرباں، دانائے راز محترم جناب خالد سہیل صاحب آداب! جناب جوش نے پیرِ اشتراکیت کارل مارکس کو دانائے راز اور حکیمِ نو کا خطاب دیا تھا, آج بانو بھی آپ کو ویسے ہی احترام سے پکار←  مزید پڑھیے

سنو اک کام کرتے ہیں ۔۔۔۔۔بانو بی

سنو! اک کام کرتے ہیں گلوں میں رنگ بھرتے ہیں ذرا یہ کیمرہ تو لو اور اک تصویر اب کھینچو گلوں میں گل, گلِ احمر ہاں اس کے سب ہی چنچل رنگ ذرا تم قید تو کر لو نگہ میں←  مزید پڑھیے

who Should Be KING۔۔۔۔صائمہ نسیم بانو

کچھ روز قبل, ایک ساتھی بلاگر نے جناب انتظار حسین صاحب کی کتاب “سنگھاسن بتیسی” پر ایک مضمون لکھا- مضمون کا لکھنا ہی تھا کہ نام نہاد بڑے لکھاریوں اور نقادوں کی جانب سے آتش فشانی و شعلہ بیانی کا←  مزید پڑھیے

پیارے ڈیڈی! ۔۔۔ صائمہ نسیم بانو

“زاویہ” پڑھ رکھی ہیں؟ آپی کے اس سوال پر میں چونک گئی ان کو بہت اچھے سے علم ہے کہ میں نے کیا کیا پڑھ رکھا ہے، کیا کیا پڑھتی ہوں، پھر اس سوال کا کیا۔  مقصد؟ میری آنکھوں میں←  مزید پڑھیے

احمد بشیر کی کہانیاں (۲) ۔۔۔ مدون: صائمہ نسیم بانو

جموں والی سردار بیگم کی کہانی (۲)   اس خیال سے میرے جسم میں طاقت آگئی بچی کو میں نے سینے سے لگایا اور لڑکھڑاتی ہوئی, لاشوں کو پھلانگتی ہوئی آہستہ آہستہ ریلوے لائن کی طرف بڑھی. ریلوے لائن کے←  مزید پڑھیے

احمد بشیر کی کہانیاں (۱)۔۔۔ مدون : صائمہ نسیم بانو

احمد بشیر ایک حساس انسان, باشعور فرد, زیرک دانشمند اور کمال لکھاری ہی نہیں بلکہ ایک سچے, آزاد, نڈر, بیباک اور دلیر صحافی بھی تھے. ایسے لوگ اب نایاب ہی نہیں بلکہ ناپید ہو چلے ہیں…… احمد بشیر اسطوروں میں←  مزید پڑھیے