saeed cheema کی تحاریر

اور وہ قتل کر دی گئی ۔۔سعید چیمہ

رات کا تیسرا پہر  شروع ہو چکا تھا  جب پستول سے ہونے والے دو فائروں نے فضا میں قبرستان کا سکوت توڑا، گھر میں ثلاثہ اشجار پر رات بسر کرتے ہوئے پرندوں نے فائرنگ  کی آواز سن کر اڑان بھر←  مزید پڑھیے

محمد بن قاسم۔۔سعید چیمہ

کیا محمد بن قاسم حقیقت میں مظلوم عورت کی مدد کے لیے آیا تھا؟ مالک بن دینار بیان کرتے ہیں جب حجاج بن یوسف کا انتقال ہوا تو اس کے قید خانے میں تیس ہزار مرد اور بیس ہزار عورتیں←  مزید پڑھیے

سنبھل جاؤ۔۔سعید چیمہ

تعلیم رسوا ہوئی اور سرِ بازار ہوئی، رسوا کرنے والے بھی اعلیٰ تعلیم یافتہ تھے، رسوائی ایسی تھی کہ جاہلِ مطلق بھی شرما گئے، شاعر نے شاید سچ کہا تھا، ورنہ تو اکثر دروغ گوئی ہوتی ہے۔ تہذیب سکھاتی ہے←  مزید پڑھیے

ازار بند سے بندھی سوچ۔۔سعید چیمہ

بینائی جب اُچک لی جائے، عقل جب سلب کر لی جائے، کانوں پر جب پردہ پڑ جائے، دلوں پر جب مہر لگ جائے تو حق کب واضح ہوتا ہے، تعصبات کی چکی میں انسان پھر پِستا رہتا ہے گیہوں کی←  مزید پڑھیے

اس حمام میں۔۔۔سعید چیمہ

غالب یاد آئے، شہرہ آفاق شاعر، ایک عرصے تک زمانہ جن کے سحر میں مبتلا رہا، اور اب بھی ہے نکلنا خلد سے آدم کا سنتے آئے ہیں لیکن بہت بے آبرو ہو کر تیرے کوچے سے ہم نکلے حکومت←  مزید پڑھیے

آہ! مولانا وحیدالدین۔۔سعید چیمہ

کچھ سگِ آزاد ہیں جو ہر تعزیت کے موقع پر باز نہیں آتے، جو جبلت سے مجبور ہیں، دکھ اتنا ہے کہ بیان سے باہر ہے، آنکھوں سے برسات ہوئی جاتی ہے، مولانا وحید الدین خان انتقال فرما گئے، تعصب←  مزید پڑھیے

غامدی کے نام                       ۔۔سعید چیمہ

لاچاری و بے بسی کے دشتِ بے کراں میں سفر جب طول پکڑ جائےتو فطرتاً چشم کسی سہارے کی طرف اٹھتے ہیں، سہارا تو الفاظ کا بھی بہت ہووے ہے اور الفاظ  کے مرجان کو افتخار عارف اگر شعر کی←  مزید پڑھیے

نوحہ کیسے کہوں؟۔۔سعید چیمہ

یادداشت کے توشہ خانہ پر دستک دینے سے دروازہ اگر صحیح سمت میں وا ہو رہا ہے تو شاید رحمان فارس نے کہا تھا کہ جب خزاں آئے تو پتے نہ ثمر بچتا ہے خالی جھولی لیے ویران شجر بچتا←  مزید پڑھیے

بے حیائی اور ذہنی پسماندگی۔۔سعید چیمہ

زوال کا دیو جب کسی قوم کے آنگن میں اترتا  ہے تو سب سے پہلے ان کی ذہنی قوت سلب کر تا ہے، ذہنی پسماندگی جب قوموں کی شروع ہو جائے تو یہ دیو مستقل طور پر ان کے ہاں←  مزید پڑھیے

خدا گم نہیں ہوا۔۔سعید چیمہ

خدا تعالیٰ اپنے منصوبے کو عملی جامہ پہنانے کے لیے اسباب پیدا فرما چکے ہیں، زمین و آسمان کی پیدائش مکمل ہو چکی ہے، آسمان میں ستارے سجا دئیے گئے ہیں، زمین کو پہاڑوں کی مدد سے ٹھہرا دیا گیا←  مزید پڑھیے

کسان نے ماں کیوں بیچی؟۔۔سعید چیمہ

لیکن رحمتے تُو تو جانتی ہے کہ وہ زمین پُرکھوں کی نشانی ہے، میں اسے کیسے بیچ سکتا ہوں، اور یہ سبق خون کی طرح پُشتوں سے ہماری رگوں میں گردش کر رہا ہے کہ زمین تو ماں ہوتی ہے←  مزید پڑھیے

شکر کیجیے کہ صرف آموں کے درخت کٹے۔۔سعید چیمہ

چیونٹی کو ہاتھی بنانا تو کوئی ہم سے سیکھے، اب دیکھ  لیجیے کہ خوامخواہ درختوں کے کٹنے پر واویلا مچا  رہے ہیں، اس سوشل میڈیا  کا بھی بیڑا غرق ہو جس کو دیکھو آم کے درخت کٹنے پر کلبلا رہا←  مزید پڑھیے

جولی کا فسانہ(2)۔۔سعید چیمہ

شام کا وقت ہونے کی وجہ سے رش قدرے زیادہ تھا لیکن اس کے باوجود بھی تانگہ آدھے گھنٹے میں مطلوبہ پتے پر یعنی شاہدرہ  پہنچ گیا، صدیق نے تانگے سے اترتے ہی پندرہ روپے تانگے والے کو تھمائے اور←  مزید پڑھیے

جولی کا فسانہ(1)۔۔سعید چیمہ

لیکن چودھری صدیق وہ تیری نرینہ اولاد ہے، کیا تجھے یاد نہیں کہ تو نے اس کی پیدائش پر کیسی خوشیاں منائی تھیں، کیا یہ بھی تو بھول گیا کہ کتنی مَنتوں اور دعاؤں کے بعد ہمیں اولاد کی خوشی←  مزید پڑھیے

موٹیویشنل سپیکرز پر تنقید۔۔سعید چیمہ

چند دن قبل ایک کثیر الجثہ کالم نگار نے تحریر فرمایا تھا کہ آج کل ہمارے ہاں سوشل میڈیا پر موٹیویشنل اسپیکرز کو خوامخواہ تنقید کا نشانہ بنایا جاتا ہے، اس تحریر میں گویا موصوف خون کے آنسو رو رہے←  مزید پڑھیے

ایم ٹی جے یعنی مولانا طارق جمیل۔۔سعید چیمہ

ارشاد ہوا کہ “اے نبی! آپ کے اردگرد بتہیرے منافق ہیں جنہیں آپ نہیں جانتے، مگر ہم جانتے ہیں”، سورہ توبہ کی یہ آیت کیا ان بقراطوں کے لیے کافی نہیں جو آئے دن لوگوں کے منافق ہونے کا فیصلہ←  مزید پڑھیے

زلزلے کیوں آتے ہیں؟۔۔سعید چیمہ

اس شخص کی برگزیدگی لاریب ہے جس کو خدا تعالیٰ اپنا دوست کہہ دیں، سیدنا ابراہیم کی عظمت تین ادیان میں مسلمہ ہے، یہودیت، عیسائیت اور اسلام۔ نوعِ انسانی کے صبر کو اگر سیدنا ابراہیم کے صبر کے ساتھ تولا←  مزید پڑھیے

موسم، جلسہ اور کورونا۔۔سعید چیمہ

موسم بھی اب تو شدید ہونے لگا ہے، جسم و روح پر ٹوٹنے والی مصیبتوں میں ایک اور افتاد کا اضافہ ہو گیا ہے۔ سردی کا موسم ہمیشہ سے ہی درویش کے جسم پر بھاری گزرتا ہے، امام الہند یعنی←  مزید پڑھیے

سنے کون قصہ دردِ دل۔۔سعید چیمہ

تخیل کی وادیاں جن کی شادابی و بہار پر بہت ناز تھا وہ اب قحط کا شکار ہو کر روبہ زوال ہیں۔ الفاظ کا ذخیرہ پرانے وقتوں میں اناج کی طرح ختم ہوا چاہتا ہے۔ ہاں البتہ اگر کتابوں کی←  مزید پڑھیے

مولانا رضوی کا سفرِ عالمِ بالا۔۔سعید چیمہ

مولانا رضوی کا سفرِ عالمِ بالا دل کے عشرتکدے پر اب ویرانی کے آثار ظاہر ہوں گے، ویرانی بھی ایسی کہ الو بولیں گے، گلستاں کے پیڑوں کی شاخوں پر سبز پتے زرد ہو کر زمین پر گرتے ہوئے عجب←  مزید پڑھیے