مشرف عالم ذوقی کی تحاریر

وہ راسپو تین تھا( ناول صحرائے لا یعنی سے )۔۔مشرف عالم ذوقی

دروازے کے پاس مٹیوں کا ایک ملبہ پڑا ہے۔ میں اندر داخل ہوتاہوں تو جابجا مکڑیوں کے جالے نظر آتے ہیں — اور اندر جاتا ہوں تو مجھے وہ چائے خانہ نظر آتا ہے جہاں پرنے زمانے کی کرسیوں پر←  مزید پڑھیے

مذاق ، زندگی اور ادب۔۔مشرف عالم ذوقی

زندگی وہ نہیں ہوتی ہے جسے دوسرے دیکھتے ہیں ۔ہماری اپنی زندگی ہمارے لئے بھی پیچیدہ ہوتی ہے ۔ اور بہت سے معاملات میں ہم زندگی کو سمجھتے ہوئے بھی مختلف گوشوں سے انجان رہتے ہیں ۔ اپنی زندگی کے←  مزید پڑھیے

مردہ خانے میں عورت (ناول/1)۔۔مشرف عالم ذوقی

یہاں کوئی ایسا نہیں جو یقین کے ساتھ یہ کہہ سکتا ہو کہ ہم زندہ ہیں ۔۔۔۔ مارشہوت را بکش در ابتدا ورنہ اینک گشت مارت اژدہا (خواہش کے سانپ کو ابتدا میں ہی ماردو ورنہ دیر ہونے پر ازدہا←  مزید پڑھیے

ادبی فائل/باقی ہے نام ساقیا تیرا تحیرات میں ( صلاح الدین پرویز کی یاد میں )(دوسری قسط،الف)۔۔۔مشرف عالم ذوقی

اساطیری کہانیوں جیسا ایک ناقابل فراموش کردار ۷۲ اکتوبر دو ہزار گیارہ ،گہرا سناٹا ہے اور گہرے سناٹے میں اکتارے کی دھن گونج رہی ہے— ایک ننھا منا شہزادہ ہے، جس نے اس وقت میری خلوت گاہ، میری تنہائیوں کو←  مزید پڑھیے

ادبی فائل/دوزخی(پہلی قسط،ب)۔۔۔مشرف عالم ذوقی

ذہن کے پردے پر جھلملاتی ہوئی ہزاروں کہانیاں روشن ہیں۔ میں انہیں لکھنا بھی چاہتا ہوں مگر دل بوجھل اور الفاظ گم۔ وہ اکثر کہا کرتے تھے۔۔۔۔ تم مجھے نہیں لکھ پاؤ گے ذوقی۔۔۔۔ اورمیں محسوس کرتا ہوں، راجندر یادو←  مزید پڑھیے

ادبی فائل/دوزخی(پہلی قسط،الف)۔۔۔مشرف عالم ذوقی

’آپ سیدھے جہنم میں جائیں گے‘ ’تمہاری جنت میں تو جانے سے رہا۔‘ ’لیکن ڈرہے۔ آپ جہنم سے بھی نکال دیئے جائیں گے‘ ’پھر تمہاری دنیا میں واپس آجاؤں گا۔‘ تیس اکتوبر صبح کے ۵ بجے۔ پرانی عادت ہے۔ ۔فریش←  مزید پڑھیے