کاشف حسین سندھو کی تحاریر

وارث شاہ کی جوگ کے تصورات پہ تنقید ۔ -5/کاشف حسین سندھو

پچھلے مضامین میں ہم دیکھ چکے ہیں کہ وارث جوگ یا فقر کے حصول کے لیے بالناتھ کے پاس ٹلہ جوگیاں حاضری دیتے ہیں لیکن وارث جوگ یا فقر کو یوں ہضم نہیں کرتے جیسے کہ ایک بند ذہن کا←  مزید پڑھیے

وارث شاہ کے ہاں تصورِ جوگ و صوفیت کی یکتائی ۔-4/کاشف حسین سندھو

جوگ کو ھم ہندو یا ہندوستانی تصوف کہہ سکتے ہیں جبکہ صوفی ازم مسلم بیانیے سے نکلا تصور ھے میں نے کہا تھا کہ میں وارث کے تصورات سے حیرت نہیں بلکہ حیرتوں میں مبتلا ھو گیا تھا آج جس←  مزید پڑھیے

وارث شاہ اور منافق جنسی بھیڑیئے کیدو کا مکالمہ -3/کاشف حسین سندھو

یہ وارث شاہ کا بہت اہم ڈرامہ ہے اس ڈرامے میں وارث یہ دکھاتے ہیں کہ کیدو بظاہر سماج کے غیرت کے اصولوں پہ قائم شخص کا کردار  ہے لیکن یہ وہ کردار ہے جسکا اندر گند سے بھرا ہوا←  مزید پڑھیے

وارث اور قاضی کی تکرار-2/کاشف حسین

جب ہیر کا باپ چوچک یہ دیکھتا ہے کہ ہیر میری مرضی سے نکاح کے لیے مان کے نہیں دے رہی تو وہ قاضی کو بلا کر لاتا ہے تاکہ ہیر پہ مذہبی دباؤ کا حربہ استعمال کیا جائے، اس←  مزید پڑھیے

وارث اور مُلا کی تکرار -قسط1/کاشف حسین

وارث اپنے کلام میں جب رانجھے کے گھر چھوڑنے کے بعد اسکی ملا سے تکرار کرواتے ہیں تو ملا کے سماج میں کردار کو کئی پہلوؤں سے سامنے لانے کی کوشش کرتے ہیں رانجھا مسجد میں پہلی رات قیام کے←  مزید پڑھیے

پنڈارے ۔۔کاشف حسین سندھو

افغانوں اور دکنی سپاہیوں پہ مشتمل گروہ جو غیرمنظم دستوں کی صورت میں مرہٹہ فوج کے ہراوّل کا کام کرتے تھے ۔” آپ نے پچھلی چار دہائیوں میں افغان وار لارڈز کی جو شکل دیکھی ہے ، انہی کو قدیم←  مزید پڑھیے

جنسی تعلیم کے فائدے۔۔کاشف حسین سندھو

میرا بچہ پانچویں کلاس میں ہے آجکل کے بچوں کی طرح اپنا فارغ وقت ٹیبلٹ دیکھنے میں گزارتا ہے، کل میں پاس سے گزرا تو مجھے کچھ غلط ہوتا محسوس ہوا عموماً وہ کارٹون دیکھتا ہے لیکن کارٹون فلمز کے←  مزید پڑھیے

لسانی انقلاب کی ضرورت۔۔کاشف حسین سندھو

یورپ میں جب چند صدیاں قبل علمی انقلاب renaissance سیاسی انقلاب کو ساتھ لیکر برپا ہوا تو ایک بڑی تبدیلی یہ بھی دیکھنے میں آئی کہ یورپ کی دو بڑی اشرافیائی زبانوں لاطینی اور فرنچ کی جگہ عوامی زبانیں یعنی←  مزید پڑھیے

مذہب،معاشرہ اور خواتین کی آزادی۔۔کاشف حسین سندھو

مجھے خواتین کی آزادی کے لیے لبرل سیکولر کا ٹیگ لگوانے کی ضرورت کیوں محسوس ہوئی؟ مذہبی دوستوں کی عام رائے کے مطابق تو چونکہ مجھے بطور لبرل سیکولر پرسن بے راہ روی کا شوق تھا تو اس لیے میں←  مزید پڑھیے

ارینج میرج سسٹم کی وفات۔۔کاشف حسین سندھو

میں ارینج میرج کی موجودہ شکل کو قانونی جسم فروشی سمجھتا ہوں یہ بہت بڑی بات ہے اور شاید کچھ دوست اسے گالی بھی سمجھیں لیکن میری یہ رائے کچھ نا کچھ بنیاد رکھتی ہے جس سے آپ اختلاف کر←  مزید پڑھیے

شناخت کا مسئلہ۔۔کاشف حسین سندھو

دنیا بھر میں شناختیں عموماً ثقافتی منطقوں پہ پرکھی جاتی ہیں، مثلاً آپ بیرون ملک جائیں تو لوگوں کو اگر یہ کہیں کہ میں اردن سے ہوں تو شاید لوگ نہ پہچانیں، لیکن اگر آپ مزید وضاحت کرتے ہوئے بتائیں←  مزید پڑھیے

قرآنک تھیوری اور اُمت کا اتفاق۔۔۔۔۔ کاشف حسین سندھو

میں نے اور میرے جیسے بہت سے لوگوں نے ایک مدت ان تاریخی مغالطوں میں گزاری جو مذہبی تعبیرات کے زیرِ اثر پیدا ہوئے تھے، مثلاً۔۔۔ ایک زمانے میں ہمیں ہمارے مذہبی و سماجی مفکرین کی جانب سے قرآن کی←  مزید پڑھیے

پنجاب کی تقسیم سے پیدا ہونے والے آبی مسائل۔۔۔۔کاشف حسین سندھو

پہلی قسط:چڑھتے پانیوں کے مسائل۔۔۔کاشف حسین سندھو پچھلے مضمون سے ہم جو نتیجے اخذ کر سکتے ہیں وہ یہ ہیں کہ اندرا گاندھی کے قتل کے پیچھے پنجاب کے پانیوں پہ ڈاکے کی لمبی تاریخ ہے ،بھارت کی طرف سے←  مزید پڑھیے

چڑھتے پانیوں کے مسائل۔۔۔کاشف حسین سندھو

پنجابی دوستوں سے خاص کر کسان دوستوں سے گزارش ہے ،اس مضمون کو بغور پڑھیں! اس مضمون میں دی گئیں معلومات چڑھدے پنجاب (بھارتی پنجاب ) میں بنائی گئی ایک ڈاکیومینٹری سے لی گئی ہیں، جس کا بنیادی نکتہ یہ←  مزید پڑھیے

جنسی تعلیم :ہر بچے کا حق ہے۔۔۔۔۔کاشف حسین سندھو

واقعہ تازہ ہے مگر اپنی نوعیت کے اعتبار سے ہرگز نیا نہیں۔ اسلامی جمہوریہ پاکستان کا شہری ہونے کی حیثیت سے ایسی درجنوں وارداتیں اپنے اردگرد اور خاندان میں دیکھ سن چکا ہوں اور مجھے یقین ہے  کہ آپ سب←  مزید پڑھیے

پاکستان کی جڑوں میں بیٹھ جانے والے اقوالِ زریں اور ان پہ تبصرہ ۔۔۔۔۔کاشف حسین سندھو

“ملک کی نظریاتی سرحدوں کی حفاظت کی جائے گی ” (سکیورٹی اداروں کو یہ سمجھانے  کی شدید ضرورت ہے کہ ملک کی نظریاتی سرحدوں کی حفاظت کے ساتھ ساتھ باقاعدہ زمینی سرحدوں کی حفاظت بهی بہت ضروری ہے میرا خیال←  مزید پڑھیے

بچوں کو اس جہنم سے کب آزادی ملے گی؟۔۔۔۔کاشف حسین سندھو

میں اپنی بات پہ قائم ہوں، پشتون اور سرائیکی علاقے ( بعض کے نزدیک سندھ اور بلوچستان بھی )بچہ بازی کا گڑھ ہیں اور اسکی وجہ مرد عورت میں موجود فطری کشش کو روکنا ہے۔ جہاں خواتین کو بہت زیادہ←  مزید پڑھیے