اقتدار جاوید کی تحاریر
Avatar
اقتدار جاوید
کتب- ناموجود نظمیں غزلیں 2007 میں سانس توڑتا هوا 2010. متن در متن موت. عربی نظمیں ترجمه 2013. ایک اور دنیا. نظمیں 2014

آبنائے۔۔اقتدار جاوید

آنکھ کے آبنائے میں ڈوبا مچھیرا نہ جانے فلک تاز دھارے میں گاتی ‘ نہاتی ہوئی سرخ لڑکی کی جاں اس مچھیرے میں ہے لڑکی کے گیتوں میں لنگر انداز کشتی ہے ‘ لہروں کی کروٹ ہے ‘ ساحل کا←  مزید پڑھیے

اٹلس میرے سامنے ہے۔۔اقتدار جاوید

اٹلس میرے سامنے ہے جس پر سات بّرِاعظموں کے ممالک جال در جال پھیلے ہوئے ہیں یہ بّرِ اعظم منجمد شمالی ہے یہ بّرِ اعظم جنوبی ہے یہ بّرِ اعظم یورپ ہے ۔یہ سات سمندر ہیں یہ بحر الکاہل ہے←  مزید پڑھیے

غزل۔۔اقتدار جاوید

یہ دریا ہے کوئی کہ پانی پانی گفتگو ہے ہوا کی ساحلوں سے بادبانی گفتگو ہے سمندر تیری لہریں ہیں کہ زیریں اور زبریں سمندر تیری ساری بے کرانی گفتگو ہے اکٹھے کر رہی ہے مامتا کومل سے تنکے شجر←  مزید پڑھیے

لاہور میں پانی کی حفاظت کی کہانی۔۔اقتدار جاوید

لاہور میں پانی کی کمیابی اور زیر زمین پانی کی سطح آٹھ سو فٹ تک جانے کی کہانی کا آغاز آج سے دو عشرے قبل دریائے راوی پر انڈیا کے دو ڈیمز مادھو پور اور تھین ڈیم بنانے سے آغاز←  مزید پڑھیے

غزل۔۔اقتدار جاوید

ہمارے کام رفتہ رفتہ سارے بن رہے تھے کہ دریا چل پڑا تھا اور کنارے بن رہے تھے کسی سے گفتگو آغاز ہونا چاہتی تھی خدا نے بولنا تھا ،تیس پارے بن رہے تھے بچھایا جا چکا تھا اک بچھونا←  مزید پڑھیے

سیاہ فامیت نہیں نسل پرستی خطرناک ہوتی ہے۔۔ اقتدار جاوید

کلائیو لایڈ کی ٹیم نے ستر کے عشرے میں دنیائے کرکٹ میں حکمرانی کی، ہمارا تو وہ بچپن کا زمانہ تھا، اب پچپن کا زمانہ بھی گزر گیا، اس وقت اسی ٹیم کا شہرہ تھا اور کالی آندھی کی کوئی←  مزید پڑھیے

قلمی جنگ ِ صفیّن۔۔اقتدار جاوید

قلمی جنگ ِ صفّین نامی کتاب دو صحافیوں، دو عالموں اور دو نابغوں یعنی مولانا محمد علی جوہر اور خواجہ حسن نظامی کے درمیان بحث پر مشتمل ہے ۔نام اس کا خاصہ معنی خیز ہے ویسے تو جنگ ِ صفین←  مزید پڑھیے

جو ہوا حال ہمارا سو تمہارا ہو گا۔۔اقتدار جاوید

جان بولٹن پچھلی نصف صدی سے امریکی سیاست میں اہمیت کی حامل شخصیت ہیں مگر شہرت انہیں ٹرمپ کے سلامتی کے مشیر بننے، اس مشاورت سے استعفٰی اور کتاب لکھنے اور اس کے مبنی بر حقائق مندرجات سے حاصل ہوئی←  مزید پڑھیے

غزل۔۔اقتدار جاوید

خاموش گلی کی نکڑّ پر کوئی وقت رکا ہے قہروں کا اک نیند کشیدہ کاروں کی اک خواب ثواب دوپہروں کا یہ حرف جو تھوڑا تازہ ہے یہ انت انداز اندازہ ہے صحرا کی قدیم چٹانوں کا پانی میں غائب←  مزید پڑھیے

جب ایوب خان مشرقی پاکستان کے جی او سی تھے۔۔اقتدار جاوید

یہی شنگشد بھبن Sangsad Bhabhan تھا جو تیج گاؤں ڈھاکہ میں واقع ہے ،یہی وہ اسمبلی کی تاریخی عمارت تھی جہاں آج کل   وزیراعظم بنگلہ دیش کا دفتر ہے ،وہیں باورچی خانے سے اٹھتی مچھلی کی خوشبو نے پوری←  مزید پڑھیے

دیو مالا(یومِ پدر کے موقع پر)۔۔اقتدار جاوید

باپ کی آنکھ چشمہ ہے جو جاری رہنا ہے زمزم کے چشمے کی صورت! باپ سچ۔۔ رات کی سرد بے مہر بے نام بیزار چپ چاپ عمروں کے نادیدہ  زینے سے نیچے اُترتی گھڑی اور اس کو جیسے پکڑنے جکڑنے←  مزید پڑھیے

وہی علیہ السلام ہو گا۔۔۔ اقتدار جاوید

اب کرونا اور اس سے بچاؤ کا کیا کوئی ممکن طریقہ ہے یہ ایک مشکل سوال ہے ،جب ہم اس سے بچ سکتے تھے وہ وقت گیا ،اب اس سے بچنا مکمل لاک ڈاؤن اور کرفیو کے علاوہ اور کچھ←  مزید پڑھیے