ڈاکٹر مدیحہ الیاس کی تحاریر
Avatar
ڈاکٹر مدیحہ الیاس
الفاظ کے قیمتی موتیوں سے بنے گہنوں کی نمائش میں پر ستائش جوہرشناس نگاہوں کو خوش آمدید .... 🙂

مُنّا بھائی ایف سی پی ایس (قسط5)۔۔۔۔ڈاکٹر مدیحہ الیاس

مُنّا بھائی ایف سی پی ایس (قسط4)۔۔۔۔ڈاکٹر مدیحہ الیاس آج مُنا بھائی کا وارڈ ڈے تھا اور انھوں نے صبح سے ہی انرجی conserve کرنے کا فیصلہ کر لیا تھا۔۔ لہذا صبح آتے ہی اپنی مرضی کے مطابق سجائے گئے←  مزید پڑھیے

مُنّا بھائی ایف سی پی ایس (قسط4)۔۔۔۔ڈاکٹر مدیحہ الیاس

منا بھائی ایف سی پی ایس (قسط3)۔۔۔۔ڈاکٹر مدیحہ الیاس بہرحال راؤنڈ منا بھائی کے بغیر ہی شروع کر دیا گیا۔ جب آخری بیڈ پہ پہنچے تو سب نے متجسس سوالیہ نظروں سے ایک دوسرے کی طرف دیکھا کہ یہ اوورآل←  مزید پڑھیے

منا بھائی ایف سی پی ایس (قسط3)۔۔۔۔ڈاکٹر مدیحہ الیاس

منا بھائی ایف سی پی ایس (قسط2)۔۔۔۔ڈاکٹر مدیحہ الیاس منا بھائی۔۔۔منا بھائی۔۔۔ اٹھو۔۔۔ لیٹ ہونے کا۔۔۔سوا آٹھ ہو گئے۔۔ سرکٹ نے بھائی کو جھنجھوڑا۔۔ کیا ہے رے۔۔۔ سونے دے۔۔۔  منا بھائی مدھوش آواز میں بولے بھائی پروفیسر کا رؤنڈ ہے۔۔←  مزید پڑھیے

منا بھائی ایف سی پی ایس (قسط2)۔۔۔۔ڈاکٹر مدیحہ الیاس

منا بھائی ایف سی پی ایس (قسط1)۔۔۔۔ڈاکٹر مدیحہ الیاس منا بھائی نے فولیز پاس کرنے کے بعد اپنے فرسٹ پروسیجر کی کامیابی سیلیبریٹ کرنے کیلئے کینٹین کا رخ کیا اور اعلان کیا کہ ‘آج سب کو چائے مفت ملے گی,←  مزید پڑھیے

منا بھائی ایف سی پی ایس (قسط1)۔۔۔۔ڈاکٹر مدیحہ الیاس

منا بھائی نے جیسے ایم بی بی ایس کے پانچ سال گزارے, ہاؤس جاب کا دور بھی اس سے کچھ مختلف نہ تھا۔ نہ وارڈ کی شکل دیکھی نہ مریضوں کی۔۔ اور تجربے پہ سائن کروائے اپنے پرانے آزمودہ طریقے←  مزید پڑھیے

عمیرہ احمد کے ناول والی ہاوس آفیسر- آخری قسط/ڈاکٹر مدیحہ الیاس

کل اس کی ہاؤس جاب کا آخری دن تھا ،جس کو بھرپور طریقے سے منانے کیلئے وہ انتہائی پرجوش تھی۔ لائف کے ہر بیوٹی فل ایونٹ کو موسٹ بیوٹی فل بنانا اس کی بچپن کی عادت تھی۔۔ اس نے 5←  مزید پڑھیے

نائٹ ڈیوٹی۔۔ڈاکٹر مدیحہ الیاس

وہ گریڈ فور enceph میں تھا, اس کی گردن بائیں جانب کو ڈھلک رہی تھی, اسکا برین اور سپایئنل کورڈ کا کنکشن منقطع ہو چکا تھا۔ کرسی میں موجود کھٹملوں کی فوج کے پین فل سٹمولس بھی اس میں جنبش←  مزید پڑھیے

عمیرہ احمد کے ناول والی ہاؤس آفیسر۔۔۔ڈاکٹر مدیحہ الیاس/قسط3

آج او-ٹی ڈے تھا اور اسے صبح جلدی وہاں پہنچنا تھا۔اس نے سلک کی رایئل بلیو او-ٹی کٹ پہنی, جس کے دامن پہ تلے کا نفیس کام ہوا تھا, مالٹا رنگ کے ہیل والے crocs پہنے اور ہاسپٹل کی طرف←  مزید پڑھیے

سخن ور کی گزر بسر۔۔۔ڈاکٹر مدیحہ الیاس/اختصاریہ

جانے کب سے وہ کانٹا لیے سمندر کے کنارے بیٹھا تھا۔ تخیلات کے سمندر کے کنارے۔۔۔۔ کب دھوپ نے اپنے پَر پھیلائے, کب سمیٹے, وہ بے خبر تھا۔ بھوک پیاس کے سب نوٹیفکیشنز کو اگلے آٹھ گھنٹے کیلئے وہ سائلنٹ←  مزید پڑھیے

عمیرہ احمد کے ناول والی ہاوس آفیسر ۔۔۔ ڈاکٹر مدیحہ الیاس/قسط2

مریضوں میں چائے تقسیم کرنے کے بعد اس کی نظر سات بجاتی گھڑی پہ پڑی اور وہ چونک گئی۔ ہائے اللہ! پی جی راؤنڈ پہ آنے والے ہیں اور اس نے ابھی تیار بھی ہونا تھا۔۔ فورا ً ایچ او←  مزید پڑھیے

سائیڈ افیکٹ ۔۔۔ مدیحہ الیاس

بڑھاپے کے نو مولود آثار کی نمائندہ چند جھریاں بابا جی کے بے رونق چہرے کی رونق بڑھانے میں کافی معاون ثابت ہو رہی تھی۔ باغ جناح کے دل افروز مناظر بابا جی کے لبوں پہ گاہ بگاہے مسکان بکھیرنے میں سرخرو کامل تھے۔ یوں لگتا تھا جیسے آج اولڈ ہاؤس سے فرار حاصل کرکے دنیا جہاں کی خوشیاں اپنے ساتھ بنچ پہ بٹھائے تنہائی کو مات دے رہے ہوں۔ ←  مزید پڑھیے