ayazmorris کی تحاریر

پروفیشنل زندگی میں کامیابی کیلئے لباس کا کردار۔۔۔ایازمورس

ہر انسان کے اندر کامیاب ہونے کی شدید خواہش پائی جاتی ہے لیکن کیا وجہ ہے کہ صرف چند افرادانتہائی کامیاب ہوتے ہیں اور باقی نہیں؟ تعلیم،اسکلز،تجربہ،مثبت رویہ اور محنت کامیابی کے حصول کیلئے لازمی سمجھے جاتے ہیں لیکن ان←  مزید پڑھیے

عرفان جاوید کا عجائب خانہ۔۔ایازمورس

اردو ادب میں اگر اس وقت چند لکھاریوں کی فہرست بنائی جائے جو اردو ادب کو اس عہد میں زندہ و جاوید رکھے ہوئے ہیں تو ان میں عرفان جاوید کا نام سرِفہرست ہو گا۔وجہ بڑی سادہ اور آسان ہے۔عرفان←  مزید پڑھیے

عمر کمال کا کمال۔۔ایازمورس

کراچی کے فائیو اسٹار ہوٹل میں ایک سیشن کروا کرگاڑی میں بیٹھے ہی تھے،کہ موبائل ڈیٹا آن کیا تو   پاکستان کے واحد فنڈ ریزنگ ایکسپرٹ محمد عمر کمال صاحب کی سٹوری سامنے آئی۔ دو ڈھائی گھنٹے سیشن کے بعد تھکاوٹ←  مزید پڑھیے

بچپن کے تجربات کے اثرات۔۔ ایازمورس

ہماری  بچپن کی زندگی میں بے شمار حادثات اور منفی تجربات و واقعات رونما ہوئے ہوتے ہیں جن کے اثرات کا ہمیں اُس وقت بالکل بھی اندازہ نہیں ہوتا۔بچپن کے حادثات اور منفی تجربات آگے چل کر بہت گہرے انداز←  مزید پڑھیے

کتابیں اور فلمیں۔۔ ایاز مورس

میں اپنے ویک اینڈ کو کتا بوں اور فلموں سے سیلیبریٹ کرتا ہوں۔کتابیں خرید نے کا شوق تو بہت تھا لیکن پڑھنے سے موت آتی تھی،پھر آہستہ آہستہ یہ ’لت‘بھی لگ گئی اور اب یہ ایک نشہ کی صورت اختیار←  مزید پڑھیے

بے گھر ہونے سے ہاورڈ یونیورسٹی تک۔۔ایازمورس

یہ 2019 کی بات ہے ۔میں یو ٹیوب پر اِنسپائرنگ ویڈیوز ڈھونڈ رہا تھا کہ اچانک میری نظر ایک ویڈیو پر پڑی جس میں ایک فلم کا لِنک دیا ہوا تھا جو ایک ایسی لڑکی کی سٹوری تھی جس نے←  مزید پڑھیے

خود اعتمادی کیسے حا صل کریں؟۔۔ ایازمورس

Self Doubtہماری ترقی کاسب سے بڑا دشمن ہے۔یہ بظاہر اتنا خطرناک اور مہلک نہیں لگتا لیکن یہ پاؤں میں لگے چھوٹے سے کانٹے اور ٹائر میں چھوٹے سے کیل کی وجہ سے ہونے والے سوراخ کی مانند ہے،جو ایک دم←  مزید پڑھیے

مینٹورز کی تلاش۔۔ایازمورس

مینٹورز (Mentors)وہ لوگ ہیں جو آپ کو آپ کی پہچان کرواتے ہیں،یہ ایسے لوگ ہوتے ہیں جو آپکی منزل کے فاصلے کو کم کرکے آپ کو منزل تک پہنچنے کا راستہ بتاتے ہیں۔ہر کامیاب انسان کی زندگی میں مینٹورز کا←  مزید پڑھیے

زندگی سے بڑے لوگ۔۔ایاز مورس

کچھ لوگ اپنے علم کو کتابوں میں لکھ کر سمجھتے ہیں کہ انہوں نے اپنا حق ادا کردیاہے۔ ان کے پاس علم کا جو خزانہ تھا اُنہوں نے دوسروں تک پہنچا کر اپنا فرض پورا کردیا ہے۔ لیکن بہت کم←  مزید پڑھیے