عبدالستار کی تحاریر

کرونا وائرس کے تناظر میں ایٹمی پنڈتوں کے نام اہم پیغام۔۔عبدالستار

پوری دنیا کرونا وائرس کے بے رحم شکنجے کی پکڑمیں ہےا,نسانوں کی کثیر تعداداس مہلک وائرس کا شکار ہو کر زندگی کی بازی ہار چکی ہے ۔انسانی تاریخ اس بات کی شاہد ہے کہ آج کے انسان کی موجودہ شکل←  مزید پڑھیے

امن کی دو شمعیں ۔۔عبدالستار

یہ کتاب امن کا خواب دیکھنے والی آنکھوں کے لیے ایک نایاب تحفہ ہے ۔یہ ایک ایسی ادبی قوسِ قزاح ہے کہ جس میں امن و آشتی اور انسانی بھائی چارےکاہر رنگ اور  امنگ شامل ہے ۔یہ انسانی خیالات کا←  مزید پڑھیے

ڈاکٹر بلند اقبال میرے آئینے میں۔۔عبدالستار

کچھ لوگ بہت ہی نارمل اور بوریت والی زندگی گزار کر اس دنیا سے رخصت ہو جاتے ہیں اورانسانی ورثہ میں کوئی قابل ذکر اضافہ نہیں کرتے ۔مگر کچھ لوگ ایسے ہوتے ہیں جو اپنی ذات میں ایک انجمن ہوتے←  مزید پڑھیے

فکری بونوں کا دیس۔۔عبدالستار

اکیسویں صدی جو کہ علم و ہنر کے لحاظ سے ایک بالغ صدی ہے اور آج علم کا حصول ایک  کلک بٹن کے فاصلے پر ہے۔چند سیکنڈ میں ہم دنیا بھر کی معلومات اپنے کمپیوٹر سکرین یا اپنے موبائل فون←  مزید پڑھیے

کیا علم اور شعور ڈگریوں کا محتاج ہوتا ہے۔۔عبدالستار

ہم ایک ایسے سماج کا حصہ ہیں کہ جہاں پر یہ بات سنہری  اصول کا در جہ اختیار کر چکی ہے کہ کتابوں میں لکھا ہوا حرف بہ حرف ٹھیک ہوتا ہے اور اس میں غلطی کی کوئی گنجائش نہیں←  مزید پڑھیے

ڈاکٹرخالدسہیل کی کتاب انسانی شعورکا ارتقاء (تعارف اور تاثرات/دوسری،آخری قسط)۔۔۔۔عبدالستار

آٹھواں باب بعنوان ”روحانی تجربات۔۔۔سائنس اور نفسیات کے آئینوں میں“اس باب میں ڈاکٹر سہیل روحانی تجربات کے حوالوں سے بطور ماہر نفسیات اور سائنس کا طالب علم ہونے کے ناطے سے اپنے موقف کا اظہار کرتے ہیں۔پہلے وقتوں میں یہ←  مزید پڑھیے

ڈاکٹرخالدسہیل کی کتاب انسانی شعورکا ارتقاء (تعارف اور تاثرات/قسط1)۔۔۔۔عبدالستار

بیکن نے کیا خوبصورت بات کہی تھی ”کچھ کتابیں چکھنے کے لیے  ہوتی ہیں،کچھ نگلنے کے لیے اور ان میں کچھ کتابیں چبا کر ہضم کرلینے کے قابل ہوتی ہیں“آج جس کتاب کا تعارف کرواؤں گاوہ چبا کر ہضم کر←  مزید پڑھیے

ابرار حسین نیکوکارہ اپنے آخری نوٹ میں ایسا کیا لکھ گیا۔۔عبدالستار

کچھ حالات و واقعات اس قسم کے ہوتے ہیں جو اپنے پیچھے بہت سارے سوالات چھوڑ جاتے ہیں۔یہ سوالات ایک نقطے کی طرح ہوتے ہیں کہ جن کے نقطوں کو اگر ایک ترتیب کے ساتھ جوڑا جائے تو وہ ایک←  مزید پڑھیے

کیا انسان بے بس ہوتا ہے؟۔۔عبدالستار

اگر انسان کی معلوم شدہ ابتدائی تاریخ کا مطالعہ کریں اور اس سوال کا جواب ڈھونڈنے کی کوشش کریں تو ایسے محسوس ہوتا ہے کہ شاید انسان ایک بے بس اور مجبورِ محض مخلوق ہے۔غاروں میں رہنے والا انسان اپنی←  مزید پڑھیے

کیا بڑوں کا کہا حرفِ آخر ہوتا ہے؟۔۔عبدالستار

ہمارے مشرقی معاشرے میں باپ کو جنت کا دروازہ کہا جاتا ہے اور ماں کے پاؤں تلے جنت ہوتی ہے۔اسی بنیادی مقدس اصول کے  تحت ہماری مشرقی نسل پروان چڑھتی ہے۔اس مقدس اصول کی پاسداری کرتے ہوئے ایک مشرقی باپ←  مزید پڑھیے

کیا انسانی ذہن کو قید کیا جا سکتا ہے؟۔۔عبدالستار

ڈاکٹر بلند اقبال جو کہ حمایت علی شاعر کے فرزند ارجمند ہیں۔آج کل کینیڈا میں رہتے ہیں۔ وہ کسی وقت میں کینیڈا کے رائل ٹی وی پر(پاس ورڈ) کے نام سے ایک پروگرام کیا کرتے تھے جبکہ آج کل کینیڈا←  مزید پڑھیے

ڈاکٹر خالد سہیل کی کتاب (سچ اپنا اپنا)تعارف اور تاثرات (دوسری،آخری قسط)۔۔۔عبدالستار

ڈاکٹر خالد سہیل (عورتوں سے رشتے)والے باب میں ایک معصوم تعلق جوکہ زمانے کی تما م کدورتوں،قباحتوں اور برائے نام سماجی اصول و ضوابط سے بے نیاز ہوتاہے۔بچپن کی ابتدائی عمر والے تعلقات اور رشتے جو بچے اپنے ہم جولیوں←  مزید پڑھیے

میرے معاشرے کا چھوٹو۔۔عبدالستار

ہر سماج اور سو سائٹی کے کچھ کر دار ہوتے ہیں جنھیں خود اس معاشرے کے لوگ اور ان کے رویے بناتے ہیں۔یہ کردار آسمان سے یا ماں کی کوکھ سے اپنی زندگی گزارنے کے پیمانے لکھوا کر اس دنیا←  مزید پڑھیے

ڈاکٹر خالد سہیل کی کتاب (سچ اپنا اپنا)تعارف اور تاثرات (قسط1)۔۔۔عبدالستار

زندگی ہر شخص کے لیے قدرت کا ایک حسین تحفہ ہوتی ہے۔کچھ لوگ اس تحفہ کو پہلے سے تہہ شدہ روایتوں،اصولوں اور طریقوں کے مطابق گزار کر دنیا سے چلے جاتے ہیں اور نسلِ انسانی کے اثاثہ میں کوئی خاطر←  مزید پڑھیے