غزل پلس(10)۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

باد ِ صر صر کو بھی یہ لوگ صبا کہتے ہیں
گرد کی آندھی کو گھنگھور گھٹا کہتے ہیں
شاعروں کو اگر قبروں کا دیا کہتے ہیں
لوگ بے وجہ نہیں کہتے، بجا کہتے ہیں
آئینہ مصلحت ِ وقت کا قائل ہی نہیں
اس لیے لوگ اسے ’’عکس سرا‘‘ کہتے ہیں
میرے اطراف تو سیارے بہت گھومتے ہیں
کہکشاؤں میں مجھے چرخ نما کہتے ہیں
موتیوں سے جو چمکتے ہیں مری پلکوں پر
آنسوؤں کو ہی چراغوں کی ضیا کہتے ہیں
میرے سینے میں دہکتی ہوئی غزل میں ہیں بہت
اس لیے لوگ مجھے دل کا جلا کہتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(ق)
مونچھیں پر تاؤ ہے، ، چہرے پہ ہے نخوت کا جلال
سینہ اکڑا ہوا ، آنکھوں میں طوائف کا جمال
خود کو یہ کچھ بھی کہیں، ہم کو ہے منظور، مگر
کہنے والے تو انہیں خواجہ سرا کہتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(ق)
یہ فلک بوس عمارات ، یہ ٹاور، یہ محل
دیکھ ان سب کو مرے دیدۂ اصنام پرست
کون کہتا ہے کہ گئے لات و منات و مردوخ
ان کواب تیل کی دولت کے خدا کہتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(ق)
وقت کے ہاتھ ہیں اک عرصے سے مصروفِ ستم
کچھ برس اور ہی کاٹے گی مری عمر ِ عزیز
زندگی بھر تو رہا عشق ِ بتاں میں مصروف
عمر ساری تو نہیں اٹھے دعا کو مرے ہاتھ
کچھ سمجھ آتا نہیں، اے فلک ِ سیر نگاہ
کیا دم ِ نزع کی سانسوں کو دعا کہتے ہیں؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(ق)
آب ِ زمزم کو ہلاہل کہیں بے باکی سے
شہد کا گھونٹ سمجھ کر سم ِ قاتل پی جائیں
آپ گرویدہ ٔ گفتار ہیں خود اپنے جناب
آپ تو خود کو ہی آئینہ نما کہتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(ق)
حسن کے عیش کدے اور طلسمات حیات
ان کے ہوتے ہوئے کیوں عیش سے محروم رہوں
جسم، احساس ، طلب، یاد، جوانی ،سپنے
لوگ ان جذبوں کو ہی ہوش ربا کہتے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(ق)
جانتے بوجھتے کیوں دل کو نہتا کر لوں
زندگی مصرف ِ بے کار رہی ہے، پھر بھی
یاد یہ قول رکھوں مجھ کو ابھی جینا ہے
یہ مرا جذبہ ٔ اصنام پرستی اب بھی
رنگ ِ حیرت کے تلاطم کو جلو میں لے کر
سب حسیں چہروں کو پائندہ بنا دیتا ہے
دیکھنے میں تو ہوں اک پیر ِ طریقت ، لیکن
اب بھی ہوں ایک جواں فکر، فسوں کار ادیب
تیشہ ٔ فکر کا آذر ہوں، عجب ’’نظم تراش‘‘
میرے قاری تو مجھے اب بھی ’’نیا‘‘ کہتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(ق)
کل ستاروں کی طرف دیکھ کے میں کہتا تھا
آسماں نور کے پھولوں سے بھرا گلشن ہے
کسی طائر کا نشیمن جو نظرآتا تھا
میں سمجھتا تھا کہ گیتوں کا کوئی مسکن ہے
آج اس باغ کا پژمردہ و بے کیف شباب
پیاسی آنکھوں کے لیے گھونٹ ہے انگاروں کا
میری ہی طرح سے اڑتے ہوئے بیکار ، فضول
کتنے ہمدرد ، وفا کیش ہیں سوکھے پتے
مجھ کو چلنے کی صدا دیتے ہیں ،’’آ‘‘ کہتے ہیں
——————–
(ق)
راہ ِ ہستی پر رہا گرم سفر بچپن سے
برق رو، تیز قدم ، دھوپ سے سنولایا ہوا
دیدہ ٔ شوق سے راہوں کا تجسس تھا عیاں
چلتے رہنا ہی مرے عزم کی معراج تھی تب
ایک ہی تکملہ ٔ شوق و تمنا تھا مرا
ایک ہی خبط تھا ہر میل پر پتھر گاڑوں
نظم کی راہ کٹھن ہے ، اسے ہموار کروں
آج میں خوش ہوں مرے نقش قدم روشن ہیں
دیکھنے والے انہیں قبلہ نما کہتے ہیں!

Shopping Revolution

ستیہ پال آنند
ستیہ پال آنند
شاعر، مصنف اور دھرتی کا سچا بیٹا

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *