غزل پلس(7)۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

​غزل پلس

تھی ازل سے نہاں اولاً ثانیاً
اک صــــدا، کُن فِکاں، اولاً ثانیاًا

ایک نا سُوت تھا، ایک لاہُوت تھا
یہ جہاں، وُہ جہـاں، اولاً ثانیاً

جسم تھا، جان تھی،روح تھی، جوع تھی
لا مکاں۔ ۔۔۔۔ لا زماں۔۔ ۔۔۔۔اولاً ثانیاً

اولاً ثانیاًً ۔۔ بس خـلا ہی تو تھا
ہاں، خـلا ‘ بے اماں، اولاً ثانیاً

ڈھور ڈنگر سے حیوان ِ ناطق ہوئے
بـے زباں ۔۔۔با زباں ۔۔۔ اولاً ثانیاً

زُہد و طاعت میں کیا کچھ گَنوا بیٹھے ہم
نفـــس ِ امّـــارہ ۔۔۔۔ہاں ۔۔۔اولاً ثانیاً

آپ اندر گئے، آپ سے وہ ملے
پھـــر ہُــوا کچھ وہاں، اولاً ثانیاً؟

اولاً ثانیاًً کی خـــرافــات میں
ہے غزل کا زیاں اولاً ثانیاً

Shopping Revolution

Avatar