• صفحہ اول
  • /
  • نگارشات
  • /
  • اوقاف کنٹرول پالیسی اور محکمہ اوقاف اسلام آباد کے زمینی حقائق۔۔انعام الحق

اوقاف کنٹرول پالیسی اور محکمہ اوقاف اسلام آباد کے زمینی حقائق۔۔انعام الحق

ملکی اداروں میں بہتری کے لئے یا معاشرہ میں پائی جانے والی خرابیوں کے سدھار کے لئے ریاستی قانون سازی یا پالیسی کا خیر مقدم کیا جانا چاہیے اس بات سے انکار نہیں کیا جاسکتا کے مساجد مدارس کے نظام میں اصلاحات کی ضرورت ہے انتظامی معاملات میں بھی بہتری کی بہت گنجائش ہے بلکہ بہت زیادہ ضرورت ہے اور وہاں پر موجود خدمات سر انجام دینے والے اشخاص کی علمی اور فکری اصلاحات کی بھی ضرورت ہے انکی علمی اور روحانی بڑھوتری کی بھی ضرورت ہے لیکن وہ کرکون سکتا ہے یہ الگ بحث  ہے

پرائیویٹ سیکٹر کی مساجد میں اور مدارس میں خدمات سر انجام دینے والے خدام مؤذنین ائمہ خطبا اور مدرسین کے حقوق کی سنگین خلاف ورزیاں ہوتی ہیں ان کے مشاہرے انتہائی کم ہیں جسکی وجہ سے وہ مقتدا ہونے کے باوجود کسمپرسی کی زندگی گزارنے پر مجبور ہیں بالخصوص مدارس کے مدرسین کے ساتھ عموما مہتممین ناروا سلوک کرتے ہیں انکی مجبوریوں کا ناجائز فائدہ اٹھاتے ہیں جس پر میں بارہا تفصیل سے لکھ چکا ہوں مدارس دینیہ کے جو بورڈز ہیں ان سے بھی درخواست کرچکا ہوں لیکن تاحال اس پر خاطر خواہ شنوائی نہیں ہوسکی یہ تو گراؤنڈ رائیلٹی ہے حقائق ہیں جن سے انکار نہیں کیا جاسکتا ہے

اب آتے ہیں ذرا اس بل کی جانب جو گذشتہ دنوں سینٹ اور پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں پاس کیا گیا جس کے مطابق اسلام آباد میں موجود وقف شدہ املاک چاہے وہ مساجد مدارس مزارات یاکسی بھی قسم کے فلاحی ادارے یا پروجیکٹز ہیں انکو ریاستی طے شدہ ضابطہ کے مطابق چیف کمشنر اسلام آباد کے انڈر کردیا جائے گا
چیف کمشنر اسلام آباد ناظم اعلیٰ اوراسکے ماتحت سٹاف کا تقرر کرکے اوقاف املاک کو اپنے قبضے میں لیں گے اور اسکے نظم ونسق چلائیں گے

اس بل کے اوائل میں کہاگیا چونکہ اسلام آباد دارالخلافہ ہے اس لئے اسمیں اوقاف املاک کا انتظام وانصرام بھی مثالی ہونا چاہیے جس کے لئے ان اقدامات کو ناگزیر قرار دیا گیا بہت اچھی بات ہے نیکی بھی اور پوچھ کر بڑھے چلو بڑھے چلو اقبال کے شاہینو

لیکن اب میں آپ کو محکمہ اوقاف اسلام آباد کے بارے میں حیرت انگیز معلومات بلکہ انکے سیاہ کردار سے آگاہی دیتا ہوں جسکی تفصیل کچھ یوں ہے محکمہ اوقاف اسلام آباد پہلے سے ایک ڈائریکٹریٹ کی شکل میں موجود ہے جس کے دو ڈیپارٹمنٹ ہیں

نمبر ایک۔ اوقاف مساجد جسکے زیر انتظام کل ملا کر سو سے زائد مساجد ہیں
نمبر دو۔ اوقاف شرائن جسکے زیر انتظام اسلام آباد میں موجود مزارات ہیں اور مین مزار بری امام ہی ہے

یہ دونوں ڈیپارٹمنٹ محکمہ اوقاف ڈائریکٹریٹ کے انڈر ہیں اوقاف ڈائریکٹریٹ کے ڈائریکٹر کا ایڈیشنل چارج ڈی سی اسلام آباد کے پاس ہوتا ہے اور ڈی سی اسلام آباد کے اوپر فل اتھارٹی چیف کمشنر اسلام آباد ہوتے ہیں تو گویا کہ محکمہ اوقاف اسلام آباد پہلے سے چیف کمشنر اسلام آباد کے انڈر ہے تقریبا تین سال سے حمزہ شفقات صاحب نے محکمہ اوقاف کو ڈائریکٹر کا شرف بخش رکھا ہے پاکستان کے پاپولر ڈی سی ہیں ابھی حال ہی میں انکو ایوان صدر نے گرانقدر خدمات پر خصوصی ایوارڈ بھی دیا گیا
پھر ڈائریکٹر کے انڈر ڈپٹی ڈائریکٹر اور دونوں ڈیپارٹمنٹ کے لئے الگ الگ ایڈمن آفیسر ہوتے ہیں
عرصہ 12 سال سے اسمیں بھرتیاں نہیں ہوئی اگر چند ایک ہوئی تو وہ غیر قانونی چور راستہ سے ہوئی جسمیں بعض لوگ نان

کوالیفائیڈ بھی تعینات کئے گئے انکی ڈگری جعلی ثابت ہونے کے باوجود ان کو بحال رکھا گیا جسکے شواہد مہیا کئے جاسکتے ہیں بلکہ گذشتہ سال محکمہ اوقاف اسلام آباد کے ایک خطیب کی جعلی ڈگری کا ذکر بی بی سی نے اپنی رپورٹ میں کیا ہے جسکا علم ڈی سی صاحب کو ہے انہوں نے ٹویٹ بھی کیا تھا
اب محکمہ اوقاف اسلام آباد کی حالیہ حالت زار سے مختصر طور پر آگاہ کروں تو آپ ششدر رہ جائیں گے کہ کس طور پر اس محکمہ کو کھلواڑ بنارکھا ہے اور کوئی بھی متعلقہ افسر اسمیں سنجیدگی کا مظاہرہ نہیں کرتا
ڈپٹی ڈائریکٹر اوقاف ہی اکلوتا پرمنٹ اعلی افسر اس ڈائریکٹریٹ کو نصیب ہوتا ہے لیکن اس کی توجہ دوفیصد بھی اپنے پرمنٹ فرائض منصبی پر نہیں ہوتی بلکہ وہ ایڈیشنل چارج پر کھپ رہا ہوتا ہے کھبی پولیو کی ویکسین اور کھبی ڈینگی اور کھبی کرونا پھر ڈی ایچ او کے فرائض بھی
جب ان سے محکمہ اوقاف کی بات کی جائے تو فورا ان کے چہرے کے تاثرات بدل جاتے ہیں
ایک اور عجوبہ بتلاؤں کہ محکمہ اوقاف اسلام آباد کا آفس ابھی آئی ٹین میں ہے لیکن وہاں پر ڈپٹی ڈائریکٹر کے لئے آفس ہی نہیں رکھا گیا ہے وہ ڈی سی آفس جی الیون میں ہی جلوہ گر ہوتے ہیں میری معلومات کے مطابق موجودہ ڈپٹی ڈائریکٹر اوقاف ایک دفعہ بھی اوقاف آفس آئی ٹین میں تشریف نہیں لے گئے حالانکہ ایک عرصہ سے اس عہدہ پر فائز ہیں اس سے اس محکمہ میں حکومت اور حکومتی افسران کی سنجیدگی معلوم ہوجاتی ہے
اسوقت محکمہ اوقاف اسلام آباد میں سو کے قریب مؤذنین اور خطبا کی پوسٹیں خالی ہیں جن کا اشتہار 2016 میں دیا گیا پھر کچھ لوگوں نے اس پر سٹے لیا جس پر اسلام آباد ہائی کورٹ نے پٹیشنرز کی چند منشن پوسٹوں کے علاوہ ضابطہ کے مطابق تعیناتی کرنے کی ڈائریکشن دی جسکی کاپی میرے پاس ہے
لیکن ہمارے محکمہ اوقاف کے باکمال لوگوں کے لاجواب کارناموں کی بدولت پوسٹوں کو مشتہر کرنے کے بعد چارسال گزرنے کو ہیں لیکن انہوں نے ہائی کورٹ کی ڈائریکشن کو نہیں مانا جو سیدھا سیدھا توہین عدالت ہے
پھر انکو یاددہانی کے میں تین درخواستیں تحریری طور پر ڈی سی اسلام آباد کو دے چکا ہوں جسکا ریکارڈ میرے پاس ہے
جب انہوں نے داد رسی نہیں کی تو میں نے وزیر داخلہ کو اپروچ کیا اور انکو تحریری درخواست دی جس پر انہوں نے بھی انکو ڈائریکشن دی لیکن یہ پھر بھی ہاتھی کے کان میں سوئے رہے
پھر میں نے وزیر اعظم پاکستان کے علم میں یہ معاملہ تحریری طور پر لایا جس پر وزیراعظم کی جانب سے بھی انکو ڈائریکشن جاری ہوئی اس کو بھی انہوں نے قابل عمل نہ سمجھا اسکے بعد وفاقی محتسب میں میں نے پٹیشن فائل کی تو وفاقی محتسب نے بھی انکو بذریعہ چیف کمیشنر ڈائریکشن دی اسکو بھی ایک سال سے زائد عرصہ گزرگیا لیکن انکے سر پر جوں بھی نہ رینگی

میں حیران ہوں کہ چیف کمشنر اور ڈی سی اسلام آباد کے انڈر اسلام آباد کی کل ملا کر سو کے قریب مساجد ہیں یہ ان سے نہیں چل رہی اگر ساری مساجد اور مدارس انکے انڈر میں ہوں گے تو یہ کیا گل کھلائیں گے ۔۔۔؟
اسکو یہ کیسے چلائیں گے اسکی مزید حیرت انگیز صورت حال اور اس بل کی شقوں پر تبصرہ ان شاءاللہ بشرط زندگی اگلی قسط میں کروں گا
اللہ تعالیٰ ہم سب کا حامی و ناصر ہو

Shopping Revolution

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *