قدرت کا رقص۔۔حبیب شیخ

SHOPPING
SHOPPING
SALE OFFER

جب کرونا وائرس کی وبا کے دوران میں ایک پارک میں گیا
مجھے کوئی انسان نظر نہیں آیا،
سنسان پارک کو دیکھ کر میں گھبرا گیا،
چاروں طرف خاموشی ہی خاموشی تھی،
پھر ایک چڑیا میرے سامنے آ کر بیٹھ گئی،
مجھے احساس ہوا کہ میں وہاں اکیلا نہیں تھا،
میں نے ماضی کی تلخیوں اور مستقبل کی فکر کو ذہن سے نکال کر پورا دھیان اُس موجودہ لمحے پرلگا دیا۔۔
میں نے جو کچھ سنا اور دیکھا وہ شاید پہلے کبھی میری سماعت اور مشاہدے میں نہیں آیاتھا۔۔
ہر طرف بے خوف و خطر پرندے چہچہا رہے تھے ،موسمِ بہار کی آمد کے گیت گا رہے تھے گھونسلے بنانے کے لئے چھوٹی ٹہنیاں اور تنکے جمع کر رہے تھے۔
ان کی سریلی آوازوں سے پورا پارک چہک رہا تھا۔
کیڑے مکوڑے اپنے اپنے کاموں میں مصروف تھے اور سرعت کے ساتھ رینگ رہے تھے۔
درختوں کی سوکھی شاخوں پہ پتے نکل رہے تھے جیسے وہ خود کو زیور سے آراستہ کر رہی ہوں۔
قدرت کا رقص پورے زوروں پر تھا
وہ رقص جس کے سُراور تال کو ماضی کا انسان گاہے بہ گاہے بگاڑ دیا کر تا تھا،
وہ رقص جس کو صنعتی انسان نے اپنے لا محدود پیداوار اور لا محدود کھپت کے نظریئے کے تحت روک دیا تھا،
اس نے قدرت کی تسخیر کا دعویٰ کر دیا ، در حقیقت اس نے بے دردری  سے قدرت کو پامال کیا،
چند انسانوں نے تکبر اور مال کے سُروں پہ  دوسرے انسانوں اور مخلوقات کی لاشوں پر اپنا وحشی رقص شروع کردیا۔
قدرت نے ایک حقیر جرثومے کے ذریعےاس کا مادی رقص روک کر اس کو بے بس کردیا،
اس جرثومے نے ظالم و مظلوم، رئیس و فقیر ، طاقتور اورکمزور میں کوئی فرق کیے بغیر لاکھوں انسانوں کو اپنا نشانہ بنایا
میری دعا ہے کہ یہ وبا جلد از جلد ختم ہو جائے،
افسوس! اس وبا کے ختم ہوتے ہی مادی انسان قدرت کے رقص کو روک کر اپنا وحشی رقص اور زیادہ شدت سے  شروع کرد ے گا۔

SHOPPING

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *