خواب لے لو، خواب۔۔اُسامہ ریاض

SHOPPING

’’خواب لے لو، مسکراہٹ لے لو، خوشیاں لے لو ‘‘

سورج کو گرہن لگ چکا تھا اور وہ اندھیرے میں سدا لگاتے چلا جا رہا تھا۔

تبھی اُسے ایک گاہک اپنی طرف بڑھتا ہوا نظر آیا تو اُس کے دل میں امید کی کرن جاگی کہ آج وہ کچھ پیسے کما لے گا اور گھر میں فاقہ ختم ہو جائے گا۔ اس نے جلدی سے تھیلے سے خوشیاں نکالنے کے لیے بازوں کو جنبش دی تو اُسے یاد آیا کہ شہر میں سبھی کے بازو کٹ چکے ہیں اور مسکراہٹوں کا تھیلا کسی پھندے کی طرح اس کے گلے میں لٹکا ہوا ہے۔ اسی کشمکش میں گاہک کہیں اوجھل ہو گیا۔

سڑک کے کنارے کچھ مسکراتی ہوئی لاشیں پڑی تھیں مگر چلتے پھرتے لوگوں کے چہرے سیاہ پڑہ چکے تھے۔ صدا لگاتے لگاتے وہ شہر سے باہر نکل گیا، ایک جھونپڑی کے باہر بیٹھے شخص نے صدا سننے پر اُسے آواز دی کہ مجھے مسکراہٹ چاہیے اور کچھ خواب۔

SHOPPING

اس نے جلدی سے گلے میں لٹکا تھیلا اس کی طرف بڑھایا کہ اس میں سے خواب اور مسکراہٹ نکال لو مگر اُسے ساتھ ہی خیال آیا کہ تم مسکراہٹ کا کیا کرو گے، تم تو اندھے ہو۔

SHOPPING

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *