غزل۔۔فیصل فارانی

پوچھتی ہے وہ کیا کیا اچھّا لگتا ہے
کیسے کہہ دوں مِلنا اچھّا لگتا ہے

اُس کے بُندے، کنگن، ہونٹوں کی سُرخی
اور اُنگلی میں چھلّہ اچھّا لگتا ہے

جھِیل کنارے ساتھ ہو وہ تو پانی میں
ایک ہنسوں کا جوڑا اچھّا لگتا ہے

میری نیند میں اُس کی آنکھیں چمکیں تو
خواب کا وہ لَشکارا اچھّا لگتا ہے

تنہائی جب رات کنارے آ بیٹھے
چاند کے پاس اِک تارہ اچھّا لگتا ہے

میرے بعد بھی میری جو تعریف کرے
ایسا جھُوٹا بندہ اچھّا لگتا ہے

___ فیصل فارانی ___

فیصل فارانی
فیصل فارانی
تمام عُمر گنوا کر تلاش میں اپنی نشان پایا ہے اندر کہِیں خرابوں میں

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست ایک تبصرہ برائے تحریر ”غزل۔۔فیصل فارانی

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *