ہٹلر اور سٹالن کیلئے نوبل انعام ۔۔حسن نثار

دوسری جنگِ عظیم میں نازی جرمنی کے سربراہ ایڈولف ہٹلر کو عموماً ایک سفاک اور جنگی جنون کا حامی حکمران سمجھا جاتا ہے مگر کیا آپ کو معلوم ہے کہ اسی ہٹلر کو نوبل انعام برائے امن کیلئے بھی نامزد کیا گیا تھا؟ جی ہاں! حال ہی میں منظرِ عام پر آنے والے تاریخی حقائق کے مطابق کروڑوں انسانوں کی موت کا ذمہ دار ہٹلر 1939تک نوبل انعام کا مضبوط امیدوار تھا۔

خوش قسمتی سے یہ اعزاز ہٹلر کے بجائے پناہ گزینوں کی بحالی کیلئے کام کرنے والے ایک ادارے کو دے دیا گیا مگر ایک جنگی مجرم کی اس انعام کیلئے نامزدگی کے پیچھے ایک نہایت دلچسپ داستان ہے۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

نوبل انعام برائے امن کیلئے نامزد ہونے کیلئے لازمی ہے کہ مذکورہ فرد یا ادارہ عالمی امن کے فروغ اور مسلح جنگ کے خطرے کو کم کرنے کیلئے اہم کردار ادا کرے سو یہ بات نہایت حیران کن ہے کہ ہٹلر جیسے شخص کو اس اعزاز کیلئے نامزد کیا گیا۔

سویڈن کے رکنِ اسمبلی ایرک برانڈٹ جس نے ہٹلر کی نامزدگی کی پُرزور حمایت کی تھی، کے مطابق نازی جرمنی کا رہنما برطانوی وزیراعظم نیوائل چیمبرز کے ساتھ 1938میں میونخ امن معاہدے پر دستخط کرنے کی وجہ سے نوبل انعام کا مستحق تھا۔

میونخ امن معاہدے کا پسِ منظر ہٹلر کا یہ دعویٰ تھا کہ چیکو سلواکیہ کا مغربی علاقہ دراصل جرمنی کا حصہ تھا اور وہ اسے حاصل کرنے کیلئے فوجی کارروائی کا منصوبہ بنا رہا تھا۔

اِن حالات میں جب بین الاقوامی کشیدگی عروج پر تھی، ہٹلر اور چیمبرلین کے درمیان 29ستمبر 1938کو ملاقات ہوئی۔ اُس ملاقات میں فرانسیسی وزیراعظم ایڈوارڈ وڈالا ڈئیر بھی موجود تھے مگر چیکو سلواکین وزیراعظم کو مذاکرات میں شامل ہونے کی دعوت نہیں دی گئی تھی۔

چیمبرلین نے ہٹلر کو خوش کرنے کیلئے اس کے سارے مطالبات مان لئے اور یوں میونخ معاہدہ کے مطابق 16,000مربع کلو میٹر کا علاقہ جرمنی کے قبضے میں چلا گیا اگرچہ چیک حکومت بالکل رضامند نہ تھی۔

میونخ معاہدہ کے یورپ پر نہایت تباہ کن اثرات مرتب ہوئے اور برطانیہ اور فرانس کی ہٹلر کو منائے رکھنے کی حکمت عملی کا الٹا اثر ہوا اور نازی جرمنی کا فوجی اور معاشی اثرورسوخ بڑھتا چلا گیا۔

ان یورپین طاقتوں کے مطابق وہ ہٹلر کو مطمئن رکھنا چاہتے تھے تاکہ ایک دوسری عالمی جنگ سے بچا جا سکے مگر جیسا کہ تاریخ گواہ ہے کہ یہ ممکن نہ ہو سکا اور برطانیہ اور فرانس کی پُرزور کوششوں کے باوجود ہٹلر کے جنگی عزائم بڑھتے چلے گئے جس کا نتیجہ 1939میں پولینڈ پر حملے اور دوسری جنگِ عظیم کے باقاعدہ آغاز کی صورت میں برآمد ہوا۔

یوں اس احمقانہ خوش آمدی پالیسی کا اختتام 8کروڑ انسانی جانوں کے ضیاع، نسل کشی کے کئی خوفناک واقعات اور ایٹمی ہتھیاروں کی آمد پر ہوا۔

نوبل انعام کی تاریخ ایسے کئی واقعات سے بھری پڑی ہے جب سیاسی مقاصد کیلئے یہ اعزاز ایسے افراد کو نامزد کیا گیا یا نوازا گیا جو کہ بالکل بھی مستحق نہ تھے۔ ایک اور مثال سوویت یونین کے رہنما جوزف سٹالن کی ہے جو کہ ایک وقت میں نوبل انعام کے مضبوط امیدوار تھے۔

ایک تازہ مثال میانمار کی رہنما آنگ سان سوچی کی ہے جنہیں 1991میں نوبل انعام برائے امن دیا گیا مگر روہنگیا مسلمانوں کے قتلِ عام پر میانمار حکومت کی مجرمانہ خاموشی پر انسانی حقوق کی تنظیموں کی جانب سے شدید تنقید کی جا رہی ہے اور ان سے اعزاز واپس لینے کا مطالبہ بھی کیا جا رہا ہے۔

حتیٰ کہ موجودہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو بھی نوبل انعام برائے امن دینے کی بات ہو رہی ہے جو کہ نوبل کمیٹی کیلئے شرمناک حرکت ہو گی۔

Advertisements
julia rana solicitors

جنگ

  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • merkit.pk
  • julia rana solicitors london
  • julia rana solicitors

مہمان تحریر
وہ تحاریر جو ہمیں نا بھیجی جائیں مگر اچھی ہوں، مہمان تحریر کے طور پہ لگائی جاتی ہیں

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply