غمِ دوراں بھی منا کر دیکھوں ۔۔۔فیصل فارانی

غمِ دوراں بھی منا کر دیکھوں
رنگ میں بھنگ مِلا کر دیکھوں

آنکھ مِلتے ہی مِلالوں دل بھی
ہاتھ پہ سرسوں جما کر دیکھوں

پیار گرچہ ہے مکمل اپنا
جسم بھی اِس میں مِلا کر دیکھوں ؟

وہ بھی شاید ہو کنارے پہ کہِیں
پھول دریا میں بہا کر دیکھوں

یاد کی زرد سی شاخوں سے کبھی
کچھ پرندے ہی اُڑا کر دیکھوں

کیا بھلا دنیا میں رہ جائے گا
تیرا چہرہ جو ہٹا کر دیکھوں!

فیصل فارانی
فیصل فارانی
تمام عُمر گنوا کر تلاش میں اپنی نشان پایا ہے اندر کہِیں خرابوں میں

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *