جاپانی کافکا اور مورا کامی کی پُراسرار دنیا۔۔اقبال رشید

SHOPPING

آپ اس کہانی سے لطف اندوز ہوسکتے ہیں، تجسس کے ساتھ ورق پلٹ سکتے ہیں، کچھ جگہ سٹپٹا سکتے ہیں، اور کچھ موقعوں پر مسکرا سکتے ہیں، البتہ 615 صفحات مکمل کرنے کے بعد ، مطمئن ہونے کے باوجود آپ ان معموں کو حل کرنے سے قاصر رہیں گے، جو ناول نگار نے اپنے قارئین کو پھانسنے کے لیے نصب کیے ہیں۔

یہ کوئی حوصلہ افزا بیان نہیں۔ یہ ایک ضخیم ناول ہے، جسے بار بار پڑھنا دشوار ہے، وہ بھی ایسے میں جب آپ کے سامنے اورحان پامک اور مارکیز کے چند اَن چھوئے ناول دھرے ہوں۔

اگر یہ ممتاز ڈائریکٹر مارٹن  سکورسیز کا شاہ کار” شیلٹر آئی لینڈ “ہو، تو پھر اِسے سمجھنے کی غرض سے دو تین بار دیکھا جاسکتا ہے کہ فلم کا دورانیہ فقط ڈھائی تین گھنٹے ہوتا ہے، ناول کا معاملہ دیگر ہے۔

کیا ”کافکا آن دی شور“ کو سمجھنے کی غرض سے بار بار پڑھا جاسکتا ہے؟

اس سبب کہ مورا کامی کا شمار موجودہ عہد کے عظیم فکشن نگاروں میں ہوتا ہے، اور قارئین اس کے گرویدہ ہیں، اس سوال کا جواب اثبات میں ہوسکتا ہے، مگر ایک خاص سطح پر اسے سمجھنے کی ضرورت باقی نہیں رہتی۔

راقم الحروف کےنزدیک مصنف خود بھی اس معاملے میں زیادہ سنجیدہ نہیں کہ ان معموں کا کوئی منطقی حل پیش کیا جائے۔

موراکامی کو پڑھنے سے قبل اُس کی بابت پڑھا۔ اور جو بھی تعارفی اور ہلکے پھلکے تجزیاتی مضامین نظر سے گزرے، اُن میں ان اعتراضات کا ذکر موجود تھا، جو موراکامی کے ہم عصر جاپانی ادیبوں نے شدومد سے اٹھائے۔ اور یہ تھے، موراکامی کے فکشن میں موجود پاپولر لٹریچر کا اثر۔

موراکامی کے ناولز کے ٹائٹل

بے شک یہ موجود ہیں۔ جدید زندگی کے رنگ، تجسس، مزاح، میجک رئیل ازم، سررئیلزم، تاریخ، موسیقی اور ادب کے حوالے اور جنس نگاری۔

ناول بنیادی طور پر دو کرداروں کے گرد گھومتا ہے، ایک ہے پندرہ سالہ کافکا، جو ناول کے پہلے ہی منظر میں گھر سے بھاگنے کا ارادہ باندھ چکا ہے، اور دوسرا ہے حکومتی خیرات پر گزربسر کرنے والا ایک بوڑھا، جو بلیوں سے باتیں کرنے کا ہنر جانتا ہے۔ اور یہی ہنر اُسے ایک پراسرار شخص کے مدمقابل لے آتا ہے۔ اور یہی وہ موڑ ہے، جہاں نوجوان اور بوڑھے کی کہانیاں مل جاتی ہیں۔

جوں جوں کہانی آگے بڑھتی ہے، دونوں کردار ایک دوسرے کے قریب آتے جاتے ہیں۔ اِس عمل کو انجام دینے کے لیے ناقابل فہم، اور کہیں کہیں مصنوعی صورت حال کا اہتمام کیا گیا ہے۔ناول میں جو تاریخ، جاپانی اور عالمی ادب اور موسیقی کے حوالے جابجا موجود ہیں،وہ چس تو دیتے ہیں، مگر ان کی پیش کش کا اہتمام ڈھیلا ڈھالا ہے۔

اگر معما حل نہ ہو، تو وہ بے معنی ہے۔ مورا کامی کے اس ضخیم ناول میں معموں کو حل کرنے کا کوئی اہتمام نہیں کیا گیا، بظاہر انھیں قاری کی دل چسپی کو منظر رکھنے کے لیے برتا گیاہے۔ ہاں، کئی علامتیں بامعنی ہیں، اور ایک فکری پس منظر رکھتی ہیں، مگر تمام نہیں۔

طلسماتی حقیقت نگاری اپنی جگہ صاحب، مگر ناول کے کردار اور واقعات کہیں کہیں ضرورت سے زیادہ غیرحقیقی معلوم ہوتے ہیں۔کرداروں کو ایک دوسرے سے جوڑنے کے لیے ایک ایسا پل تیار کیا گیا ہے، جو پوری طرح دھند میں لپٹا ہے۔ یہ چیز،ایک ضخیم ناول میں،قارئین کو اکتا سکتی ہے۔

مجموعی طور پر ”کافکا آن دی شور“ ایک ایسا ناول ہے، جو پُرتجسس ، پُرلطف اور دل چسپ ہے۔ اسے پڑھ کر آپ میں مورا کامی کو مزید پڑھنے کی خواہش جاگتی ہے، آپ کو یہ احساس تو نہیں ہوتا کہ آپ نے ایک عظیم ناول نگار کو پڑھا ہے۔ البتہ کامیاب ناول نگار کو پڑھنے کا احساس ضرور ہوتا ہے۔

SHOPPING

یہ ناول ایک ایسا تجربہ ہے، جس سے ادب کے قاری کو ایک بار ضرور گزرنا چاہیے۔ بالخصوص ادیبوں کو، جو مورا کامی سے ناول نگاری کے فن سے متعلق بہت کچھ سیکھ سکتے ہیں۔

SHOPPING

مہمان تحریر
مہمان تحریر
وہ تحاریر جو ہمیں نا بھیجی جائیں مگر اچھی ہوں، مہمان تحریر کے طور پہ لگائی جاتی ہیں

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *