لوہڑی مبارک۔۔زاہد علی بھٹی/اردو ترجمہ

پوہ رِدھی تے مانہہ کھاہدی

اس کی شروعات کچھ یوں ہوئی کہ پنڈی بھٹیاں سے متصل ایک گاؤں “کوٹ نِکہ ” میں ایک ہندو کی بیٹی ،جس کا نام “سندر مندری”ہے،اس پر ایک مسلمان زمیندار عاشق ہوجاتا ہے،وہ ہندو لڑکی کے باپ کو  بلاوا بھیجتا ہےاور لڑکی کے رشتے کا مطالبہ کرتا ہے،ہندوزمیندار کے خوف سے رشتے کے لیے ہاں کردیتا ہے۔۔۔لیکن بعد میں “دُلے بھٹی “کےپاس جاکر فریاد کرتا ہے کہ وہ ہندو ہوکر ایک مسلمان کے ہاتھ میں اپنی بیٹی کا ہاتھ نہیں دے سکتا،مجھ پر یہ ظلم ہونے سے بچایا جائے۔۔

لوہڑی
پوہ رِدھی تے مانہہ کھاہدی
لوہڑی پوہ دی اخیرلی رات نوں پکائی جاندی اے تے مانہہ دی پاہلی تاریک نوں کھاہدی جاندی اے انگریزی 13 جنوری بندی اے
جس دی شروعات انج ہوئی کہ پنڈی بھٹیاں دے نال ہک پنڈ اے جس دا ناں “کوٹ نکہ” اے، اوتھے ہک ہندو دی دھی جس دا ناں سندر مندری ہاہ، اوس تے ہک مسلمان زمیندار بدین ہو گیا، ہندو نوں بلا گھلیوس تے ساک منگیوس ہندو ڈردا من گیا تے کجھ دیہاڑیاں دا کارا لے لیوس، ہن ہندو نوں آپنے مذہب توں باہر رشتہ وی منظور ناہ، اوہ جا کے دُلے بھٹی کول پِٹ پیا ، کہ میرے نال ظلم ہو رہیا اے چوہدری مینوں بچا،

دُلا بھٹی جو پنڈی بھٹیاں کا رہائشی اور  بڑاچوہدری ہے،وہ ہندو کو تسلی دیتے ہوئے کہتا ہے کہ فکر نہ کرو،تمہاری بیٹی میری بھی بیٹی ہے،تم جاؤ اور  اُ سے کہوکہ فلاں دن بارات لے کر آجائے۔۔بڑے چوہدری کی اس بات پر ہندو مزید پریشانی کا  شکار ہوتا، سوچتا ہے کہ یہ میرے ساتھ کیا ہوگیا۔۔لیکن پھر چوہدری کے یہ کہنے پر کہ جیسا کہا ہے ویسا کرو،اور پریشان نہ ہو،وہاں سے اُٹھ کر چلا جاتا ہے۔۔

دُلا سانگلے کے ایک نمبر دار کے پاس جاکے لڑکی کا رشتہ وہاں  پکاّ کرتا ہے اور شادی کی وہی تاریخ طے کرآتا ہے جو زمیندار کو بتائی تھی۔۔۔،جب وہ دن آتا ہے تو مسلمان زمیندار بارات لے کر   ہندو لڑکی کے گھر کی جانب روانہ ہوتا ہے لیکن راستے میں ہی دُلے کے ہتھے چڑھ جاتاہے،جہاں دُلا اس کی خوب پٹائی کرتے ہوئے اُس سے یہ اعتراف  کرواتا ہے کہ  کہو وہ لڑکی میری بہن بیٹی جیسی ہے،بلکہ پورے گاؤں کی بیٹیاں بہنیں میری بیٹی بہن ہیں ،اگر تونے دوبارہ ایسی کوئی حرکت کی تو تجھ سے ناک سے لکیریں نکلواؤں گا۔۔

دُلا بھٹی  جو پنڈی بھٹیاں دا وسنیک تے وڈا چوہدری ہاہ ، اوس آکھیا تیری دھی میری وی دھی اے تو جاہ تے اوس بندے نوں آکھ فلانے دیہاڑے جنج لے کے آ جاوے، اوہ بندا پریشان ہوئیا کے ایہہ کی بنیاں، پر دُلے آکھیا کے توں جاہ تے جنویں تئین آکھیا اے انج ای کر،
تے آپ دُلا سانگلے دے ہک ہندو لمبردار کول گیا تے کُڑی دا رشتہ اوتھے کر آئیا تے جنج دی دیہاڑ اوہناں نوں وی اوہو ای دے چھڈی، جدوں اوہ دینہہ آئیا تے مسلمان زمیندار برات لے کے کُڑی دے گھر کول اپڑیا تے راہ وچ دُلے تھہڑا پائیا ہوئیا ہاہ، اوہنا ساری جنج نوں قابو کر لیا تے پؤلے مارن لگ پئے نال ایہہ وی آکھن کہ آکھ ایہہ تیری دھی بھین لگدی اے، پورے پنڈ دے سامنے اوس کولوں سندر مندری نوں دھی بھین اکھوائیا تے نالے نک نال لیکاں وی کڈھوائنیوس،

اُس وقت تک سانگلے والوں کی بارات بھی پہنچ جاتی ہے،رخصتی کے وقت   سندر مندری کو ایک چادر  میں تھوڑا گُڑ شکر ڈال کر دیتا ہے۔جہاں سے لگ بولی گانا شروع کرتے ہیں ۔۔”تیرا کون وچارا”۔۔

اس واقعے کی کی یاد میں لوگوں نے لوہڑی(موسمی تہوار) منانا شروع کی،رات کو لوگ اکٹھے ہوتے،گنے کے رَس کی کھیر پکتی،سردی سے بچنے کے لیے آگ جلائی جاتی،اور بچے آس پڑوس میں لوہڑی مانگنے جاتے،کچی لوہڑی منانے والے  پورا ہفتہ یہ تہوار مناتے،لیکن مغربی پنجاب میں لوہڑی کا تہوار بالکل ہی ختم ہوچکا ہے،کچی پکی لوہڑی کی تو بات ہی چھوڑیے۔۔

اونے چراں نوں سانگلے آلیاں دی جنج وی اپڑ گئی، وداعی ایلے دُلے بھٹی سندرمندری نوں اک ساہلو وچ گڑ شکر پا کے دتی، اوتھوں لوکاں بولی چُکی “تیرا کون وچارا”
ایسے واقعے دی یادگیری اچ لوکی لوہڑی منان لگ پئے رات نوں لوکی اکٹھے ہندے،
روہ دی کھیر پکدی، ٹھڈ توں بچن واسطے اگ بالدے تے بال گھراں وچ لوہڑی منگن جاندے تے جو کجھ کھان نوں ملدا اوہ لئے کے کھا جاندے ، کچی لوہڑی منان آلے پورا ہفتہ پوند ای منان لگ جاندے پر ونڈ توں بعد لاہندے پنجاب وچ لوہڑی اُکا ای مک گئی کچی پکی دی ونڈ تاں پاسے رہ گئی،

خوبصورت لڑکی

تمہارے متعلق کون سوچتا ہے؟

بھٹی قبیلے کا دلا

دلے نے بیٹی کی شادی کی

اسے ایک سیر شکر دی

لڑکی نے سرخ کپڑے پہن رکھے ہیں

لڑکی کی شال پھٹی ہوئی ہے

سندر مندرئیے
نی تیرا کون وچارا
دُلا بھٹی آلا
دُلے دھی ویاہی
سیر شکر پائی
کڑی دا ساہلو پاٹا……

مکالمہ ڈونر کلب،آئیے مل کر سماج بدلیں

مکالمہ
مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *