کشمیر(سرینگر میں گزاری ایک شام)۔۔یوسف

رورو کے وادی دے رہی جلتی ہوئی ہم کو صدا

ہم خوش نفس تکتے رہیں اس آگ کے حسن و ادا

شیشے کو پتھّر جو لگا وہ ریزہ ریزہ ہو گیا
ساری  خماری چھو ہوئی ، شب ہےخون  تم کو سدا

کیوں کر کوئی  آزاد ہو گر دل کو آزادی  نہیں
جسموں کو قید ہے سو ہے اور روح دے تم کو صدا

سبزے میں آتش سبز رنگ، کیا خون ہے کیا خاک ہے؟
کیا عشق ہے کیا لاگ ہے؟ کیا حسن کا حق ہو ادا؟

سنتے تھے غالب عشق میں بےکار ہو کر رہ گۓ

 ہم نے تو کیا کچھ کر لیا اس شوق میں خود کو گداؔ

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *