آرمی چیف توسیع کیس۔۔۔سید عارف مصطفیٰ

SHOPPING

اس بہانے بہت سے اہم سوالات کے جوابات ڈھونڈھ ہی لیے جائیں!
یہ کہنا تو بہت مشکل ہے کہ آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کے حوالے سے  سپریم کورٹ کیا فیصلہ دے گی لیکن خواہ کوئی بھی فیصلہ دے مگر یہ خدشہ بہت قوی ہے کہ حکومت کی نالائقی کی وجہ سے آرمی چیف کو جس شدید مشکل اور خفت آمیز صورتحال سے دوچار ہونا پڑا ہے اسکی وجہ سے آئندہ اس حکومت اور عسکری قیادت کا رومانس مزید نہیں چل پائے گا اور اب مصلحت کی کتاب میں سے شاید وہ پیج ہی پھٹ جائے کہ جس پہ بیک دونوں کے موجود ہونے کا بڑا شہرہ تھا اور اب فوج کے لیے بھی حکومتی ناہلی کی برداشت کی اخیر ہوگئی ہے اور اب وہ ان کی راہ کے کانٹے چننے کی مزید زحمت نہیں اٹھائے گی ۔۔۔ ایک امکان اس بات کا بھی ہے کہ اب شاید جنرل باجوہ اس سبکی کو برداشت نہ کرتے ہوئے اس توسیع کو زیادہ نہ جھیل پائیں اور گھر چلے جائیں ۔۔۔ لیکن خیر اب جو بھی ہو یہ کیس بہرطور بہت سے اہم پہلوؤں کا حامل ہوگیا ہے جو حالانکہ دائر تو محض سستی شہرت یا کسی چھوٹے موٹے مفاد کے حصول کے لیے کیا گیا تھا کیونکہ اسے ریاض احمد راہی نامی جس شخص نے دائر کیا ہے وہ خود بھی ایک وکیل ہے اور کسی نہ کسی حوالے سے مقدمات کرتا رہتا ہے لیکن پھرمیڈیا کی خبروں میں  رہنے کی ٹھرک پوری ہونے کے بعد ایسے کیس کی سماعتوں میں زیادہ دلچسپی نہیں لیتا اور کیسز یا تو خارج ہوجاتے ہیں یا معلق ہوکر اسکی فائلیں دیگر فائلوں کے ڈھیر میں دبتی چلی جاتی ہیں اور پھر طاق ِ نسیاں کا حصہ بن جاتی ہیں ۔۔۔

لیکن یہ توسیع والا کیس ہی ایسا تھا کہ جب اسے اس کی سنگینی کا اندازہ ہوا تو اس نے اسے واپس لینے کی کوشش کی لیکن وہ اتنا گھبرا گیا تھا کہ خوف یا پھر بدحواسی کے مارے اس مقصد کے لیے نہ تو خود پیش ہوا اور نہ ہی اسکے لیے درکار تقاضوں کی تکمیل کا خیال رکھ سکا جیسے حلف نامے کا نتھی کیا جانا وغیرہ ، لیکن اس کیس سے پراسرار دستبرداری بھی اتنی حیران کن نہ تھی جتنی کی جاتے جاتے چیف جسٹس کا اس کا از خود نوٹس لینا اور اس میں سے جھلکتے بلکہ چھلکتے کئی قومی مفاد کی پاسداری کے لیے انکا یوں ڈٹ جانا ۔۔۔ لیکن اچھا ہے کہ اسی کیس کے بہانے اب قومی اہمیت کے کچھ اہم سوالات کے جوابات بھی ڈھونڈھ لیے جائیں اور چند پیچیدہ معاملات کو بھی آسان کرلیا جائے جن میں سب سے اہم تر تو سول بلادستی کے گمان کو حقیقت میں بدلنے کا معاملہ ہے اور اسکے لیے ضروری ہے کہ ان ناگزیر حالات کی جامع تشریح کھوج لی جائے کہ جو کسی آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کے لیے فی الواقع ضروری بلکہ بیحد ناگزیر ہیں اور وہ پیمانہ بھی وضع کرلیا جائے جو اس خطرے یا بحران کی امکانی مدت کا کچھ تعین کرسکے تاکہ بےدھڑک ایک مکمل 3 برس کی پوری طویل مدت دینے کے بجائے اس ناگزیر صورتحال کی مدت کی حد تک ہی مدت ملازمت میں کی جانے والی توسیع کو پابند کیا جاسکے تاکہ چین آف کمانڈ میں نیچے موجود تقرری کے منتظر کسی نہایت اہل اور بہت موزوں فرد کے ساتھ زیادتی نہ ہوسکے اور ایسی توسیعی لنگڑی پالا میں اس کی کا ترقی کا حق نہ مارا جاسکے کیونکہ پورے 3 برس کی توسیع کے نتیجے میں اس مدت میں اس وقت موجود 10 کور کمانڈر میں سے زیادہ تر ریٹائر ہوجاتے ہیں۔

یہ توسیع اس لیے اور بھی خراب ہے کیونکہ کئی باصلاحیت جنرلز کا کیریئر ختم کردینے کے علاوہ اسکے نتیجے میں یہ بھی ہوسکتا ہے کہ نئے کورکمانڈر بننے والوں میں سے کوئی بعد میں پرانوں سے پہلے حاکم وقت کی نگاہ انتخاب کا مرکز بن جائے اور بچے کھچے پرانے پھر ٹاپتے رہ جائیں اور کئی بار ایسا ہوا بھی ہے ۔ یہاں پہ میری تجویز یہ ہے کہ جس طرح عدلیہ میں بھی صوبائی و مرکزی چیف جسٹس کا تقرر صرف سنیاریٹی کی بنیاد پہ خود بخود ہوجاتا ہے فوج میں آرمی چیف کے لیے بھی اسی طریقہء کار کو اپنا لیا جائے تاکہ لابنگ اور مختلف قسم کی ترجیحات وتعصبات کے امکانات سر نہ اٹھا سکیں کیونکہ جس طرح ججز کے بارے میں یہ تصور موجود ہے کہ برسہابرس کی قانونی موشگافیاں انہیں صلاحیت میں بہت قریب کردیتی ہیں اسی طرح یہ کلیہ جنرلز کے لیے بھی لائق تردید نہیں ہے اور اسی طرح جیسا کہ چیف جسٹس کی مدت ملازمت میں توسیع کا کوئی تصور نہیں ہے اسی طرح آرمی چیف کی ملازمت میں بھی ہرگز کوئی اضافہ نہ کیا جائے البتہ اگر وہ غیر معمولی صلاحیت کا حامل ہے یا نہایت غیرمعمولی بحرانی حالات ہوں تو اسکی ریٹائرمنٹ کے بعد کچھ عرصے کے لیئے یا جب تک ضروری ہو اسے وزیراعظم کا مشیر دفاع مقرر کرنے کی راہ اپنائی جائے –

میری دانست میں اب وقت آگیا ہے کہ ٹلتے رہنے کے بجائے دفاعی حرارکی کے حوالے سے اہم اقدامات روبہ عمل لے آئے جائیں اور اس مد میں بڑا قدم یہ ہوسکتا ہے کہ چیئرمین چیف آف جوائنٹس اسٹاف کمیٹی کے قطعی اضافی عہدے کو آرمی چیف کے عہدے میں ضم کردیا جائے اور اگر ممکن ہو تو سوئزرلینڈ اور کئی ملکوں کی طرح باری باری باری تینوں سروسیز سے آرمی چیف لیے جانے کا نظام اپنا لیا جائے البتہ ملٹری سے آنے والے چیف کو ڈیوڑھی مدت دی جائے –

SHOPPING

اسکے علاوہ یہ بھی تجویز ہے کہ آئین میں ترمیم کرکے آرمی چیف کی میعادی ملازمت کا سلسلہ ختم کرکے وہ یا تواپنی طبعی عمر پہ ہی ریٹائرہوجایا کرے یا اگر اسے چیف بننے پہ دوسال بھی نہ مل رہے ہوں تو اسے دوسال مکمل کرنے کا قانونی تحفظ دیدیا جائے تاہم توسیع بالکل نہ دی جائے – ضرورت اس امر کی بھی ہے کہ سول عسکری بالادستی کے قضیئے سے فول پروف انداز میں اب دائمی طور پہ نمٹ لیا جائے اور اس حوالے سے آرمی چیف کے منصب کو باقی دنیا بھر کے ممالک کی مانند اسی طرح کے مروجہ پروٹولول کا پابند کیا جائے اور اسکی ملازمت کو باضابطہ طور پہ سیکریٹری دفاع کی حرارکی میں اس طرح سمویا جائے کہ عملی طور پہ آرمی چیف کو اس کے ماتحت کے طور پہ ہی کام کرنے کو یقینی بنا دیا جائے اور اس حوالے سے دفاعی امور کے بارے میں اہم نوعیت کے فیصلوں کی درجہ بندی کی جانی لازمی ہے اور درجہ اؤل قسم کے تمام فیصلوں میں سپریم کمانڈر یعنی صدر اور چیف ایگزیکیٹیئو یعنی وزیراعظم کی منظوری لازمی ٹہرادی جانی چاہیئے ورنہ ایسا کوئی بھی حکمنامہ ساقط العمل سمجھا جائے ۔۔۔ مجھے احساس ہے کہ سول بالادستی کے لیے بظاہر یہ تجاویز غیر معمولی معلوم ہورہی ہونگی لیکن دنیا بھر میں ایسا ہی ہوتا ہے اور کئی بار کی آئین شکنیوں اور چار بار مارشل لاؤں کے نفاز کے تناظر میں اب ہماری ریاست کے لیئے بھی ان اہم فیصلوں کے بغیر چارہ بھی نہیں ہے-

SHOPPING

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *