ہجر سرد شام سا۔۔۔رمشا تبسم

ہجر سرد شام سا
میرے آنگن میں آن بیٹھا ہے
یادوں کی دھند کے گہرے بادل
اٹھکیلیاں اذیت  سے کرتے ہیں
چاند گھونگٹ نکالے بیٹھا ہے
روح اندھیرے میں  کھوئے جاتی ہے
افق پر خامشی ہے
دل میں کہرام سا مچا ہے۔۔
ہجر سوکھے پتوں سا
میرے آنگن میں آن بیٹھا ہے
درختوں کی پیلی رنگت سے
خزاں وجود پر چھائے جاتی ہے
بہار یادوں کی اوٹ میں
 اب منہ چھپائے بیٹھی ہے۔۔
ہجر ننھے جگنو سا
میرے آنگن میں آن بیٹھا ہے
بُجھی روشنی جگنو کی
میرے دامن کو  سلگائے جاتی ہے
روشنی  اداسی کے دامن میں
 اب منہ چھپائے بیٹھی ہے۔۔
اب تیرا عکس سراب سا
میرے آنگن میں  آن بیٹھا ہے
خواہش دید کی  دل میں
طوفاں اٹھائے جاتی ہے
میں تیرے عکس کے پہلو میں
 اب آنسو بہائے بیٹھی ہوں
ہجر سرد شام سا
میرے آنگن میں آن بیٹھا ہے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *