تمنا۔۔۔رمشا تبسم

تمنا کا الگ قصہ ہے
تمنا شروعات سے اختتام تک کا سفر ہے
تمنا میں مکمل داستان سمٹی ہے
تمنا ہی محبت کی کل کائنات ہے
تمنا ہی میری حیات ہے
تمنا میں
“تم” بھی ہو
“من” بھی ہے
اور آخر میں “نا” بھی ہے
اور “نا” تو “لا” ہے
عشق کی پہلی منزل بھی تو “لا” ہے
“لا” ہے تو صرف تُم ہی تُم ہو
اور تُم ہی تو “تمنا” ہو
“تم” ہی تو” تمنا” کہ من میں زندہ ہو
باقی سب اب “نا” ہے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست ایک تبصرہ برائے تحریر ”تمنا۔۔۔رمشا تبسم

  1. بسم اللہ الرحمن الرحیم
    اسلام علیکم!۔۔۔
    رمشا جی!۔۔۔ دل موہ لیا ۔۔۔ آپ کی تحریر نے۔۔۔ کیاخوبصورتی سے ” تمنا “میں چھپے مفہوم کو بیان کیا ہے آپ نے ۔۔ اس نثری نظم کے لیے تعریف بے تحاشا ۔۔۔ لیکن😔الفاظ گمشدہ ہیں ۔۔۔۔تم ۔۔۔ من ۔۔۔ نا ۔۔۔ عمدہ ۔۔۔۔
    اللہ پاک آپ کی تمنا پوری فرمائے۔۔۔۔ 😀 آمین۔۔۔

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *