• صفحہ اول
  • /
  • ادب نامہ
  • /
  • خامہ بدست غالب(مرزا غالب کے ساتھ ایک مکالمہ)۔۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

خامہ بدست غالب(مرزا غالب کے ساتھ ایک مکالمہ)۔۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

دولت بہ غلط نبود از سعی پشیماں شو
کافر نہ توانی شد، ناچار مسلماں شو
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰
مرزا غالب کے ساتھ ایک مکالمہ
س پ آ ۔تُو کیا ہے؟ مسلماں ہے؟یا کافر ِ زناّری
کچھ بھی ہے، سمجھ خود کو اک معتقد و مومن
مخدوم و مکرّم ہو، ماجد ہو، مقدس ہو
ممتاز و منور ہو، برتر ہو زمانے سے
ہاں، دولت ِ لا فانی ہے رتبہ ٔ شہ بالا
اس فیض رساں سے تو تعزیر نہیں ہوتی
بے لوث بہی خواہ تو بے مہر نہیں ہوتا
اے غالبؔ ِ منعم تُو،خود اپنی مساعی پر۔۔۔
(تھی جس کی ضرورت کیا، تم جیسے موحد کو؟)
خود آپ ہی نادم ہو۔۔۔۔

غالب ۔یہ ایسا تفّقدہے، ایثار یہ ایسا ہے
ہے ایسی بہی خواہی ، ہے ایسی شفاعت یہ
جو خود میں مکمل ہے، تسکین کا باعث ہے
زناّر پہننے کی طاقت ہی نہیں تجھ میں
یہ تاب و تواں غالبؔ، ملتی ہے فقط اس کو
جو اپنی مساعی پر شرمندہ نہیں ہوتا

س پ آ۔بہتر ہے رہو شاکر، شرمندہ ٔ احساں ہو
غفران و واگذاری اب بھی ہے دسترس میں
اصنام پرستی ہے مشتاق ِ بغلگیری
تم سے تو میاں غالب، اب یہ بھی نہیں ممکن
لیکن ہے ابھی ممکن اللہ سے یارانہ
قرآت و تلاوت بھی، انفال و وظیفہ بھی
اب ایک یہی رستہ گر باقی بچا ہے، تو
’’ناچار مسلماں شو‘‘
“لاچار مسلمان شو”

غالب۔ اچھا تھا کہ کہہ دیتے: بیکار مسلماں شو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شعر کا آزاد ترجمہ
نیک بختی و کامرانی سے کبھی بھول چوک نہیں ہوتی ۔ (لہذا، اس ضمن میں) تو اپنی مساعی پر خود ہی نادم ہو جا (اور چونکہ) کافر ہونے کی تجھ میں صلاحیت نہیں، نا چار مسلمان ہو جا۔

ستیہ پال آنند
ستیہ پال آنند
شاعر، مصنف اور دھرتی کا سچا بیٹا

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *