جلیلہ حیدر اور بلوچستان۔۔۔نادر زادہ

پاکستان بالخصوص اہلیان بلوچستان کے لیے اعزاز کی بات ہے  کہ جلیلہ حیدر بی بی سی کی  رپورٹ کے مطابق دنیا کی  100 بااثر خاتون  کی فہرست میں   شامل ہو گئی ہیں ۔ جلیلہ حیدر کا تعلق اُس بد قسمت قوم اور صوبے سے ہے جن کے   نوجوان طبقے کی پوری زندگی لاشیں  اٹھانے اور لاشیں دفنانے یا شہر کی  گلیوں بازاروں  یا پریس کلبوں کے سامنے احتجاج میں گزررہی ہے ۔ مگر اعزاز کی بات ہے کہ اسی خون آلود شہر کی  بیٹی دنیا کی  100 بااثر خواتین میں شامل ہوگئی ہے ۔

جلیلہ حیدر یوں تو کئی سالوں سے ایک سول ایکٹیوسٹ اور وکیل ہے لیکن  نیشنل اور انٹرنیشنل میڈیا کی توجہ کا مرکز  وہ تب بنیں  جب  2018  میں  پریس کلب کوئٹہ کے سامنے 2 دہائیوں سے جاری ہزارہ قتل عام سے تنگ تا دم مرگ بھوک ہڑتالی کیمپ لگا کر  آرمی چیف کو کوئٹہ آنے پر مجبور کردیا اور آرمی چیف جنرل قمر باجوہ صاحب اور دیگر اعلیٰ سول و عسکری قیادت کے سامنے جس طرح کوئٹہ کے شہریوں کے  تحفظات ،شکایات اور اداروں کی کوتاہیوں کو  پیش کیا ، جس پر مخالفین بھی داد دینے پر مجبور ہوگئے  ۔

جلیلہ حیدر کے  مطابق وہ خود جیو نیوز اور ٹویٹر پر دوستوں کی مبارک باد کے پیغامات سے آگاہ ہوئی کہ وہ اس  فہرست   میں شامل ہوگئی ہیں  اور وہ اُس وقت بلوچستان یونیورسٹی میں جنسی ہراسگی سے متاثرہ بچیوں کے حق اور اس کے ملزموں اور درندہ صفت انسانوں کے خلاف احتجاج میں مصروف تھی ۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *