اصلاحات کے خلاف مزاحمت کیوں؟۔۔۔اسلم اعوان

وزیراعطم عمران خان نے سول سروس سٹرکچر کی تشکیل نو اور پولیس میں اصلاحات کےلئے ڈاکٹر عشرت حسین کی سربراہی میں جو اعلی سطحی ریفارمز کمیٹی بنائی تھی اس نے چودہ ماہ کی عرق ریزی کے بعد مجاز اتھارٹی کوتجاویز پیش کر دیں،جسمیں انتظامی ڈھانچہ پہ ملک کے چیف ایگزیکٹو کی گرفت مضبوط بنانے کے علاوہ عام آدمی کو پولیس فورس کی دست درازی سے بچانے اورشہریوں کی نجی زندگی کو خفیہ اداروں کی مداخلت سے محفوظ بنانے کی قابل عمل تجاویز شامل ہیں۔لیکن توقع کے عین مطابق پولیس خود کو کسی بھی قسم کے سول کنٹرول اور جوابدہی کے کسی میکانزم کے تحت لانے کے خلاف مزاحمت پہ اتر آئی۔دراصل ریفارمز کمیٹی کے پیش نظر فوری توجہ کے طالب دو مسائل ہیں،پہلا یہ کہ پولیس فورس اور سروسز فراہم کرنے والے محکموں پہ ملک یا صوبہ کے چیف ایگزیکٹوکی اتھارٹی کیسے قائم ہو،دوسرے عام شہری کو پولیس سمیت قانون نافذ کرنے والی دیگرایجنسیوں کی دست درازیوں (High handedness)سے کیسے بچایا جائے؟۔امر واقعہ یہ ہے کہ ہمارے پاس عام شہریوں کے خلاف پولیس فورس کی دست درازیوں کے مدوا کا کوئی نظام موجود نہیں،پولیس اگرکسی کو تشدد کا نشانہ بنائے یا گولی ماردے تو اسکے خلاف انکوائری یا تفتیش بھی خود پولیس کرے گی،یہ کیسے ممکن ہے کہ کوئی پولیس اہلکار منصفانہ تفتیش کر کے اپنے پٹی بند بھائی کو تختہ دار تک پہنچائے؟یہی وجہ ہے جو پولیس کے ہاتھوں انسانی حقوق کی خلاف وردیوں کے ہزاروں واقعات منظرعام پہ آنے کے باوجود ہمارا فوجداری نظام عدل آج تک کسی بھی پولیس اہلکارکو سزا نہیں دے سکا۔سیکڑو ں ملزمانکی مبینہ پولیس مقابلوں میں ہلاکت،بیگناہوں کو جھوٹے مقدمات میں ملوث کرکے انکی زندگیاں برباد کرنے،تھانوں میں مردوں،عورتوں اور بچوں کو حبس بے جا  میں رکھ کے ان سے غیر انسانی سلوک روا رکھنے کے سینکڑوں واقعات میڈیا میں ہر روز رپوٹ ہوتے ہیں لیکن یہ ساری قہرمانیاں قانونی پیچیدگیوں میں گم ہوکے رہ جاتی ہیں۔ہرچند کہ عوامی جذبات کو ٹھنڈا کرنے کی خاطر وقتی طور پہ پولیس اہلکاروں کے خلاف کیس درج کر کے گرفتاریاں بھی کی گئیں لیکن ایسے مقدمات کوہموار عدالتی عمل کے ذریعے منظقی انجام تک پہنچانے کی نوبت کبھی نہیں آئی۔پہلے تو ایسے تمام مقدمات کی تفتیش خود پولیس کے ہاتھ میں ہونے کی وجہ سے قانونی عمل کے ذریعے کسی بھی پولیس والے کوانجام تک پہنچانا ممکن نہیں ہوتا دوسرا پولیس مظالم کے خلاف قانونی چارہ جوئی کرنے والوں کو عدالتیں تحفظ نہیں دے سکتیں،لحاظا  پولیس کے ستم رسیدہ تمام مظلوم خاندان بلآخر تھک ہارکے صلح پہ مجبور ہو جاتے ہیں۔اگر اس ملک کے عدالتی نظام میں کوئی ایک ایسی نظیر موجود ہو جس  میں پولیس اہلکار کوکسی بیگناہ شہری کو جھوٹے مقدمات میں پھنسانے ،حبس بیجاہ میں رکھ کے جسمانی اور ذہنی اذیت پہنچانے،چادر و چار دیواری کا تقدس پامال کرنے یا مبینہ پولیس مقابلوں میں ماورائے عدالت قتل کے جرم میں کبھی سزا ملی ہو تو سامنے لائی جائے۔انہی ستم کاریوں کے باعث معاشرے میں بڑھتی ہوئی گھٹن اور بے بسی رفتہ رفتہ نفرتوں میں ڈھل جائے گی،آج بھی منتخب حکومت نے اگر پولیس میں اصلاحات متعارف نہ کرائیں تو سوسائٹی کا پیمانہ صبر لبریز ہو جائے گا۔شاید اسی اجتماعی خواہش کے پیش نظر وزیراعظم کی ریفارمز کمیٹی نے سسٹم میں توازن لانے کی خاطر حسب ذیل تجاویز مرتب کی ہیں۔

۱۔شہریوں کی شکایات کے ازالہ کےلئے پولیس کمپلنٹ اتھارٹی قائم کی جائے گی جو کسی بھی کیس میں پولیس کے مبینہ غیرمناسب رویہ کی چھان بین کرے گی۔

۲۔یہ اتھارٹی ایک ریٹائرڈ پولیس آفیسر،ایک قانون دان،سرکاری وکیل استغاثہ اورایک سرکاری افیسر پہ مشتمل ہو گی،جو شہریوں کے مسائل اورشکایات پہ ازخود کاروائی کر سکے گی۔

۳۔وزیر اعلی کے ماتحت اسی اتھارٹی کے اراکین کو پولیس ریکارڈ تک رسائی ہو گی ۔

۴۔صوبائی حکومت اور آئی جی پولیس تفتیش کے طریقہ کار اور دیگر کاموں سے متعلق جامع طریقہ کار مرتب کریں گے۔

۵۔ٹیکنالوجی کے استعمال اور فرانزک سائنس ایجنسیوں کو صوبوں میں متحرک کیا جائے گا۔

۶۔ہرسال کے شروع میں آئی جی پولیس صوبائی حکومت کو محکمہ کے جائزہ کا شیڈول فراہم کرے گا۔

۷۔تمام جائزہ رپوٹس کو صوبائی کابینہ کی منظوری کے بعد شائع کیا جائے گا۔

۸۔ان رپوٹس کو کابینہ کی کمیٹی برائے امن عامہ کی میٹنگ میں پیش کیا جائے گا۔

۹۔جائزہ یونٹوں میں تعینات تمام اہلکاروں کا سندیافتہ ہونا لازمی ہو گا۔

10۔صوبائی محکمہ داخلہ کے تحت پبلک سیفٹی کمیٹی کےلئے کمشن بنایا جائے گا،جو ایک ڈائریکٹر جنرل اور چھ انسپکٹرز پہ مشتمل ہو گا۔

۱۱۔ایک ڈیموکریٹک احتساب کمیٹی بھی بنائی جائے گی،جو وزیراعلی سیکریٹریٹ کے ماتحت کام کرے گی،جس میں ایک کنوئینرسمیت،تین یا چار صوبائی وزیر،چیف سیکرٹری،سیکرٹری داخلہ،ایڈیشنل آئی جی اسپیشل برانچ،جوائنٹ ڈائریکٹر آئی بی اور آئی جی پولیس شامل ہوں گے۔

12۔یہ کمیٹی پولیس اصلاحات کےلئے مختص فنڈ سے متعلق فیصلے،قوانین اور امن و امان کے حوالے سے سفارشات پیش کرے گی۔

13۔تھانوں کے فنڈ پہ ایس ایچ اوز کو کامل اختیارات حاصل ہو گا۔

14۔صوبائی حکومت محکمہ پولیس کے تمام اخراجات سے متعلق تفصیلی طریقہ کار جاری کرے گی۔

15۔ہر تھانہ کے اخراجات کی کم سے کم حد کا تعین کیا جائے گا۔

16۔افسران کی تعیناتی(ڈی پی اوز،آر پی اوز اور ایڈیشنل آئی جی کےلئے سینئر افسران پر مشتمل بورڈ بنایا جائے گا،یہ بورڈ افسران کی کاکردگی سے متعلق رپوٹ آئی جی پولیس کو دے گا جو تین افسران کے نام وزیراعلی کو بھجوائیں گے۔

17۔حکومت جواز پیش کر کے کسی بھی پولیس افسر کا قبل از وقت تبادلہ کر سکے گی۔

18۔انتظامی اور تحقیقاتی عہدوں پہ صرف تربیت یافتہ پولیس افسران ہی تعینات ہو سکیں گے۔

19۔تمام شراکت داروں کی مشاورت سے ڈھانچہ تیار کیا جائے گا جو کابینہ سے منظور شدہ ہو گا۔مزید یہ کہ پولیس میں ٹیکنالوجی کے استعمال کو فروغ دینا۔سیف سٹی اتھارتی کو تمام صوبوں میں قائم کرنا۔آئی جی کے تابع سیف سٹی اور اسپیشل برانچ کو وزیراعلی کے ماتحت لانا۔آئی بی اور آئی ایس آئی کی طرح پولیس افسران کے علاوہ سویلین کیڈٹ  کی علیحدہ بھرتی کرنا۔استغاثہ کو بااختیار اور مستحکم کرنا۔محکمہ داخلہ کے تحت کابینہ کی سب کمیٹی برائے قانون و آرڈر مقدمات کو جلد نمٹانے سے متعلق جائزہ لے گی۔پولیس کی آپریشنل خود مختیاری کو یقینی بناتے ہوئے حکومت کو اختیار ہو گا کہ وہ پولیس سے کارکردگی بارے جواب طلب کر سکے۔یہ ہیں وہ سمجھ میں آنے والی اصلاحاتی تجاویز جن کے خلاف مزاحمت کر کے پولیس نے اپنی سرکشی کو بے نقاب کردیا۔وہ لوگ جو عوام کےلئے لامحدود تعزیرات کے دام بچھاتے ہیں اور اس دام کو قانونی تحفظ کا نام دیتے ہیں،ان سے اگر اپنی قانونی حدود و قیود پوچھی جائیں تو وہ تڑپ اٹھتے ہیں،حکومت اصلاحات کے ذریعے ہی پولیس فورس کو ریگولیٹ کر کے اپنی اتھارٹی قائم کر سکتی ہے کیونکہ وہ حکومت جسے اپنی فورسیز پہ مناسب کنٹرول حاصل نہیں ہوتا،عوام اسے اپنی نظروں سے گرا دیتے ہیں۔بیشک،جب تنخواہ دار سرکاری اہلکار شہریوں کے جان مال اور عزت کی قیمت پہ اپنے ادارہ جاتی مفادات کو پروان چڑھانے پہ کمربستہ ہوں تو ریاست کمزور ہوجاتی ہے۔سپائی نوزا نے کہا تھا کہ مملکت کوشہری کے ذہن پہ جتنا کم اختیار ہو گا،دونوں کے حق میں مفید ہو گا،مملکت کا اختیار اگر اجسام و افعال سے بڑھ کرانسانوں کے افکار و اروح تک جا پہنچے تو نشو ونما ختم اورمعاشرہ برباد ہو جاتا ہے۔

Aslam Awan
Aslam Awan
اس وقت یبوروچیف دنیا نیوز ہوں قبل ازیں پندرہ سال تک مشرق کا بیوروچیف اور آرٹیکل رائٹر رہاں ہوں،سترہ سال سے تکبیر میں مستقل رپوٹ لکھتا ہوں اور07 اکتوبر 2001 سے بالعموم اور 16مارچ 2003 سے بالخصوص جنگ دہشتگردی کو براہ راست کور کر رہاں ہوں،تہذیب و ثقافت اور تاریخ و فلسفہ دلچسپی کے موضوعات ہیں،

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *