قلم اور اُنگلی کی طاقت۔۔۔۔عزیز خان /اختصاریہ

کل عرفان صدیقی صاحب کی ایک تصویر دیکھی اُن کے جس ہاتھ میں ہتھکڑی ہے اُسی ہاتھ میں قلم پکڑا ہوا ہے۔
بہُت دکھ ہوا۔۔۔ جس نے بھی کیا اچھا نہیں ، ایک 78 سال کے اُستاد کے ساتھ یہ سلوک۔۔ آخر کیوں ؟
عرفان صاحب کا قصور شاید یہ ہے کہ وہ مریم نواز اور نواز شریف کی تقاریر لکھتے ہیں اور شاید (ووٹ کو عزت دو) کا نعرہ بھی عرفان صاحب نے ہی لکھ کے دیا ہو۔
اتنی تذلیل ایک اُستاد کی جس نے کی وہ عمران خان کی حکومت کے خیرخواہ نہیں ہیں۔۔۔۔سیاسی دشمنی تو نواز شریف اور زرداری سے ہے،اسی تصویر میں وہی ہتھکڑی ایک اور نامعلوم شخص کو بھی لگی ہوئی ہے اور اُس نے قلم نہیں اپنی اُنگلی کھڑی کی ہوئی ہے۔
ابھی ایک ٹی وی چینل پر خبر دیکھی کہ کل عرفان صدیقی کو 14 دن  کے ریمانڈ جوڈیشل  پر بھیجنے والے جج نے اتوار چھُٹی والے دن عرفان صدیقی کی ضمانت لے لی۔

اب میں یہ سوچ رہا ہوں کہ آزاد عدلیہ نے یہ ضمانت قلم کی طاقت سے لی ہے یا اُنگلی کی طاقت سے۔۔۔ آپ بھی سوچیں اور اگر سمجھ میں آجائے تو ایک نعرہ ضرور لگانا ہے!

پاکستان زندہ باد۔۔۔!

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *