عورت۔۔۔۔روئیس ممتاز/نظم

SHOPPING
SHOPPING

اُسے تم کیا کہوگے جو نئے ساتھی بنانے کو
پرانے دوستوں سے دامن دل یوں چھڑاتا ہے
کہ جیسے داغ کوئی اپنے دامن کا چھپاتا ہے
کہ جیسے آنکھ ملتے ہی کوئی آنکھیں چُراتا ہے
کہ جیسے بھولنا چاہے تو کوئی بھول جاتا ہے!

تم اُس کو کیا سمجھتے ہو کہ اچھا وقت آتے ہی
جو مشکل وقت کے ساتھی تھے اُن کو بھول جاتا ہے
کہ جن کےدل میں رہتا تھا اُنہی کا دل دُکھاتا ہے
بنانے میں جو شامل تھے اُنہی کو اب مٹاتا ہے
وہ انساں ہی نہیں جو اپنا ماضی بھول جاتا ہے!

بڑے بے درد ہوتے ہیں
یہ ہم جو مرد ہوتے ہیں
ہمارے ہی سبب عورت کو کتنے درد ہوتے ہیں
کوئی جیتا ہے کیسے جب کہ اتنے درد ہوتے ہیں؟

وہ ہر اک چیز جو عورت سے وابستہ ہے، عورت ہے
وہ اُس کی ریشمی زلفوں میں جو کنگھا ہے، عورت ہے
جو اُس کے سامنے رکھا ہوا شیشہ ہے، عورت ہے
سمندر سی حسیں آنکھوں میں جو قطرہ ہے ،عورت ہے
وہ ہر اک شعر عورت پر کوئی کہتا ہے، عورت ہے
جو ہے اب کوکھ میں عورت کے ،وہ لڑکا بھی ہو تو کیا
کہ اُس لڑکے کے  دل میں اب جو آئینہ ہے ،عورت ہے !

عجب ہے مرد کی فطرت بہت ہی ظلم ڈھاتا ہے
کبھی عورت کی صورت تھا جو عورت کو ستاتا ہے
وہ انساں ہی نہیں جو اپنا ماضی بھول جاتا ہے!

SHOPPING

 

مجلس فروغ اردو ادب ،قطر!

SHOPPING

مکالمہ
مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *