ٹرانسلیشن آف کیٹس۔۔۔۔ اجمل صدیقی

Ode to Grecian
Urn
Thou still unravish’d bride of quietness,
Thou foster-child of silence and slow time,
Sylvan historian, who canst thus express
A flowery tale more sweetly than our rhyme:
What leaf-fring’d legend haunts about thy shape
Of deities or mortals, or of both,
اے ظرف مصور!
تجھے گلداں کہوں کہ خاکداں؟
تو دوشیزہ سکوت ازل ہے
دختر عصر رواں ہے
نقش مشجر
تاریخ تیرے سامنے گنگ اور پریشاں
شعر و سخن تیرے آگے بے زباں
کون جانے ترے پیکر رنگیں کے پس پردہ داستاں؟

In Tempe or the dales of Arcady?
What men or gods are these? What maidens loth?
What mad pursuit? What struggle to escape?
What pipes and timbrels? What wild ecstasy?

tripako tours pakistan

Heard melodies are sweet, but those unheard
Are sweeter; therefore, ye soft pipes, play on;
کیا ہے منقش ترے صفحہ وجود پر
آدم ہیں یہ  یا اصنام؟
گریزپا ہیں نازنین خوش اندام؟
یہ کیسی کشاکش ہے؟یہ کتنی رنگین کشمکش ہے ؟
یہ کیسی پیش و پس ہے ؟
کیا وارفتگی ہے ؟کیا بے رخی ہے ؟
سماعت آلود نغمے بہت شیریں ہیں
لیکن
ان سنے
شیریں تر

Not to the sensual ear, but, more endear’d,
Pipe to the spirit ditties of no tone:
Fair youth, beneath the trees, thou canst not leave
Thy song, nor ever can those trees be bare;
Bold Lover, never, never canst thou kiss,
Though winning near the goal yet, do not grieve;
She cannot fade, though thou hast not thy bliss,
یہ گیت
قید مکان و صوت نہیں
یہ روح کے تہہ خانوں کی بازگشت ہے
‘اے پیکر شباب ! تیرا گیت لازوال ہے
اے عشاق بلند عزم !
تیری تشنہ کامی تیرا کمال ہے
حصول منزل کے بعد زوال ہے
کشمکش میں ملال ہے ‘

For ever wilt thou love, and she be fair!

Ah, happy, happy boughs! that cannot shed
Your leaves, nor ever bid the Spring adieu;
And, happy melodist, unwearied,
For ever piping songs for ever new;
More happy love! more happy, happy love!
For ever warm and still to be enjoy’d,
For ever panting, and for ever young;

اے عاشق وارفتہ تو
پیکر تصویر میں ہمکنار ابد ہے
انمٹ یہ خودفروشی اور وجد ہے
اے ساخسار !
تو
تریے برگ آشنا ئے خزاں نہیں ہونگے
اے مطرب خوش نوا
تیرے گیت سوئے ابد رواں ہونگے
آفرینش محبت فزوں سے فزوں تر
وہی گرمئی جذبات
وہی سانسوں کی آنچ
گونجتے نغمے ٹھہرے لمحے سب کے سب

All breathing human passion far above,
That leaves a heart high-sorrowful and cloy’d,
A burning forehead, and a parching tongue.

Who are these coming to the sacrifice?
To what green altar, O mysterious priest,
Lead’st thou that heifer lowing at the skies,
And all her silken flanks with garlands drest?
What little town by river or sea shore,
Or mountain-built with peaceful citadel,
Is emptied of this folk, this pious morn?
اس عالم خاکی کی محبتوں سے ماورا
جہاں ہوتی ہے غم اور بے زاری پہ انتہا
جہاں دکھوں کا بخار ہے
جہاں محرومی بے شمار ہے
یہ کیا منظر یہاں اس پر منقش ؟
پروہت ہے یا ہے کوئی رسم مقدس؟
بیل ہے سوئے مقتل رواں؟
یا کوئی یوم قرباں؟
کہیں مہندی لگی ہے کہیں سہرہ
نقوش سے سجا ہے اس کا چہرہ
یہ کونسی جگہ ہے؟ لب دریا ہے کہ کنار ساحل ؟
سر کوہسار ہے؟ کوئی فیصل بلند؟
یا گاوں میں رہ گئے ہیں نفوس چند؟

And, little town, thy streets for evermore
Will silent be; and not a soul to tell
Why thou art desolate, can e’er return.

O Attic shape! Fair attitude! with brede
Of marble men and maidens overwrought,
With forest branches and the trodden weed;
Thou, silent form, dost tease us out of thought
اے شہر صغیر
تیری گلیوں پہ ثبت ہے مہر سکوت
نہ کوئی ذی نفس نہ جن نہ بھوت
اے شہکار فن
حسن لالہ رخاں اور
فغان عاشقان سے مزین
شاخسار بیاباں سے منقش
سبزہ پامال سے مسجل
اے پیکر بے زباں
تصور انساں کو ہے تو آتش ساماں

form, dost tease us out of thought
As doth eternity: Cold Pastoral!
When old age shall this generation waste,
Thou shalt remain, in midst of other woe
Than ours, a friend to man, to whom thou say’st,
“Beauty is truth, truth beauty,—that is all
Ye know on earth, and all ye need to know.”
ابدیت کی نارسائی سے
قلب آدم ہردم پریشاں
زوال عمر چاٹ جائے گا جب یہ نسل
تو رہے پھر بھی توانا اور بے کسل
تو یے شاہد ہستی انساں
تو بالا ہے ہر قیل وقال سے
کہتا ہے زبان حال سے :

Advertisements
merkit.pk

حق آئینہ حسن ہے حسن آئینہ حق ہے
دونوں میں کوئی بھی رقابت نہیں ہے
سب کچھ ہے یہی اس عالم فانی میں
زیادہ جاننے کی کچھ حاجت نہیں ہے!

  • merkit.pk
  • merkit.pk

مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply