افسانہ: موت کا نوحہ—– ﺭﺿﺎ شاہ جیلانی

ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻓﯽ ﺩﯾﺮ ﺳﮯ ﺩﺍﺩﺍ ﺟﺎﻥ ﮐﯽ ﻗﺒﺮ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﺑﻨﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻟﮕﯽ پتھر ﮐﯽ ﺑﯿﻨﭻ ﭘﺮ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﮨﻮﺍ ﺩﻭﺭ ﺑﮩﺖ ﺩﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﺟﻨﺎﺯﮮ ﮐﻮ قبرستان کی جانب ﺁﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺩﯾﮑﮫ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ.ﺳﺮﺩﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﺷﺎﻡ ﺗﮭﯽ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﻧﯿﻨﺪ ﺳﮯ ﺑﻮﺟﮭﻞ ﮨﻮ ﺭﮨﯿﮟ ﺗﮭﯿﮟ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﮐﯽ ﻣﻨﮉﯾﺮ ﺳﮯ ﺳﺮ ﻟﮕﺎﺗﮯ ﮨﯽ میری ﺁﻧﮑﮫ ﻟﮓ گئی.

ﺑﭽﭙﻦ ﮐﯽ ﮐﮩﺎﻧﯿﺎﮞ ﻗﺼﮯ ﺍﻭﺭ ﺣﺴﯿﻦ ﯾﺎﺩﯾﮟ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﺍﺱِ ﻋﻤﺮ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﺎ ﺳﺎﺗﮫ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﺐ ﺁﭖ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﻭﻗﺖ ﮔﺰﺍﺭﯼ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺩﻭﺳﺮﺍ ﮐﻮﺋﯽ ﺳﮩﺎﺭﺍ ﻧﮧ ہو…. ﯾﺎ ﺳﮩﺎﺭﺍ ﮨﻮ ﺗﻮ بھی ﻭﮦ ﮐﻢ ﺳﮯ ﮐﻢ ﺁﭖ ﮐﮯ ﮐﺴﯽ ﮐﺎﻡ ﮐﺎ ﻧﮧ ہو.. ﯾﺎ پھر آپ عمر کے اُس حصے میں آجاتے ہیں جہاں آﭘﮑﮯ ﻟﯿﮯ ﺍِﻥ ﺳﮩﺎﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﻭﻗﺖ نہیں ہوتا.

ﻭﻗﺖ بھی بڑی ﻇﺎﻟﻢ چیز کا نام ہے یہ ﮐﺒﮭﯽ ﺑﮭﯽ ﮐﺴﯽ ﭘﺮ بھی بغیر بتائے ﻣﮩﺮﺑﺎﻥ ﮨﻮﺟﺎتا ہے اور تو اور ﮐﺴﯽ ﭘﺮ ﻇﻠﻢ کی انتہا کر جائے بھلا کون ہے جو اس سے وجہ پوچھے. وقت آپ کے ساتھ چاھے کچھ بھی کرے مگر ﺁﭖ ﺍﺳُﮑﺎ ﮐﭽﮫ بھی ﺑﮕﺎﮌ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﮑﺘﮯ.

ﺑﮕﺎﮌﻧﺎ ﺁﭘﮑﮯ ﺑﺲ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﮐﯿﻮﮞ ﮐﮧ ﮐﭽﮫ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺑﻌﺾ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﺗﻮ ﮐﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﺎ.

ﺳﺐ ﻟﮑﯿﺮﻭﮞ ﮐﺎ ﮐﮭﯿﻞ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻟﮑﯿﺮﯾﮟ.. ﻟﮑﯿﺮﻭﮞ کے ﻟﯿﮯ ﺁﭖ ﺍﯾﮏ ﮐﮭﯿﻞ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮐﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ہوتے.

ﺟﯿﺴﮯ ﺗﯿﺴﮯ کر کے ﺁﭖ ﺍﭘﻨﺎ ﻭﻗﺖ ﮔﺰﺍﺭ رہے ہوتے ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻋﻤﺮ ﮐﮯ ﺍُﺱ ﺣﺼﮯ ﻣﯿﮟ ﺁﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﮩﺎﮞ ﻭﻗﺖ بھی بہت ﻣﺸﮑﻞ ﺳﮯ ﺁﭖ ﮐﻮ ﮔﺰﺍﺭﺗﺎ ﮨﮯ جیسے وہ ﺁﭖ ﭘﺮ ﺍﺣﺴﺎﻥ ﮐﺮ رہا ہو.

میں بھی ان میں سے ایک ہوں.

ﻭﯾﺴﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﻧﺪﺭ ﺳﮯ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﭘﺮ ﻧﮧ ﮨﯽ ﺑﭽﭙﻦ ﺁﯾﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﻧﮧ ﮨﯽ ﺍﻥ ﭘﺮ ﺟﻮﺍﻧﯽ ﮔﺰﺭﺗﯽ ﮨﮯ. ﺍُﻥ ﭘﺮ ﺗﻮ ﺻﺮﻑ ﺍﺣﺴﺎﺳﺎﺕ، ﺍﺣﺴﺎﻧﺎﺕ ﺍﻭﺭ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺭﻭﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺎﺭ ﮔﺰﺭﺗﯽ ﮨﮯ. ﺑﮍﮬﺘﯽ ﻋﻤﺮ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﻧﮑﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﮐﯽ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮑﻠﺘﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﺱ ﭘﺎﺱ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﺮ ﭼﯿﺰ ﮐﻮ ﮔﻮﯾﺎ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﻣﯿﮟ ﻟﭙﯿﭧ ﻟﯿﺘﯽ ﮨﮯ.

ﺟﻮﺍﻧﯽ ﯾﮧ ﻟﻔﻆ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﺍﺳِﮑﮯ ﻣﻄﻠﺐ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﯾﺴﮯ ﻟﻮﮒ ﻭﺍﻗﻒ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻮﮞ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﮐﯿﻮﮞ ﮨﻮﮞ…! ﺟﻮﺍﻧﯽ ﺳﮯ ﺍﻧِﮑﺎ لینا دینا ہی کیا ہوتا ہے۔ ﺍﯾﺴﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺗﻮ ﺑﮍﮬﺎﭘﺎ ﺑﺴﺘﺎ ﮨﮯ اﻭﺭ ﺑﮍﮬﺎﭘﺎ ﺟﻮﺍﻧﯽ ﮐﯽ ﺿﺪ ﮨﻮﺍ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ.

ﺿﺪ … ﮨﺎﮞ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﺿﺪﯼ ﺗﻮ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﮕﺮ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﺿﺪﯼ، ﺍﻭﺭ ﺿﺪ ﮐﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﮯ بھلا کیسے ﮐﺮﺳﮑﺘﮯ ہیں. ﺧﺼﻮﺻﺎً ﺍﭘﻨﮯ ﺁﺱ ﭘﺎﺱ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺍﭘﻨﮯ ہی ﺟﯿﺴﻮﮞ ﺳﮯ۔ یہ ﺍﭘﻨﯽ ﺿﺪ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﮨﯽ ﮐﮩﯿﮟ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﭖ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﮐﮩﯿﮟ ﭼﮭﭙﺎ ﮐﺮ ﺗﺎﮐﮧ ﺑﺎﮨﺮ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﭘﺘﮧ ﻧﺎ ﭼﻠﮯ. ﺧﻮﺍﺏ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺍﺑﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﻧﮑﯽ ﺗﻌﺒﯿﺮ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ. ﺯﻣﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺩﮬﻮﭖ ﮔﺮﻣﯽ ﺳﺮﺩﯼ ﮐﺎ ﮈَﭦ ﮐﺮ ﻣﻘﺎﺑﻠﮧ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ. ﺍﻭﺭ ﺑﮩﺖ ﮐﭽﮫ ﺑﻨﺎ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻓﻘﻂ ﺍﻭﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﭘﻨﺎ ﺗﻮ ﺍﻧﮑﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﻨﺘﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﻭﺭ انکا کوئی ﺑﻨﮯ ﺑﮭﯽ تو ﮐﯿﺴﮯ. ﺍﯾﺴﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺘﺎﺭﮮ ﮐﻢ ﮨﯽ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ.

 ﻣﺤﻨﺖ ﮐﺮﺗﮯ ﮐﺮﺗﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻟﯿﮯ ﻭﻗﺖ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﺘﺎ کہ زرا دیر کو سستا لیں یہ یوں کہا جائے کے کہیں دل لگا لیں. ﺩﯾﺎﺭِ ﻏﯿﺮ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﮞ ﺗﻮ ﺻﺮﻑ ﺍُﻧﮑﯽ ﻓﮑﺮ ﺟﻨﮩﯿﮟ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺁﺋﮯ ﮨﯿﮟ. ﺍﭘﻨﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺤﻨﺖ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﻮﺍﻧﯽ ﺍﻭﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﺍﭘﻨﮯ ﻟﯿﮯ ﺳُﮑﮫ ﮐﮧ ﭼﻨﺪ ﻟﻤﺤﺎﺕ ﺑﮭﯽ ﺧﺮﯾﺪﻧﺎ ﺍﭘﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﺍﻧُﮑﮯ ﺍﻭﭘﺮ ﮐﯿﮯ ﮔﺌﮯ ﺍﺣﺴﺎﻧﺎﺕ ﮐﯽ ﺗﻮﮨﯿﻦ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ. ﭼﺎﮨﮯ ﺍﻥ ﺍﺣﺴﺎﻧﺎﺕ ﮐﮧ ﺑﺪﻟﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮐﭽﮫ ﻧﺎ ﮐﺮ ﭼﮑﮯ ﮨﻮﮞ. ﭼﺎﮬﮯ ﺍﯾﮏ ﻋﻤﺮ ﺩﯾﺎﺭِ ﻏﯿﺮ ﻣﯿﮟ ﻟﮕﺎ ﺩﯼ ﮨﻮ. ﺍﯾﺴﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﻣﯿﺮﺍ ﺑﮭﯽ ﺷﻤﺎﺭ ﮨﮯ

ﻭﺍﭘﺴﯽ ﮐﺎ ﺳﻔﺮ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﻮﮞ ﮐﮧ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﻧﺌﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﻧﺎ ﺑﮩﺖ ﻣﺸﮑﻞ ﺑﻠﮑﮧ ﻧﺎ ﻣﻤﮑﻦ ﺣﺪ ﺗﮏ میرے لیے مشکل ترین سفر تھا. ﺍﭘﻨﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﮨﯽ ﮐﻤﺎﺋﯽ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﻮﮞ ﮐﮯ ہی دﺭﻣﯿﺎﻥ ﺣﺼﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻘﺴﯿﻢ ﮨﻮﺗﮯ ﺩﯾﮑﮭﻨﺎ ﮨﻢ ﺟﯿﺴﻮﮞ ﮐﮧ ﻟﯿﮯ ﺑﮩﺖ ﻣﺸﮑﻞ ﻋﻤﻞ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ. ﺁﭖ ﮐﮯ ﺣﺼﮯ ﻣﯿﮟ ﺁﭘﮑﯽ ﮨﯽ ﮐﻤﺎﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ بہت ہی تھوڑا سا حصہ آتا ﮨﮯ. ﺍﻭﺭ ﺍﺗﻨﺎ ﮨﯽ ﮐﭽﮫ ﭘﺎﺱ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﺲ ﺳﮯ ﺁﭖ ﻭﺍﭘﺴﯽ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﭨﮑﭧ ﮐﭩﻮﺍﺋﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺟﮩﺎﺯ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮫ ﮐﺮ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﭘﺮﺩﯾﺲ ﺭﻭﺍﻧﮧ ﮨﻮ ﺟﺎئیں۔ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﻮﮞ ﺳﮯ ﺩﻭﺭ ﻏﯿﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﻣﮕﺮ ﺍﭘﻨﺎﺋﯿﺖ ﺑﮭﺮﮮ ﻣﺎﺣﻮﻝ ﻣﯿﮟ

ﻣﮕﺮ ﯾﮧ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺍ . ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺧﻮﺵ ﻧﺼﯿﺐ ﮐﮩﻮﮞ ﮔﺎ.

ﻣﯿﺮﮮ ﺣﺼﮯ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﮐﭽﮫ ﺁﯾﺎ ﻭﮦ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﯿﮯ ﺑﮩﺖ ﺗﮭﺎ میں نے واپسی کی ٹکٹ کروانا چاہی مگر معلوم پڑا کے پاسپورٹ ری نیو کروانا ہے. اس مرحلے ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﺩﻥ تو ﻟﮕﻨﮯ ﺗﮭﮯ ﻣﮕﺮ ﺍﯾﮏ شام اچانک سینے میں اٹھنے والے ﺩﺭﺩ نے ﻣﺠﮭﮯ ﺍﯾﮏ ﺳﺮﮐﺎﺭﯼ ﮨﺴﭙﺘﺎﻝ ﭘﮩﻨﭽﺎ ﺩﯾﺎ تھا……

ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯﻭﮞ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮫ ﯾﮑﺪﻡ ﮐﮭﻞ ﮔﺊ

ﺟﻨﺎﺯﮦ ﻗﺮﯾﺐ ﺁﭼﮑﺎ ﺗﮭﺎ ….

ﮐﭽﮫ ﻟﻮﮒ ﺩﺍﺩﺍ ﮐﯽ ﻗﺒﺮ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﮭﮯ.

ﭼﻮﻧﮑﮧ ﻣﯿﮟ ﺻﺒﺢ ﺳﮯ قبرستان میں موجود ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﺭﺍ ﮐﺎﻡ ﻣﯿﺮﯼ ﻧﮕﺮﺍﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ اسلیئے ﺷﮑﺎﯾﺖ ﮐﮯ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﺎ ﮨﻮﻧﺎ ﺑﻨﺘﺎ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ..

ﺟﻨﺎﺯﮦ ﺍﯾﮏ ﺟﺎﻧﺐ ﺭﮐﮭﺎ ﮔﯿﺎ.

ﮐﭽﮫ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺟﻠﺪﯼ ﺗﮭﯽ. اور ﮐﭽﮫ ﻣﯿﺮﮮ ﺍﭘﻨﻮﮞ ﮐﻮ ﺍُﻥ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺟﻠﺪﯼ. اور ﻭﯾﺴﮯ ﺑﮭﯽ ﺟﻠﺪﯼ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﺎ ﮨﻮ. ﮔﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﻨﯽ ﺳﮩﻮﻟﯿﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﯿﮟ ﮐﮧ ﯾﮩﺎﮞ ﺍﯾﮏ ﺭﺍﺕ ﺑﮭﯽ ﮔﺰﺍﺭﯼ ﺟﺎ سکے ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﮮ ﺍﭘﻨﻮﮞ ﮐﻮ ﺷﮩﺮ ﮐﯽ ﺳﮩﻮﻟﯿﺎﺕ ﻧﮯ ﺑﮕﺎﮌ ﺩﯾﺎ ﺗﮭﺎ. یہ میری پاؤنڈز میں بھیجے گئے پیسے کی لت نے انہیں آسائشوں میں مبتلا کر ڈالا تھا.

ﺟﻠﺪﯼ ﺟﻠﺪﯼ ﺟﻨﺎﺯﮮ ﮐﻮ ﻟﺤﺪ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﺎﺭﺍ ﮔﯿﺎ ﺗﺨﺘﮯ ﭼﭩﺎﺋﯽ ﺳﺐ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﮔﺌﮯ. ﻣﭩﯽ ﮈﺍﻟﻨﮯ ﮐﺎ ﻣﺮﺣﻠﮧ تو گویہ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺟﻠﺪﯼ اور تیزی کیساتھ ﻣﮑﻞ ﮨﻮﺍ ﺟﯿﺴﮯ ﻣﺮﺩﮦ ﺟﺴﻢ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮧ ﺁﺟﺎﺋﮯ. ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﺳﮯ ﺩﻋﺎ ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ ﮔﺊ. ﯾﮧ ﺳﺎﺭﺍ ﻣﺮﺣﻠﮧ ﻗﺮﯾﺐ ﻗﺮﯾﺐ ﺍﯾﮏ ﮔﮭﻨﭩﮧ ﺟﺎﺭﯼ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﮔﺎ..!

ﺳﺐ ﺭﻓﺘﮧ ﺭﻓﺘﮧ ﻗﺒﺮﺳﺘﺎﻥ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮑﻞ ﮔﺌﮯ .. ﻣﯿﮟ ﻭﮨﯿﮟ ﺍﺳُﯽ پتھر ﮐﯽ ﺑﯿﻨﭻ ﭘﺮ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﺳﻮﭺ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﮐﺎﺵ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻠﮯ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮧ ﻣﺮ ﮔﯿﺎ.. ﻣﯿﺮﯼ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﺻﺮﻑ ﺍﻭﺭ ﺻﺮﻑ ﭼﻨﺪ ﮔﮭﮍﯾﺎں…! ﻓﻘﻂ ﭼﻨﺪ ﺳﺎعتیں ہی تھیں.. ﻣﯿﺮﮮ ﺍﭘﻨﮯ ﺗﯿﺰ ﺗﯿﺰ ﻗﺪﻡ ﺍﭨﮭﺎﺗﮯ ﺩﻭﺭ ﺑﮩﺖ ﺩﻭﺭ ﮨﻮﺗﮯ ﺟﺎ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ

ﻣﯿﮟ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﻣﺮ ﭼﮑﺎ ﺗﮭﺎ.. منوں مٹی تلے ﺩﻓﻨﺎﯾﺎ ﺟﺎ ﭼﮑﺎ ﺗﮭﺎ.

ہمیشہ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ.

سید رضا شاہ صاحب طرز ادیب اور کالم نگار ہیں۔ 

مکالمہ
مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *