رمضان اور روزہ۔۔۔۔۔۔مولانا رضوان اللہ پشاوری

نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم کا ارشاد ہے کہ جو شخص (قصداً) بلا کسی شرعی عذر کے ایک دن بھی رمضان کے روزہ کو افطار کر دے تو غیر رمضان کے چاہے تمام عمر کے روزے رکھے اس کا بدل نہیں ہو سکتا۔(رواہ احمد و ترمذی و ابو داؤد)

روزہ خدا تعالیٰ کا وہ بابرکت فریضہ ہے جس کو حق تعالیٰ نے اپنی طرف منسوب فرمایا ہے اور قیامت کے دن حق تعالیٰ اس کا بدلہ اور اجر بغیر کسی واسطہ کے بذات خود روزہ دار کو عنایت فرمائیں گے۔ چنانچہ حدیث قدسی میں ارشاد ہے (اَلصَّوْمُ لِیْ وَاَناَ اَجْزِیْ بِہ) روزہ میرا ہے اور میں ہی اس کا بدلہ دوں گا۔ نماز و روزہ سب عبادات اللہ تعالیٰ ہی کی ہیں اسی کو راضی اور خوش کرنے کے لیے سب عبادات کی جاتی ہیں۔ مگر روزہ ایک عجیب خصوصیت اپنے اندر رکھتا ہے وہ ریا اور دکھلاوے سے بالکل دور، چشم اغیار (غیروں کی نظر سے) پوشیدہ، سراپا اخلاص اور بندہ و معبود کے درمیان ایک راز ہے حتیٰ کہ اس کا علم بھی صحیح طور پر بجز روزہ دار کے اور اس ذات اقدس کے، جس کے لیے یہ روزہ رکھا گیا ہے دوسرے شخص کو نہیں ہوتا کیونکہ روزہ کی کوئی ظاہری صورت اور محسوس ہیئت نہیں ہوتی جس کی وجہ سے دیکھنے والوں کو اس کا ادراک اور علم ہو سکے۔ بخلاف دوسری عبادت کے کہ ان کی ایک ظاہری صورت بھی ہوتی ہے جس کے دیکھنے والے پرعبادت کا اظہار ہوتا ہے۔جب روزہ ایک راز ہوتا ہے روزہ دار اور اس کے درمیان میں تو پھر اس کے بدلہ اور ثواب دینے میں بھی یہی مناسب تھا کہ خصوصی اور رازدارانہ طریقہ اختیار کیا جاتا جس کی اطلاع فرشتوں کو بھی نہ دی جاتی۔ چنانچہ اللہ تعالیٰ براہ راست بغیر کسی واسطہ کے روزہ دار کو اس کا بدلہ عطا فرما دیں گے۔اسی خصوصیت کی وجہ سے اللہ تعالیٰ نے روزہ اور اس کے اجر و ثواب کو ’’الصوم لی وانا اجزی بہ‘‘ میں اپنی طرف منسوب فرما کر اس کی شرافت و عظمت کو بڑھا دیا ہے اور پیغمبر صلی اللہ علیہ و سلم نے بھی مختلف احادیث میں بکثرت مخصوص فضائل و مناقب بیان فرمائے ہیں۔

ایک دن کے روزے کا ثواب:
فرمایا رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم نے جس شخص نے ایک دن کا روزہ اللہ تعالیٰ کی رضا مندی حاصل کرنے کے لیے رکھا‘ اللہ تعالیٰ اس کو دوزخ سے اس قدر دور رکھیں گے کہ جس قدرکوا اپنی ابتدا عمر میں بوڑھا ہو کر مرنے تک اڑان میں مسافت طے کرتا ہے۔ (کوے کی عمر طویل ہوتی ہے، کہا گیا ہے کہ ہزار برس کی ہوتی ہے اس سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کس قدر طویل مسافت وہ پوری عمر میں قطع کر لیتا ہو گا)اور حضرت رسول خدا صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا کہ جو شخص رمضان کے روزے رکھے‘ اللہ پر ایمان رکھتے ہوئے اور اس کے حکم کا امتثال (حکم کی اتباع) کرتے ہوئے‘ اس کے گزشتہ گناہ بخش دیئے جائیں گے۔

شیطان کے حملوں سے بچنے کی ڈھال:
حضور صلی اللہ علیہ و سلم کا ارشاد ہے ’’اَلصَّوْمُ جُنَّۃٌ‘‘ روزہ دار کے لیے روزہ سپر اور ڈھال ہے یعنی روزہ دار روزہ کی وجہ سے دنیا میں شیطان کے شر سے بچتا اور اس کے حملوں کو روکتا ہے اور آخرت میں دوزخ کی آگ سے محفوظ رہتا ہے۔

روزہ دار کی نیند اور خاموشی:
بیہقی نے نقل کیا ہے کہ رسول خدا صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا کہ روزہ دار کی نیند عبادت ہے اور اس کے خاموش رہنے میں بھی اس کو تسبیح یعنی سبحان اللہ کہنے کا ثواب ملتا ہے اور اس کے ہر عمل کا ثواب بڑھایا جاتا ہے اور اس کی دعا مقبول ہوتی اور اس کے گناہ بخش دیئے جاتے ہیں۔ (مظاہرحق)

روزہ دارکے منہ کی بو:
حضور اکرم صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا کہ روزہ دار کے منہ کی بو اللہ تعالیٰ کے نزدیک مشک کی بو سے زیادہ پسندیدہ ہے گویا روزہ دار اللہ تعالیٰ کا محبوب ہو جاتاہے کہ اس کی خلوف (منہ کی بو) بھی اللہ تعالیٰ کو پسند اور خوشگوار ہوتی ہے۔

خلوف کا مفہوم:
خلوف جس کا ذکر اس حدیث میں آیا ہے وہ معدہ کے خالی ہونے سے پیدا ہوتی ہے تو جب تک معدہ خالی رہے گا‘ یہ خلوف بھی رہے گی‘ اس لیے عوام کا یہ خیال قابل اصلاح ہے کہ وہ روزہ کے اندر مسواک کو منع سمجھتے ہیں۔ اور بعض اہل علم بھی اس بنا پر کہ منہ کی بو مسواک سے زائل ہو جاتی ہے روزہ کی حالت میں مسواک کے جواز میں تردد کرتے ہیں۔ یہ صحیح نہیں۔ مسواک سے صرف دانت صاف ہو جاتے ہیں اور منہ کی بدبو دور ہو جاتی ہے معدہ میں اس سے کوئی چیز نہیں پہنچتی اس لیے مسواک کے بعد بھی خلوف باقی رہتی ہے جس کا اللہ کے نزدیک مشک سے زیادہ پسند ہونا حدیث میں فرمایا گیا ہے۔ لہٰذا مسواک روزہ کی حالت میں بھی ہر نماز کے وقت سنت ہے۔ ظہر و عصر میں بھی مسواک کرنی چاہئے۔

ماہ رمضان کی عبادت کا اثر تمام سال رہتا ہے:
حضرت حکیم الامت تھانویؒ فرماتے ہیں کہ تجربہ سے ثابت ہوا ہے کہ عبادت کا اثر اس کے بعد گیارہ مہینے تک رہتا ہے جو کوئی اس میں کوئی نیکی بہ تکلف کر لیتا ہے اس کے بعد اس پر بآسانی قادر ہو جاتا ہے اور جو کوئی کسی گناہ سے اس میں اجتناب کر لے تمام سال بآسانی احتیاط ہو سکتی ہے اور اس مہینہ میں معصیت و گناہ سے اجتناب کرنا کچھ مشکل نہیں کیونکہ یہ بات ثابت ہے کہ شیاطین قید کر دیئے جاتے ہیں پس جب شیاطین قید ہو گئے تو معاصی آپ ہی کم ہو جائیں گے محرک کے قید ہو جانے کی وجہ سے‘ اور یہ لازم نہیں آتا کہ معاصی بالکل ختم ہی ہو جائیں۔ کیونکہ دوسرا محرک یعنی نفس تو باقی ہے اس مہینہ میں وہ معصیت کرائے گا مگر ہاں کم اثر ہو گا کیونکہ ایک محرک رہ گیا اس میں ایک مہینہ کی مشقت گوارا کر لی جائے کوئی بات نہیں۔ غرض اس میں ہرعضو کو گناہ سے بچایا جائے۔

انسان کے لیے روزہ مقررہونے کے وجوہ:
فطرت کا یہ تقاضا ہے کہ اس کی عقل کو اس کے نفس پر غلبہ اور تسلط دائمی حاصل رہے مگر بباعث بشریت (انسان ہونے کی وجہ سے) بسا اوقات اس کا نفس اس کی عقل پر غالب آتا ہے۔ لہٰذا تہذیب و تزکیہ نفس کیلئے اسلام نے روزہ کو اصول میں سے ٹھہرایا ہے۔
٭روزہ سے انسان کی عقل کو نفس پر پورا پورا تسلط و غلبہ حاصل ہوجاتا ہے۔
٭روزہ سے خشیت اور تقویٰ کی صفت انسان میں پیدا ہو جاتی ہے چنانچہ خدا تعالیٰ قرآن شریف میں فرماتا ہے کہ روزہ تم پر اس لیے مقرر ہوا کہ تم متقی بن جاؤ۔
٭روزہ رکھنے سے انسان کو اپنی عاجز و مسکنت اور خدا تعالیٰ کے جلال اور اس کی قدرت پر نظر پڑتی ہے۔
٭روزہ سے چشم بصیرت کھلتی ہے۔
٭دور اندیشی کا خیال ترقی کرتا ہے۔
٭کشف حقائق الاشیاء ہوتا ہے۔ (یعنی چیزوں کی حقیقتیں کھلتی ہیں)
٭درندگی و بہیمیت سے دوری ہوتی ہے۔
٭ملائکہ الٰہی سے قرب حاصل ہوتا ہے۔
٭خدا تعالیٰ کی شکر گزاری کا موقع ملتا ہے۔
٭انسانی ہمدردی کا دل میں ابھار پیدا ہوتا ہے۔
ماہ رمضان میں روزہ فرض ہونے کی وجہ:
ماہ رمضان میں روزہ رکھنے کی وجہ خدا تعالیٰ نے قرآن کریم میں یہ فرمائی ہے:شَہْرُ رَمَضَانَ الَّذِیْ اُنْزْلَ فِیْہِ الْقُرْاٰنُیعنی ماہ رمضان وہ بابرکت مہینہ ہے جس میں قرآن کریم نازل ہوا۔ لہٰذا یہ مہینہ برکات الٰہیہ کے نزول کا موجب (سبب) ہے اس لیے اس میں روزہ رکھنے سے اصل غرض جو لَعَلَّکُمْ تَتَّقُوْنَ میں مذکور ہے بوجہ اکمل (کامل طریقے سے)حاصل ہو جاتی ہے۔

رات کو روزہ مقرر نہ ہونے کی وجہ:
چونکہ رات کا وقت بالطبع ترک شہوات و لذات (طبعی طور پر سہولتوں اور لذتوں کو چھوڑنے)کا ہے لہٰذا اگر رات کا وقت روزہ کے لیے قرار دیا جاتا تو عبادت کو عادت سے اور حکم شرع کے مقتضائے طبع سے امتیاز (فرق) نہ ہوتا۔ اسی واسطے نماز تہجد، وقت تلاوت اور مناجات شب کو قرار دیا گیا۔

سال میں ایک دفعہ روزوں کے فرض ہونے کی وجہ:
چونکہ روزہ کی روزانہ پابندی ہمیشہ کے لیے تمام لوگوں سے باوجود تدابیر ضروریہ اور اشتغال باہل و اموال (اپنے اہل و عیال اور مال میں مشغول ہونے کی وجہ سے)ممکن نہ تھی۔ لہٰذا یہ ضروری ہوا کہ کچھ زمانہ کے بعد ہر مرتبہ ایک مقدار معین کا اہتمام و التزام کیا جائے جس سے قوت ملکی کا ظہور ہو جائے اور اس سے پیشتر جو اس میں کمی ہوئی ہے اس سے اس کا تدارک ہو جائے اور اس کا حال اس گھوڑے کا سا ہو جائے جس کی پچھاڑی اگاڑی میخ سے بندھی ہوتی ہے اور وہ دو چار بار ادھر ادھر لاتیں چلا کر اپنے اصلی تھان پر آ کھڑا ہوتا ہے۔
مسلمانوں کے ایک بڑے گروہ کا ایک وقت میں کسی ایک چیز کی پابندی کرنے سے ایک دوسرے کو اس کام میں مدد ملے گی آسانی ہو گی اور کام کرنے کی ہمت پیدا ہو گی۔
ایک کام کو ایک ہی وقت میں ساری دنیا کے مسلمانوں کا بالاتفاق مل کر کرنا ان کیلئے باعث نزول رحمت الٰہی اور ان میں صورت اتفاق و اتحاد کے لیے مفید ہے یہی وجہ ہے کہ ساری دنیا کے مسلمانوں کے لیے خدا تعالیٰ نے روزوں کا ایک ہی مہینہ معین و مشخص کیا ہے پس جو شخص اس نظام الٰہی کو بغیر عذر کے توڑتا ہے اس پر بجائے رحمت کے لعنت کا نزول ہوتا ہے۔

روزے کی فرضیت،اہمیت،فضائل اور مقاصد!
روزہ اسلام کے 5 ارکان میں سے ایک ہے جسے عربی میں صوم کہتے ہیں۔ مسلمان اسلامی سال کے مقدس مہینے رمضان المبارک میں روزے رکھتے ہیں۔ روزے میں مسلمان صبح صادق سے غروب آفتاب تک کھانے اور پینے، جبکہ میاں بیوی آپس میں جنسی تعلق سے باز رہتے ہیں۔ روزہ رکھنے کے لیے صبح صادق سے قبل کھانا کھایا جاتا ہے جسے سحری کہتے ہیں جس کے بعد نماز فجر ادا کی جاتی ہے جبکہ غروب آفتاب کے وقت اذان مغرب کے ساتھ روزہ کھول لیا جاتا ہے جسے افطار کرنا کہتے ہیں۔

فرضیت:
رمضان المبارک کے روزے دو ہجری میں فرض کیے گئے اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی زندگی میں 9 برس رمضان المبارک کے روزے رکھے۔ امام نووی رحمہ اللہ تعالٰی کہتے ہیں: رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے نو رمضان المبارک کے روزے رکھے، اس لیے کہ ہجرت کے دوسرے سال شعبان میں رمضان المبارک کے روزے فرض ہوئے تھے اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم گیارہ ہجری ربیع الاول کے مہینے میں فوت ہوئے تھے۔

اہمیت:
قرآن مجید میں فرمان الہی ہے:”اے ایمان والو تم پر روزے رکھنے فرض کیے گئے ہیں جس طرح تم سے پہلے لوگوں پر روزے رکھنے فرض کیے گئے تھے تا کہ تم متقی و پرہیزگار بنو“۔ (سورۃ بقرہ)
٭روزہ اسلامی ارکان میں سے چوتھا رکن ہے۔
٭روزے جسمانی صحت کو برقرار رکھتے ہیں بلکہ اسے بڑھاتے ہیں۔
٭روزوں سے دل کی پاکی، روح کی صفائی اورنفس کی طہارت حاصل ہوتی ہے۔
٭روزے، دولت مندوں کو،غریبوں کی حالت سے عملی طور پر باخبر رکھتے ہیں۔
٭روزے، شکم سیروں اور فاقہ مستوں کو ایک سطح پر کھڑا کر دینے سے قوم میں مساوات کے اصول کو تقویت دیتے ہیں۔
٭روزے ملکوتی قوتوں کو قوی اور حیوانی قوتوں کو کمزور کرتے ہیں۔
٭روزے جسم کو مشکلات کا عادی اور سختیوں کا خوگر بناتے ہیں۔
٭روزوں سے بھوک اور پیاس کے تحمل اور صبر و ضبط کی دولت ملتی ہے۔
٭روزوں سے انسان کو دماغی اور روحانی یکسوئی حاصل ہوتی ہے۔
٭روزے سے بہت سے گناہوں سے انسان کو محفوظ رکھتے ہیں۔
٭روزے نیک کاموں کے لیے اسلامی ذوق و شوق کو ابھارتے ہیں۔
٭روزہ ایک مخفی اور خاموش عبادت ہے جو ریاونمائش سے بری ہے۔
قدرتی مشکلات کو حل کرنے اور آفات کو ٹالنے کے لیے روزہ بہترین ذریعہ ہے۔ ان فوائد کے علاوہ اور بہت فائدے ہیں جن کا ذکر قرآن و حدیث میں مذکو رہے۔

روزے کے فضائل فرمودات نبوی کی روشنی میں:
احادیث کریمہ میں روزے کے بہت سے فضائل بیان کیے گئے ہیں۔ حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے ارشادات ملاحظہ فرمائیں:
٭جب رمضان آتا ہے آسمان کے دروازے کھول دیے جاتے ہیں اور ایک روایت میں ہے کہ رحمت کے دروازے کھول دیے جاتے ہیں اور جہنم کے دروازے بند کر دے ئے جاتے ہیں۔ اور شیاطین زنجیر وں میں جکڑ دیے جاتے ہیں (صحیحین)
٭جنت ابتدائے سال سے، سال آئندہ تک رمضان کے لیے آراستہ کی جاتی ہے اور جب رمضان کا پہلا دن آتا ہے تو جنت کے پتوں سے عرش کے نیچے ایک ہوا حور عین پر چلتی ہے وہ کہتی ہیں۔ اے رب! تو اپنے بندوں سے ہمارے لیے ان کو شوہر بنا جن سے ہماری آنکھیں ٹھنڈی ہوں اور ان کی آنکھیں ہم سے ٹھنڈی ہوں (بیہقی)
٭جنت میں آٹھ دروازے ہیں ان میں سے ایک دروازہ کا نام ریان ہے۔ اس دروازے سے وہی جائیں گے جو روزہ رکھتے ہیں۔(ترمذی)
٭روزہ دار کے لیے دو خوشیاں ہیں۔ ایک افطار کے وقت اور ایک اپنے رب سے ملنے کے وقت اور روزہ دار کے منہ کی بو، اللہ عزوجل کے نزدیک مشک سے زیادہ پا کیزہ ہے۔(بخاری و مسلم)
٭رمضان المبارک کا مہینہ وہ مہینہ ہے کہ اس کا اول رحمت ہے۔ اور اس کا اوسط (درمیانہ حصہ) مغفرت ہے اور آخر، جہنم سے آزادی۔(بہیقی)
٭روزہ اللہ عزوجل کے لیے ہے اس کا ثواب اللہ عزوجل کے سوا کوئی نہیں جانتا۔(طبرانی)
٭ہر شے کے لیے زکوۃ ہے اور بدن کی زکوٰۃ روزہ ہے اور نصف صبر ہے۔(ابن ماجہ)
٭روزہ دار کی دعا افطار کے وقت رد نہیں کی جاتی۔(بہیقی)
٭اگر بندوں کی معلوم ہوتا کہ رمضان کیا چیز ہے تو میری امت تمنا کرتی کہ پورا سال رمضان ہی ہو۔(ابن خزیمہ)
٭میری امت کو ماہ رمضان میں پانچ باتیں دی گئیں کہ مجھ سے پہلے کسی نبی کو نہ ملیں۔ وہ پانچ باتیں درج ذیل ہیں

اول یہ کہ جب رمضان کی پہلی رات ہوتی ہے اللہ عزوجل ان کی طرف نظر فرماتا ہے۔ اور جس کی طرف نظر فرمائے گا۔ اسے کبھی عذاب نہ کرے گا۔
دوسری یہ کہ شام کے وقت ان کے منہ کی بو، اللہ کے نزدیک مشک سے زیادہ اچھی ہے۔
تیسری یہ کہ ہر دن اور رات میں فرشتے ان کے لیے استغفار کرتے ہیں۔
چوتھی یہ کہ اللہ عزوجل جنت کو حکم فرماتا ہے۔ کہتا ہے مستعد ہو جا اور میرے بندوں کے لیے مزیں ہو جا (بن سنور جا) قریب ہے کہ دنیا کی تعب (مشقت تکان) سے یہاں آکر آرام کریں۔
پانچویں یہ کہ جب آخر رات ہوتی ہے۔ تو ان سب کی مغفرت فرما دیتا ہے۔ کسی نے عرض کی کیا وہ شب قدر ہے؟ فرمایا ’’نہیں‘‘ کیا تو نہیں دیکھتا کہ کام کرنے والے کام کرتے ہیں جب کام سے فارغ ہوتے ہیں۔ اس وقت مزدوری پاتے ہیں؟ (بہیقی)
٭اللہ عزوجل رمضان میں ہر روز د س لاکھ کو جہنم سے آزاد فرماتا ہے۔ اور جب رمضان کی انتیسویں رات ہوتی ہے تو مہینے بھر میں جتنے آزاد کیے ان کے مجموعہ کے برابر اس ایک رات میں آزاد کرتا ہے۔ پھر جب عید الفطر کی رات آتی ہے۔ ملائکہ خوشی کرتے ہیں اور اللہ عزوجل اپنے نور کی خاص تجلی فرماتا اور فرشتوں سے فرماتا ہے ’’اے گروہ ملائکہ اس مزدور کا کیا بدلہ ہے جس نے کام پورا کر لیا؟ فرشتے عرض کرتے ہیں۔۔ ’’اس کو پورا اجر دیا جائے‘‘ اللہ عزوجل فرماتا ہے میں تمہیں گواہ کرتا ہوں کہ میں ان سب کو بخش دیا۔(اصبہانی)

اللہ تعالیٰ کے محبوب روزے:
عبد اللہ بن عمرو بن عاص رضی اللہ تعالٰی عنہما بیان کرتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:”اللہ تعالٰی کو سب سے زیادہ محبوب نماز داؤد علیہ السلام کی نماز ہے اور سب سے زیادہ محبوب روزے بھی داؤد علیہ السلام کے ہیں، داؤد علیہ السلام آدھی رات سوتے اوراس کا تیسرا حصہ قیام کرتے اورچھٹا حصہ سوتے تھے، اورایک دن روزہ رکھتے اورایک دن نہیں رکھتے تھے“۔ (صحیح بخاری حدیث نمبر 1079 اور صحیح مسلم حدیث نمبر 1159)

روزے کی اقسام:
روزے کی پانچ اقسام ہیں:٭فرض٭واجب٭نفل٭مکروہ تنزیہی٭مکروہ تحریمی

روزے کے مقاصد:
قرآن کریم نے روزہ کے مقاصد اور اس کے اغراض تین مختصر جملوں میں بیان فرمائے ہیں:
٭یہ کہ مسلمان اللہ تعالٰیٰ کو کبریائی اور اس کی عظمت کا اظہار کریں۔
٭ہدایت الہٰی ملنے پر خدائے کریم کا شکر بجا لائیں کہ اس نے پستی و ذلت کے عمیق غار سے نکال کر، رفعت و عزت کے اوج کمال تک پہنچایا۔
٭یہ کہ مسلمان پرہیز گار بنیں اور ان میں تقویٰ پیدا ہو۔

Avatar
مولانا رضوان اللہ پشاوری
مدرس جامعہ علوم القرآن پشاور ناظم سہ ماہی ’’المنار‘‘جامعہ علوم القرآن پشاور انچارج شعبہ تصنیف وتالیف جامعہ علوم القرآن پشاور

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *