پاکستانی معیشت بھٹو نے تباہ کی؟۔۔۔۔آصف محمود

عمران خان نے چینی کمپنیوں سے درخواست کی کہ پاکستان کو انڈسٹریلائز کرنے میں پاکستان کی مدد کریں اور میرا دل لہو سے بھر گیا ۔ یاد آیا کہ بھٹو کے دور میں کس بے رحمی سے ہم نے اپنی انڈسٹری اپنے ہی ہاتھوں تباہ کی اور آج پچاس سال بعد کس بے بسی سے ہم دنیا سے التجا کرتے پھر رہے ہیں کہ صاحب پلیز اپنی کچھ صنعتیں پاکستان منتقل کر دیجیے ۔ اللہ عمر دراز کرے بھٹو صاحب تو آج بھی زندہ ہیں لیکن پاکستان کی معیشت کو انہوں نے ایسا زندہ درگور کیا کہ ہم آج تک نہیں سنبھل پائے ۔

ساٹھ کی دہائی تک پاکستان میں انڈسٹری فروغ پا رہی تھی ۔ اسفہانی ، آدم جی ، سہگل ، جعفر برادرز ، رنگون والا، افریقہ والا برادرز جیسے ناموں نے پاکستان کو انڈسٹریلائزیشن کے راستے پر ڈال دیا تھا ۔ دنیا پاکستان کو انڈسٹریل پیراڈائز کہا کرتی تھی ۔ ماہرین کا کہنا تھا ترقی کی رفتار یہی رہی تو پاکستان ایشیاء کا ٹائیگر بن جائے گا ۔ یہاں فیکٹریاں ، ملیں اور کارخانے لگ رہے تھے ۔

بجائے ان کاروباری خاندانوں کے مشکور ہونے کے کہ وہ معاشی سرگرمی کو زندہ رکھے ہوئے تھے ہمارے ہاں سرمایہ دار کو ہمیشہ دشمن سمجھا گیا. رہی سہی کسر بھٹو کے سوشلزم نے پوری کر دی ۔ ہمارے ہاں نظمیں پڑھی جانے لگیں ’’ چھینو مل لٹیروں سے ‘‘ ۔ چنانچہ ایک دن بھٹو صاحب نے نیشنلائزیشن کے ذریعے یہ سب کچھ چھین لیا ۔ لوگ رات کو سوئے تو بڑے وسیع کاروبار کے مالک تھے صبح جاگے تو سب کچھ ان سے چھینا جا چکا تھا ۔

بھٹو نے 31 صنعتی یونٹ، 13 بنک ،14 انشورنش کمپنیاں ،10 شپنگ کمپنیاں اور 2 پٹرولیم کمپنیوں سمیت بہت کچھ نیشنلائز کر لیا ۔ سٹیل کارپوریشن آف پاکستان ، کراچی الیکٹرک، گندھارا انڈسٹریز ، نیشنل ریفائنریز، پاکستان فرٹیلائزرز، انڈس کیمیکلز اینڈ اندسٹریز، اتفاق فاءونڈری، پاکستان سٹیلز، حبیب بنک ، یونائیٹڈ بنک ، مسلم کمرشل بنک ، پاکستان بنک ، بینک آف بہاولپور ، لاہور کمرشل بنک ، کامرس بنک ، آدم جی انشورنس، حبیب انشورنس، نیو جوبلی، پاکستان شپنگ ، گلف سٹیل شپنگ، سنٹرل آئرن ایند سٹیل سمیت کتنے ہی اداروں کو ایک حکم کے ذریعے ان کے جائز مالکان سے چھین لیا گیا ۔

مزدوروں اور ورکرز کو خوش کرنے کے لیے سوشلزم کے نام پر یہ واردات اس بے ہودہ طریقے سے کی گئی کہ شروع میں کہا گیا حکومت ان صنعتوں کا صرف انتظام سنبھال رہی ہے جب کہ ملکیت اصل مالکان ہی کی رہے گی ۔ پھر کہا گیا ان ان صنعتوں کی مالک بھی حکومت ہو گی ۔ پہلے کہا گیا کسی کو کوئی زر تلافی نہیں ملے گا ۔ پھر کہا گیا دیا جائے گا ۔ کبھی کہا گیا مارکیٹ ریٹ پر دیا جائے گا پھر کہا گیا ریٹ کا تعین حکومت کرے گی ۔ یوں سمجھیے ایک تماشا لگا دیا گیا ۔

مزدور اور مالکان کے درمیان معاملات خراب تھے یا دولت کا ارتکاز ہو رہا تھا تو اس معاملے کو اچھے طریقے سے بیٹھ کر حل کیا جا سکتا تھا ۔ مزدوروں کی فلاح کے لیے کچھ قوانین بنائے جا سکتے تھے لیکن بھٹو کا مسئلہ اور تھا ۔ وہ مزدور اور کارکن کو یہ تاثر دینا چاہتے تھے کہ سرمایہ داروں کے خلاف انہوں نے انقلاب برپا کر دیا ہے ۔ یہ تاثر قائم کرتے کرتے انہوں نے پاکستانی معیشت کو برباد کر دیا ۔

عمران خان کے مشیر رزاق داءود کے دادا سیٹھ احمد داءود کو جیل میں ڈال کر ان کا نام ای سی ایل میں ڈال دیا گیا ۔ بعد ازاں وہ مایوس ہو کر امریکہ چلے گئے اور وہاں تیل نکالنے کی کمپنی بنا لی ۔ اس کمپنی نے امریکہ میں تیل کے چھ کنویں کھودے اور کامیابی کی شرح 100 فیصد رہی ۔ آج ہمارا یہ حال ہے کہ ہم تیل کی تلاش کی کھدائی کے لیے غیر ملکی کمپنیوں کے محتاج ہیں ۔

صادق داءود نے بھی ملک چھوڑ دیا ، وہ کینیڈا شفٹ ہو گئے ۔ ایم اے رنگون والا ایک بہت بڑا کاروباری نام تھا ۔ وہ رنگون سے بمبئی آئے اور قیام پاکستان کے وقت سارا کاروبار لے کر پاکستان آ گئے ۔ وہ یہاں ایک یا دو نہیں پینتالیس کمپنیاں چلا رہے تھے ۔ انہوں نے بھی مایوسی اور پریشانی میں ملک چھوڑ دیا، وہ ملائیشیا چلے گئے ۔ بٹالہ انجینئرنگ کمپنی والے سی ایم لطیف بھی بھارت سے پاکستان آ چکے تھے اور بادامی باغ لاہور میں انہوں نے پاکستان کا سب سے بڑا انجینئرنگ کمپلیکس قائم کیا تھا جو ٹویوٹا کے اشتراک سے کام کر رہا تھا ۔ یہ سب بھی ضبط کر لیا گیا ۔ انہیں اس زمانے میں ساڑھے تین سو ملین کا نقصان ہوا اور دنیا نے دیکھا بٹالہ انجینئرنگ کے مالک نے دکھ اور غم میں شاعری شروع کر دی ۔

رنگون والا ، ہارون ، جعفر سنز ، سہگل پاکستان چھوڑ گئے ۔ کچھ نے ہمت کی اور ملک میں ہی رہے کیسے دادا گروپ ، آدم جی، گل احمد اور فتح لیکن ان کا اعتماد یوں مجروح ہوا کہ پھر کسی نے انڈسٹریلائزیشن کو سنجیدہ نہیں لیا ۔ جو ملک چھوڑ گئے ان مینں سے کچھ اس وقت واپس آ گئے جب بھٹو کا اقتدار ختم ہوا لیکن وہ پھر انڈسٹری لگانے کی ہمت نہ کر سکے ۔ احمد ابراہیم کی جعفر برادرز اس زمانے میں مقامی طور پر کار بنانے کے قریب تھی ۔ ہم آج تک کار تیار نہیں کر سکے ۔ فینسی گروپ اکتالیس صنعتیں تباہ کروا کے یوں ڈرا کہ اگلے چالیس سالوں میں اس نے صرف ایک فیکٹری لگائی ، وہ بھی بسکٹ کی ۔ ہارون گروپ کی پچیس صنعتیں تھیں ، وہ اپنا کاروبار لے کر امریکہ چلے گئے ۔ آج پاکستان میں ان کے صرف دو یونٹ کام کر رہے ہیں ۔

کاروباری خاندان ملک چھوڑ گئے یا پاکستان میں سرمایہ کاری سے تائب ہو گئے ۔ ادھر بھٹو نے صنعتیں قبضے میں تو لے لیں لیکن چلا نہ سکے ۔ ان اداروں میں سیاسی کارکنوں کی فوج بھرتی کر دی گئی ۔ مزدور اب سرکار کے ملازم تھے ، کام کرنے کی کیا ضرورت تھی ۔ نتیجہ یہ نکلا ایک ہی سال میں قومیائی گئی صنعت کا 80 فیصد برباد ہو گیا ۔ زرعی گروتھ کی شرح میں تین گنا کمی واقع ہوئی ۔ نوبت قرضوں تک آ گئی ۔ جتنا قرض مشرقی اور مغربی یعنی متحدہ پاکستان نے اپنی پوری تاریخ میں لیا تھا اس سے زیادہ قرض بھٹو حکومت نے چند سالوں میں لے لیا ۔ خطے میں سب سے زیادہ افراط زر پاکستان میں تھا ۔ ادائیگیوں کے خسارے میں 795 فیصد اضافہ ہو گیا ۔ سٹیٹ بنک ہر سال ایک رپورٹ پیش کرتا ہے ۔ بھٹو نے چار سال سٹیٹ بنک کو یہ رپورٹ ہی پیش نہ کرنے دی تا کہ لوگوں کو علم ہی نہ ہو سکے کتنی تباہی ہو چکی ۔

ٓہم بھی کیا لوگ ہیں، اپنی انڈسٹری اپنے ہاتھوں سے تباہ کر کے اب ہم چین کی منتیں کر رہے ہیں یہاں انڈسٹری لگائے ۔

..

Avatar
آصف محمود
حق کی تلاش میں سرگرداں صحافی

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *