انسانیت آنکھ موندے کہیں سو گئی۔۔۔۔۔سانول عباسی /نظم

اے خدا سن صدا
بن کے انساں کبھی تو زمیں پر تو آ
آج دنیا میں
انسان کے روپ میں
اِس طرف اُس طرف
ہر طرف ہیں خدا ہی خدا
وہ جو رہتا تھا دنیا میں انساں کبھی
اب نہ جانے کہاں کھو گیا
آج دنیا میں ہر سو ہیں آدم نُما
نسلِ آدم نہ جانے کہاں مر گئی
وہ جو باقی ہیں چند آدمی
سب پریشان ہیں
اب وہ جائیں تو جائیں کہاں
اس خداؤں بھری دنیا میں سانس لینا بھی دشوار ہے
سب کو معلوم ہے سب ہی جھوٹے ہیں پر
سب بضد ہیں کہ بس وه ہی مسجود ہیں
جو بھی انسان ہیں
سب فقط ان کو سجدہ کریں

زندگی یوں کبھی اتنی ارزاں نہ تھی
ان خداؤں نے جینا اجیرن کیا
ہر طرف خون کا گرم بازار ہے
مفلسی ، بےبسی، بےکسی عام ہے
ظلم ہی ظلم ہے خوف ہی خوف ہے
اپنی اپنی خدائی جتانے کو سب
جب بھی چاہا کبھی
بےگناہوں کو مروا دیا
ان کے ہاتھوں میں تعزیر ہے
سب غریبوں کی تقدیر ہے

ہر عدالت میں انصاف بکتا ہے اب
وہ جو اندھی سی دیوی ہے قانون کی
اب امیروں کی ہے داشتہ

آبرو ہو کسی کی تو ان کو گوارا نہیں
عصمتوں کے محافظ بنے آبروریز ہیں
ہے نہ محفوظ فریال زینب یہاں
ابنِ آدم کو بھی کاٹ دیتے ہیں جنسی درندے یہاں

بس دِلوں میں ہوس لے کے جیتے ہیں یہ
مار دیتے ہیں انسان جو بھی ملے
تیری دنیا میں میرے خدا
زندگی سے تو بڑھ کر نہیں ہے سزا
جب سے انساں کی غیرت کہیں کھو گئی
تب سے انسانیت آنکھ موندے کہیں سو گئی

سانول عباسی
سانول عباسی
تعارف بس اتنا ہی کہ اک عام انسان

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست ایک تبصرہ برائے تحریر ”انسانیت آنکھ موندے کہیں سو گئی۔۔۔۔۔سانول عباسی /نظم

Leave a Reply to Fida Hussain جواب منسوخ کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *