غزل۔۔۔۔۔۔۔ایڈووکیٹ محمد علی جعفری

آگ اُگلے پھرے ہے انگارے
آشیاں پل میں جل گیا پیارے
آج کا دن بہت گراں گزرا
آج، جھرمٹ سے مِٹ گئے تارے
اس طرح کر ،نہ قتلِ عام مِرا
تو نے اصحاب سب، میرے مارے
آسمانوں سے اک صدا آئی
پانیوں کے بدل گئے دھارے
عقلِ کل خود پہ ناز کرتے ہیں
ان کو چھوڑو،کہ یہ ہیں بیچارے
ایک عابد ہی بچ گیا آخر
ہو گئے مصلحین بنجارے
ہم سے کہہ دے، یہ حالِ دل اپنا
روپ دیکھیں گے ہم تیرے سارے
حافظِ گُرگِ شب کی محفل میں
اہلِ حلّ و عقد ہیں ہرکارے

محمد علی
محمد علی
علم کو خونِ رگِِِ جاں بنانا چاہتاہوں اور آسمان اوڑھ کے سوتا ہوں ماسٹرز کر رہا ہوں قانون میں اور خونچکاں خامہ فرسا ہوں

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *