نذرِ غالب، نظمِ آنند- 7

دلِ اُلفت نَسَب و سینئہ توحید فَضا
نگہِ جلوہ پرست و نَفَسِ صدق گزیں
(مرزا غالب)
…………………………………………………………………………………………
وَما، ارسلنک اللّا رحَمتُ اللعالَمینَ

آپؐ میرے بھی نبی ؐ ہیں
اور اس کے بھی نبیؐ ہیں جس نے مجھ کو
آج گالی سے نوازا ہے کہ شاید
میرے چہرے میں کہیں اسلام سے وابستگی کی
کوئی شہ سرخی نظر آئی تھی اس کو!

آپؐ سب کے ہی نبی ہیں
پھر یہ کیوں ہے
آج کل مغرب کے ملکوں میں
کوئی چشمک سے ،کوئی انگشتِ نخوت زیر ِ لب رکھے
مجھے جب دیکھتا ہے، بڑبڑا کر
کچھ نہ کچھ تضحیک سے کہتا ہے جیسے
لائقِِ تعزیر ہوں میں!

مجھ کو لگتا ہے، قیافہ فہم یہ سب لوگ
ان اوضاع کو ، اطوار کو پہچانتے ہیں
جن سے مصطفوی مرا چہرہ علامت بن گیا ہے
آپ ؐ کی امّت کا ….
(چاہے غیر مسلم ہے یہ بندہ! )

کیا کیا جائے، حبیبِ ؐکبریا، اس صورتِ احوال میں….
مجھ کو بتائیں
آپؐ تومبعوث ہیں سارے زمانوں، ساری نسلوں
عالمین الکُل کی بہبودی کی خاطر
ایسے جہلاء کو نظر انداز کر دوں؟

میرے دل میں جو جواب آیا ہے، مالک
اک چراغ ِ راہ سا
غالبؔ کا اک تصدیق نامہ شعر کی صورت میں ہے
جو لکھ رہا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ نظم بصورت نعت ِ استغاثہ موزوں کی گئی
لغات: دل الفت نسب: وہ دل،جسے الفت سے نسبت ہو۔۔۔سینہ توحید فضا: وہ سینہ جس کی فضا توحید ہو یعنی توحید سے لبریز ہو۔۔۔صدق گزیں: سچائی اختیار کرنے ولا۔
ترجمہ: ایسا دل عطا کر جو الفت سے نسبت رکھتا ہو اور ایسا سینہ عطا کر جس کی فضا توحید ہو اور ایسی نگاہ دے جو جلوہ پرست ہو اور ایسا دم دے جو صدق کو قبول کرے۔

ستیہ پال آنند
ستیہ پال آنند
شاعر، مصنف اور دھرتی کا سچا بیٹا

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *