سالوینی یورپی کمیشن کی سربراہی کے ’خواہش مند‘

اٹلی کے انتہائی دائیں بازو کے نظریات کے حامل وزیرداخلہ ماتیو سالوینی کا کہنا ہے کہ وہ آئندہ یورپی انتخابات میں قوم پرستوں کے اتحاد کے ساتھ یورپی کمیشن کی صدارت کی دوڑ میں شامل ہونے کا سوچ رہے ہیں۔جمعرات کے روز اپنے ایک انٹرویو میں سالوینی نے کہا کہ وہ آئندہ یورپی انتخابات میں قوم پرست گروپوں کے اتحاد کے ساتھ یورپی کمیشن کی صدارت کی دوڑ میں شامل ہو سکتے ہیں۔اطالوی اخبار ریپبلکا سے بات چیت میں انہوں نے کہا، ’’جی یہ درست ہے کہ مختلف یورپی ممالک سے تعلق رکھنے والوں دوستوں نے مجھے یہ مشورہ دیا ہے۔‘‘انہوں نے مزید کہا، ’’یہ نہایت عمدہ بات ہے کہ مختلف افراد عوامی تحفظ کے لیے میرے نظریات کے حامی ہیں اور ان میں اٹلی سے باہر کے لوگ بھی شامل ہیں۔‘‘یہ بات اہم ہے کہ مہاجرین مخالف رہنما سالوینی فرانس کی انتہائی دائیں بازو کی رہنما لے پین کے اتحادی بھی ہیں، ’’ہم دیکھیں گے۔ میں ابھی اس پر سوچ رہا ہوں۔‘‘45 سالہ سالوینی سن 2013ء سے انتہائی دائیں بازو کی جماعت لیگ کے سربراہ ہیں۔ اس سے قبل وہ اٹلی کے شمالی حصے کی علیحدگی کے نعرے پر مبنی جماعت شمالی لیگ کے سربراہ تھے، تاہم انہوں نے حالیہ کچھ عرصے میں ’اطالوی فرسٹ‘ کے نعرے کے ساتھ اپنے آپ کو نہ صرف قومی سیاسی دھارے میں شامل کیا بلکہ اب ان کی جماعت کو بڑی عوامی مقبولیت بھی حاصل ہے۔حالیہ انتخابات میں ان کی جماعت کی ریکارڈ کامیابی کی وجہ سے وہ اٹلی میں بننے والی اتحادی حکومت میں وزارت داخلہ کا قلم دان حاصل کرنے میں کامیاب ہوئے ہیں۔مارچ میں ہونے والے عام انتخابات میں سالوینی کی جماعت نے 17 فیصد ووٹ حاصل کیے تھے اور وہ فائیو اسٹار موومنٹ کے ساتھ مل کر اتحادی حکومت کا حصہ بن گئے تھے۔یہ بات اہم ہے کہ سالوینی کی جماعت لیگ عموماﹰ یورپی یونین اور مہاجرین سے متعلق سخت الفاظ کا استعمال کرتی رہتی ہے۔ حالیہ عوامی جائزوں میں اس جماعت کی مقبولیت میں نمایاں اضافہ دیکھا گیا ہے۔یورپی کمیشن کی سربراہی کے لیے نام یورپی یونین کی رکن ریاستوں کے سربراہان کی جانب سے پیش کیا جاتا ہے، جب کہ اس کی توثیق یورپی پارلیمان کی اکثریت کی مدد سے ہوتی ہے۔

  • julia rana solicitors london
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • merkit.pk
  • julia rana solicitors

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply