ماں تو سب کی سانجھی ہےنا؟۔۔۔سیدعلی احمد بخاری

کلثوم نواز صاحبہ طویل علالت کےبعدمورخہ11 ستمبر بروز منگل کو 11بجے کے قریب لندن میں ہارلے سٹریٹ کلینک میں وفات پاگئی ہی۔ جن کی وفات پر تمام سیاسی وسماجی حلقوں نے بلا تخصیص اظہارافسوس اور لواحقین کے ساتھ اظہار تعزیت کیا۔ ہم کلثوم نوازصاحبہ کی وفات پر دِلی افسوس کا اظہار کرتے ہوئے اُن کی بخشش اور درجات کی بلندی کے لئے دُعا گو ہیں۔کیوں کہ ماں تو سب کی سانجھی ہوتی ہے نا؟مگر اس موقع پر جب کہ سب لوگ بشمول میڈیا ایک ماں کی جدائی کا درد محسوس کر رہے ہیں۔تو میں ایک اور مظلوم ماں کی طرف آپ کی توجہ دلانہ ضروری سمجھتا ہوں۔ اس مظلوم ماں کی معصوم بیٹی بسمہ اپنی ماں کا خون کس کے ہاتھ پر تلاش کرے۔ نواز شریف کو آج مظلوم ثابت کرنے والےبتائیں گے کہ جب وہ صاحب اختیار تھا تو اُس میں اور فرعون میں کیا فرق تھا؟ 14 معصوم لوگوں کوماڈل ٹاؤن میں گولیاں مارکر قتل کر دیا گیا اوردیگر 100 سے زائد لوگوں کو گولیوں سے چھلنی کر دیا گیا۔نہتی حاملہ خواتین کو بھی بخشاء نہ گیا، منہ اور سینوں پر گولیاں بر سائی گئی ۔نابینا اورمعذورافراد ،اساتذہ، کسان، وکیل اور ڈاکٹر،سب پرریاستی تشددکیا گیا۔نواز شریف اور شہباز شریف کے دورِ حکومت میں تو کسی کی عزت محفوظ نہیں تھی۔ مگر پٹواری اور اِن کے پالے ہوئے چند میڈیا پرسنز تو اس موقع پر سیاست کرتے ہوئے شریف خاندان کے تمام کالےکرتوت چھپا کر ان پر مظلومیت کا پردہ ڈالنا چاہتے ہیں اورکلثوم نواز کی موت کو اُن کے سچا ہونے اور مظلوم ہونے کی دلیل کے طور پر پیش کر رہے ہیں۔کیا ہمیں موت نہیں آنی؟ اللہ تعالیٰ کے حکم کے مطابق ہر ذی رُوح نے موت کا ذائقہ چکھنا ہے۔تو پھر یہ واویلا کیوں مچایا جا رہا ہے۔ کیا ہم روزانہ فوجی جوانوں کو وطنِ عزیز کی حفاطت کرتے ہوئے جان قربان کرتے ہوئے نہیں دیکھتے؟ کیا اُن کی جانوں کی کوئی قیمت نہیں؟ کلثوم نواز کو علاج معالجے کی کون سی سہولت نہیں ملی؟

Advertisements
julia rana solicitors london

اِس موقع پرحکومت کے اقدامات کی تعریف کرنا پڑے گی کہ اُس نے بغیر کسی حیل و حجت کے دانائی سے کام لیتے ہوئے نواز شریف ، مریم نواز اور کیپٹن صفدر کوپے رول پر 5 دن کے لیے رہا کر دیا۔حالانکہ جب نوز شریف بر سرِ اقتدار تھے تو بے نظیر بھٹو کے ساتھ جو سلوک رواء رکھا گیا وہ بھی تاریخ کا ایک سیاہ باب ہے۔اِس سے بڑھ کرذوالفقار علی بھٹو کی پھانسی پر تو باقاعدہ میٹھائیاں تقسیم کی گئیں تھیں۔ جب کہ حسن نواز ،حسین نواز اور اسحاق ڈارنے کرپشن کیسزکوکلثوم نواز کے جنازے پر فوقیت دیتے ہوئےپاکستان نہ آنے کا فیصلہ کیا، جوکہ آگےچل کر اُن کے لئےبڑے پچھتاوے کا باعث بنے گا۔ کیونکہ قانون کے سامنے تو انہیں ایک نہ ایک دن پیش ہونا ہی پڑے گا،مگر غیرت کا تقاضا یہی تھا کہ وہ آج اس موقع پر اپنی ذات اور مفادات کا تحفظ کرنے کی بجائے خود کو حالات کے رحم کرم پر چھوڑ کر بے پناہ ہمدردیاں بھی سمیٹ سکتے تھے۔موت برحق ہے جو ہم سب کو بلا تخصیص آنی ہے۔ مگر اِس افسوس ناک موقع پر سیاست کرنا درست نہیں۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors london
  • merkit.pk

سید علی احمدبخاری
سیّد علی احمد بخاری کا تعلق آزاد کشمیر کے ضلع حویلی سے ہے۔ ابتدائی تعلیم ضلع حویلی سے حاصل کی اور 2006 ء میں پنجاب ٹیکنکل بورڈ سےElectronics میں DAE کیا۔ B-Tech (Electronics & Telecom) آنرز کی ڈگری سرحد یونیورسٹی آف انفارمیشن ٹیکنالوجی پشاور سے2013 ءمیں حاصل کی- اِسکے بعدماسڑز اِن کمپیوٹرسائنس کی ڈگری ورچوئل یونیورسٹی آف انفارمیشن ٹیکنالوجی سے حاصل کی۔اِس کے ساتھ ساتھ آپ 2007 ءسے محکمہ منصوبہ بندی و ترقیات آزادکشمیر سے وابستہ ہیں۔آپ انفارمیشن ٹیکنالوجی کے ساتھ گہری وابستگی رکھتے ہیں، اور حالاتِ حاضرہ ، ادبی اور دیگر سوشل سرگرمیوں میں بھی بڑھ چڑھ کر حصہ لیتے ہیں۔آپ ریفرل سسٹم (Direct Marketing ) سے تین سال وابستہ رہے۔آپ شروع ہی سے ٹیکنالوجی کے اِستعما ل کے لئے کوشاں رہے، 2006 ءمیں اپنے گاوٰں میں FM ٹرانسمیٹر بناکر دو ماہ تک تجرباتی ٹرانسمیشن کی- 2008 ء سے تا حال آپ انٹرنیٹ پر درجنوں بلاگز اور ویب سائٹس ، اور پیجز چلا رہے ہیں۔ اپنے ضلع کی پہلی ویب سائٹ بنانے اور چلانے کا اعزاز بھی آپ کے پاس ہے۔ آپ آزادکشمیر میں Android App ڈولپمنٹ کرنے والے چند سافٹ وئر ڈیولپرز میں شامل ہیں۔آپ گذشتہ کئی سالوں سے آزاد کشمیر کے دارلحکومت میں قیام پذیر ہیں۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply