پاکستان کی نظریاتی سرحدوں کا دفاع کیوں ضروری ہے؟؟؟

SHOPPING

کسی بھی فرد، قوم یا ریاست کی لیے نظریات کی حیثیت بھی وہی ہے جو ضرورت و اہمیت پانی کی پودے کےلیے ہے۔ اگر پودے کی بروقت آبیاری ہوتی رہے تو پودا بڑھتے بڑھتے ایک قدآور اور مضبوط درخت بن جاتا ہے۔لیکن اگر ذرا سی بھی غفلت برتی جائے تو وہی درخت وہیں گل سڑ کر خاک ہو جاتا ہے۔ بالکل اسی طرح اگر کوئی ،قوم اپنے مقصد اور نظریات سی غافل ہو جائے تو وہ قوم بھی اسی طرح گل سڑ کر خاک ہو جاتی ہے۔ لیکن اگر کوئی قوم اپنے نظریات اپناتے ہوئے اپنے مقاصد پر ڈٹ جائے تو وہ قوم اپنے مقصد میں ضرور سرخرو ہوتی ہے اورکامیابیاں اس کا مقدر ٹھہرتی ہیں۔
دنیا کے نقشے پر پاکستان بھی ایک نظریاتی ریاست کی حیثیت سے موجود ہے۔ پاکستان کی نظریاتی سرحدوں کے تعین سے پہلے آئیے ذرا نظریہ پاکستان کی کھڑکی سے پردہ ہٹاتے ہیں اور جانتے ہیں کہ اس میں کون سی تاریخ دفن ہے۔ اور اس تاریخ میں آج کی نوجوان نسل کےلیے کونسا خزانہ محفوظ ہے۔ تاریخ کسی بھی قوم کی تعمیرِ نو میں اہم کردار ادا کرتی ہے۔ تاریخ ایک آئینے کی مانندہے کہ جس کو سامنے رکھ کے قومیں اپنے ماضی اور حال کا موازنہ کرتی ہیں۔ حال اور ماضی کا یہی موازنہ قوموں کے مستقبل کی راہ ہموار کرتا ہے۔ آج ہماری نوجوان نسل اِس قوم کے تابناک ماضی کی ایک جھلک بھی دیکھ لے توامید ہے کہ انہیں مستقبل کے لیے ایک ایسی شاہراہ عمل نظر آئے گی کہ جو کہکشاں سے کہیں زیادہ درخشاں ہو گی۔انشاءاللہ
بانئ پاکستان قائداعظم محمد علی جناح نے ایک موقع پر نظریہ پاکستان کی وضاحت کرتے ہوئے فرمایا کہ”پاکستان تو اسی روز وجود میں آگیا تھا جب ہندوستان میں پہلا ہندو مسلمان ہوا تھا”۔ قائد کے اس فرمان کے مطابق،پاکستان کی ریاست تو اسی روز بن گٰئی تھی جب مسلمانوں نے ایک مظلوم بہن کی پکار پر لبّیک کہا اور ایمانی غیرت کا مظاہرہ کرتے ہوئے عظیم نوجوان سپہ سالار محمد بن قاسم کی قیادت میں سرزمینِ ہند پر قدم رکھا اور پھرہندو سامراجوں کو مسلمان اپنے قدموں تلے روند کر “;لااِلٰہ الاللہ”کی فتح کا ترنگا لہرایا۔ اس کے بعد مسلمانوں کی فتوحات کا ایک لمبا سلسلہ شروع ہوا اور اس وقت کی ریاستِ پاکستان کا دائرہ وسیع سے وسیع تر ہوتا گیا۔
مسلمانوں نے کئی ہزار سال برصغیر پر راج کِیا لیکن اس کے بعد ایک ایسا وقت بھی آسمان نے دیکھا کہ اسی سرزمین پرمسلمانوں کا عرصہ حیات تنگ کر دیا گیا جس سرزمین پر مسلمانوں نے ہزاروں سال شاندار حکومت کی تھی۔مسلمانوں کے اِس زوال کی وجہ صرف اور صرف یہ تھی کہ جس منہج (نظریہ اسلام) کی بنیاد پر مسلمان کھڑے ہوئےتھے اور کفّار کے سرغنوں، ہندو پنڈتوں کی گردنیں اتارتے ہوئے سومنات کے مندروں کوڈھاتے ہوئے ہندوستان کےقلب تک جا پہنچے تھے مسلمان آہستہ آہستہ اس منہج سے دور ہوتے چلے گئے تھے۔ مسلمان اپنے مذہب سے اس قدر
غافل ہو گئے تھے کہ مسلمانوں اور ہندووں کی معاشرتی رسومات، چال ڈھال اور ظاہری شکل و صورت میں کوئی زیادہ فرق نہ رہا۔پھر چشمِ فلک نے دیکھا کہ کس طرح مسلمانوں پر زوال آیا مسلمان زمانے میں رسواہو کر رہ گئے۔ یہ ہماری تاریخ کی ایک تلخ سچّائی ہے جس سے ہم منہ نہیں پھیر سکتے مگر ہمیں اپنی تاریخ کے اس پہلو سے سبق سیکھناہو گا تاکہ مستقبل میں ترقی اور عروج کی جانب ہماری راہ ہموار ہو سکے۔
قارئین کرام! آج اگر ہم صرف پاکستان کی تاریخ کا بالترتیب مطالعہ کریں اور موازنہ کریں کہ جب قوم زندہ دِل تھی،جب نوجوانوں کے اذہان و قلوب میں نظریہ پاکستان زندہ تھا تب ہم نے دشمن کو کس طرح ما ربھگایا اور جب قوم ،دھڑوں میں بٹی ہوئی تھی تخلیقِ پاکستان کے مقصد سے غافل تھی تب کس انداز سے ہمیں نقصان اٹھانا پڑا۔ زیادہ گہرائی میں جائے بِنا ہم 1965 کی جنگ کے منظرنامے پر سرسری نظر دوڑائیں تو بآسانی یہ بات سامنے آتی ہے،کہ وہ جنگ صرف پاکستان کی مسلح افواج نے نہیں لڑی بلکہ اس جنگ میں قوم بھی صف آراء تھی۔ جنرل ایوب کاریڈیو پر آنا تھا کہ پوری کی پوری قوم نعرہ تکبیر بلند کرتے ہوئے سڑکوں پر نکل آئی۔ جس سے پاک فوج کی پشت محفوظ ہی نہیں بلکہ مضبوط بھی ہوئی۔ستّرہ دن یہ قوم بھی فوج کے شانہ بشانہ لڑی جس کا نتیجہ یہ نکلا کے انڈینافواج کابھرکس نکل گیا اور جوتے کھا کے تب یہ وہاں سے بھاگے۔لیکن کچھ ہی عرصے کے بعد کی صورتحال دیکھیں کہ 1971 میں کس طرح مشرقی پاکستان ہمارے ہاتھ سے نکل گیا، وطنِ عزیز دو لخت ہو گیا اور ہماری تاریخ پر ایک سیاہ نشان چھوڑ گیا۔اس وقت جو ہمیں مشکلات اور نقصانات کا سامنا کرنا پڑا اس کی واحد وجہ یہ تھی کہ قوم سیاسی و لسانی تعصبات کی بھینٹ چڑھ چکی تھی، قوم مختلف دھڑوں میں تقسیم تھی اور نظریہ پاکستان سےغافل تھی۔ اس سب نے اُس وقت نظریاتی کمزوریوں کے باعث جو ایک خلیج حائل ہوئی اُس کا خمیازہ ہم آج تک بھگت رہے ہیں۔ 1971 میں انڈیا نے مکتی باہنی کو سپّورٹ کِیا اور مشرقی پاکستان کو الگ کِیا جس کاوہ آج تک انکارکرتے آئے تھےمگر نریندر مودی اِس بات کا اقرار کر چکا ہے کہ مکتی باہنی اور یہ سب اِنہی کا کِیا دھرا ہے۔
قارئین کرام! ہمارے روایتی اور ازلی دشمن “بھارت”کے نظریات اور عزائم آج بھی وہی ہیں جو 1971 میں تھے۔ وہ آج بھی پاکستان کے حصّے بخرے کرنے کے خواب دیکھ رہا ہے۔ آج بھی وہ پاکستان کے اندر مکتی باہنیاںلانچ کر رہا ہے خواہ وہ ٹی ٹی پی کی شکل میں ہوں یا ایم کیو ایم۔ سلام ہے پاک فوج کی بہادری کو اور آئی ایس آئی کی عظمت کوجنہوں نے دشمن کو منہ توڑ جواب دیا۔ لیکن توجہ طلب بات تو یہ ہے کہ ضربِ عَضب یا ردّالفساد سے اِن تحریکوں کا سر تو کچل دیا گیا مگر ان کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کے لیے قوم کو (خصوصاً نوجوانوں کو) کردار اداکرنا ہو گا۔ دشمن کے ناپاک اِرادوں کو ناکام بنانے اور پاکستان کے دفاع اور استحکام کے لیے اس قوم کے اذہان وقلوب میں پھر سے وہی نظریہ اُجاگر کرنا ہو گا جس کے تحت یہ ملک حاصل کیا گیا۔ آج قوم کو وہی کردار ادا کرنا
چاہیئے جو 65 میں ادا کیا تھا۔ اس کے ساتھ ساتھ اُن لوگوں کا قلع قمع کرنے کی بھی ضرورت ہے جو پاکستان کےاندر بیٹھ کر پاکستان کی نظریاتی اور روحانی جڑیں کاٹ رہے ہیں۔ یہ اسی صورت میں ممکن ہے جب ہماری نوجوان نسل دو قومی نظریے سے آشنا ہو گی۔ کامن کلچر, روشن خیال اورآزاد پاکستان کے نام پر اِس قوم کے شاہینوں کی پرواز کو محدود کیا جا رہا ہے۔ اگر اس کو بروقت روکا نا گیا اور نظریہ پاکستان کو اجاگر نا کیا گیا تو یہ بات واضح ہے کہ خدا نخواستہ مستقبل 71 سےمختلف نہ ہو گا۔ اس لیے نوجوانوں اور طلبہ کو حالات کی نزاکت سمجھتے ہوئے اپنا کِردارمتعیّن کرنا ہو گا اور نظریاتی محاذ پر پاک فوج کے شانہ بشانہ پاکستان کے نظریاتی سپاہی بن کے کھڑے ہونا ہو گا۔

SHOPPING

Abdullah Qamar
Abdullah Qamar
Political Writer-Speaker-SM activist-Blogger-Traveler-Student of Islamic Studies(Eng) at IOU-Interested in International Political and strategic issues.

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *