عرق النسا کی سب سے عام علامت سے واقف ہیں؟

آپ اپنی روزمرہ کی زندگی میں مصروف ہوں اور اچانک ہی جسم کے زیریں حصے کو انتہائی شدید درد کا سامنا ہو تو اس کی وجہ شیاٹک عرف عام عرق النسا کا مرض ہوتا ہے۔

یہ درد اچانک ہی کسی کو بھی نشانہ بناتا ہے اور لوگوں کو جام کرکے رکھ دیتا ہے۔

tripako tours pakistan

درحقیقت اس سے بچنا اسی وقت ممکن ہے جب آپ عرق النسا کے پہلے اثر کو پکڑنے میں کامیاب ہوجائیں کیونکہ عام طور پر اس کی علامات اکثر افراد کو سمجھ نہیں آتیں۔

اچھی خبر یہ ہے کہ اس مرض عام طور پر اتنی واضح ضرور ہوتی ہیں کہ انہیں پکڑ کر اس سے بچا جاسکے۔

شیاٹک نامی عصب چند اہم کام کرتا ہے جیسے گھٹنوں اور ٹانگوں کے نچلے حصے کے مسلز کو کمانڈ دینا جبکہ یہ ٹانگوں اور پیروں میں سنسنی یا جذبات بھی سپلائی کرتا ہے۔

اگر اس عصب کو کسی قسم کے مسئلے کا سامنا ہو تو وہ اپنا کام نہیں کرپاتا جس کے نتیجے میں عرق النسا کی علامات ابھرتی ہیں۔

اس درد کو دیگر اقسام کے درد سے الگ پہچاننے کی سب سے عام علامت کمر کے نچلے حصے میں بے چینی یا تکلیف ہوتی ہے، جو کہ کولہوں سے لے کر نیچے رانوں اور پنڈلی تک جاتی ہے۔

ویسے تو اس عصب میں مسئلے کی صورت میں زیریں بدن میں کسی بھی جگہ تکلیف کا مسئلہ ہوسکتا ہے مگر عام طور پر یہ ان جگہوں پر نمایاں ہوتی ہے، جن کا ذکر اوپر کیا گیا ہے۔

عرق النسا میں تیز درد کا سامنا ہوتا ہے جس کے ساتھ جلن جیسی تکلیف بھی ہوتی ہے جو کہ زندگی کو اجیرن کردیتی ہے۔

اگر یہ تکلیف ایک ہفتے سے زائد عرصے تک آپ کو شکار بنائے تو بہتر ہوگا کہ ڈاکٹر سے رجوع کریں۔

Advertisements
merkit.pk

اس کے علاوہ چند دیگر علامات جیسے مسلز کی کمزوری، زیریں بدن یا ٹانگ کا بہت زیادہ سن ہونا یا مثانے اور آنتوں کے مسائل کی صورت میں بھی ڈاکٹر سے رجوع کریں۔

  • merkit.pk
  • merkit.pk

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply